ہوم / سماجی بہبود / سماجی تحفظ / پردھان منتری سرکچھا بیما یوجنا
شیئر
Views
  • صوبہ Open for Edit

پردھان منتری سرکچھا بیما یوجنا

اس حصے کے بارے میں معلومات فراہم کرتا ہے وزیراعظم کی حفاظت انشورنس اسکیم ( PMSBY )

اسکیم کی شکل کیا ہے؟

اسکیم شخصی حادثہ بیما اسکیم ہے جس کی متعینہ مدت ایک سال ہے۔ جس کی تجدید ہر سال کی جا سکتی ہے اور حادثہ کی وجہ سے موت یا معذور ہو جانے کی صورت میں تحفظ پیش کرتی ہے۔

اسکیم کے تحت کیا فوائد اور اور پریمیم قابل ادا ہوں گے؟

فوائد درج ذیل ہیں:

 

فہرست فوائید

قابل ادا قیمت

الف

موت

2 لاکھ روپیے

ب

دونوں آنکھوں کا کچھ یا زیادہ یا کل زخمی ہو جانا اور دونوں ہاتھوں یا پیروں کا کام نہ کر سکنے کے قابل ہونا یا آنکھ کی نظر کا کھو جانا اور ایک ہاتھ یا ایک پیر کا کام نہ کر سکنا۔

2 لاکھ روپیے

ج

ایک آنکھ کی نظر کی نیم روشنی کا چلی جانا یا ایک ہاتھ یا پیر کا کام کرنے کے قابل نہ رہ جانا۔

1 لاکھ روپیے

پریمیم :۔ ہر ممبر کے ذریعہ سالانہ 12 روپیے۔

پریمیم کی ادائییگی کیسے کی جاے گی؟

نامزدگی میں دی گی منظوری کے مطابق اس پریمیم کی قیمت کھاتہ دار کے بینک کھاتے سے ’’سوتہہ نامے‘‘ سہولت کے ذریعہ ایک قسط میں کاٹ لی جاے گی۔ اسکیم کے مشاہد کی آڈٹ کے دوران دوبارہ جانچ میں ضروری سمجھی جانے والی تبدیلی کے بعد ممبر اسکیم کے لاگو رہنے تک ہر سال 63’’سوتہہ نامے ‘‘ کی ایک بار میں تفصیل بھی دے سکتے ہیں۔

اسکیم کو کون پیش کرے گا یا کون چلائیے گا؟

اسکیم کو عام جگہ کی نمائیندہ بیما کمپنیوں (پی ایس جی آئیی سی) اور دیگر نمائیندہ بیما کمپنیوں جو کہ تمام شرطوں پر معاون بینکوں کے تعاون سے 58ضروری حمایت حاصل کرکے اپنے سامان کو پیش کرنے کی خواہشمند ہیں، کے ذریعہ سے پیش کیا او ر چلایا جاتا ہے۔ اس کے ساتھ ہی اس اسکیم میں معاونت رکھنے والے بینک بھی اپنے اہل گراہکوں کیلئیے اسکیم کے استفادے میں ایسی کسی بھی نمائیندہبیما کمپنی کی خدمات لینے کے لیے آزاد ہوں گے۔

ممبر بننے کا اہل کون ہوگا؟

معاون بینکوں میں 18 سال ست 70 سال کی عمر والے تمام لوگ ذاتی (تنہا یا مشترکہ) بینک کھاتہ دار اس اسکیم میں دامل ہونے کے حقدار ہیں۔ اگر کسی شخص کے ایک یا مختلف بینکوں میں کئیکھاتے ہیں تو وہ شخص صرف ایک بینک کھاتے کے ذریعہ ہی اس اسکیم میں شامل ہو سکتا ہے۔

نامزدگی کی متعینہ مدت اور اس کا طر یقۂ کار کیا ہے؟

1 جون 2015 سے 13 مئیی2016 تک ابتدا میں کور مدت کے افتتاح پر ممبران سے یہ گذارش کی گئیی تھی کہ وہ اپنی نامزدگی کرایں اور ’’سوتہہ نامے‘‘ (آٹو ڈیببٹ) متبادل 31مئیی 2015 تک دیں۔ یہ متعینہ مدت 31 اگست 2015 تک بڑھائیی جا چکی ہے۔ اس تاریخ کے بعد مطلوبہ شرائیط پورے کرنے پر ہی سالانہ پریمیم کی ادئییگی پر اسکیم میں شامل ہونا مملن ہو سکتا ہے۔ وہ ممبران جو ابتدائیی سال کے بعد اسکیم کو قایم رکھنا چاہتے ہیں انہیں آ ئیندہ سالوں کیلے ہَر آ ئیندہ 31 مئیی سے پہلے سوتہہ نامے کیلے اپنی منظوری دینی ہوگی۔ اس تاریخ کے بعد متعین کی گئیی شرطوں کے مطابق مکمل سالانا پریمیم کی ادائییگی پر ہی اسکیم کی تجدید ہو سکتی ہے۔

کیا وہ اہل شخص جو کہ ابتدائیی سال میں اسکیم میں شامل نہ ہو سکے تو کیا بعد کے سالوں میں اسکیم میں شامل ہو سکتے ہیں؟

جی ہاں ! سوتہہ نامے کے واسطے سے پریمیم کی ادائییگی پر مستقبل کے سالوں میں نئیے اہل داخل ہونے والے بھی جڑسکتے ہیں۔

وہ لوگ جنہوں نے اسکیم ترک کر دی تو کیا وہ دوبارہ جڑ سکتے ہیں؟

کسی بھی وقت اسکیم کو ترک کرنے والے لوگ مستقبل سالانی پریمیم کی ادئییگی کے بعد اسکیم میں جڑسکتے ہیں جو کہ تمام شرائیط کے مطابق ہوگا۔

اسکیم کے لئیے ماسٹر پالیسی رکھنے والا کون ہوگا؟

معاون بینک خاص پالیسی رکھنے والے ہوں گے۔ معاون بینکوں کے صلاح و مشوروں سے پی ایس جی آئیی سی ، منتخب نمائیندہ بیما کمپنی کے ذریعہ آسان ممبر کے نظم و ضبط اور دعوی کے خاتمہ کی تمام صورتوں کو آخری شکل دے دی گئیی ہے۔

ممبر کا حادثاتی کور کب ختم ہو سکتا ہے؟

درج ذیل کی کسی بھی صورت میں ممبر کا حادثاتی کور ختم یا محدود ہو جائیے گا:

  1. 70 سال کی عمر (تاریخ پیدائیش سے قریب تر) کو پہونچ جانے پر۔
  2. بینک کھاتے کے ختم ہونے پر یا بیما جارٖ رکھنے کے لیے باقی رقم کی عدم حصولی۔
  3. اگر ممبر ایک سے زائید کھاتوں سے کورہوتا ہے اور بیما کمپنی کو انجانے میں پریمیم حاصل ہوتا ہے تو بیما کور کو ایک کھاتے تک محدود کر دیا جائیے گا اور پریمیم کو ضبط کیا جا سکتا ہے۔

بیما کمپنی اور بینک کا کیا کردار ہوگا؟

  1. اسکیم پر عملدر آمد پی ایس جی آئیی سی یا کسی دیگر عام بیما کمپنی جو کہ ایک بینک /بینکوں کے ساتھ معاونت میں ایسے پروڈکشن کو پیش کرنے کے خواہشمند ہوں کے ذریعہ کیا جائیے گا۔
  2. کھاتہ دار وں سے ملے مشوروں کے مطابق مناسب سالانہ پریمیم کو ادائییگی کی تاریخ یا اس سے پہلے سوتہہ نامے طریقہ کے ذریعہ سے وصول کرنے اور بیما کمپنی کو دی جانے والی رقم کو منتقل کرنے کا جوابدہ معاون بینک کو ہوگا۔
  3. ضرورت کے مطابق معاون بینک کے ذریعہ متعین کاغذات میں نامزدگی فارم /سوتہہ نامے ، اختیار/منظوری، اعلان فارم حاصل کیا جائیے گا۔ دعوی حاصل ہونے کی صورت میں پی ایس جی آئیی سی ، بیما کمپنی ان دستاویزوں کو پیش کرنے کو کہہ سکتی ہے۔ پی ایس جی آئیی سی ، بیما کمپنی کے ذریعہ کسی وقت ان دستاویزوں کو مانگنے کا اختیار محفوظ ہوگا۔

پریمیم کی تقرری کیسے ہوگی؟

  1. پی ایس جی آئیی سی ، بیما کمپنی کو بیما پریمیم ہر ممبر سے سالانہ 10 روپئیے۔
  2. بی سی /سوکچھم /کا رپوریٹ/ایجنٹ کو اخراجات کا مکمل حساب کتاب ، ہر ممبر سے سالانہ 1 روپئیے۔۔
  3. معاون بینک کو عملدر آمد کے اخراجات کا حساب کتاب، ہر ممبر سے سالانہ 1 روپئیے۔

کیا یہ کور کسی دیگر بیما اسکیم کے تحت جس میں ممبر کور ہو کے کور سے مختلف ہوگا؟

جی! ہاں۔

کیا پی ایم ایس بی وائیی میں زلزلہ، باڑھ یا دیگر قدرتی آفات سے ہونے والی اموات ، مغدوری بھی شامل ہے؟ کیا قتل اور خود کشی اس میں شامل ہے؟

قدرتی آفات حادثہ جیسی ہیں اس لئیے ایسی قدرتی آفات سے ہونے والی کوئیی موت یا معذوری (پی ایم ایس بی وائیی میں متعارف) بھی پی ایم ایس بی وائیی میں کور کی جاتی ہے۔ جبکہ خودکشی والی موت کو اس میں شامل نہیں کیا جاتا ہے لیکن قتل کے جانے سے واقع ہونے والی موت اس میں شامل ہے۔

پی ایم ایس بی وائیی میں ممبر کے لئیے کون سے بینک کے کھاتہ دار اہل ہیں؟

پی ایم ایس وائیی اسکیم میں ممبر شپ کیلئیے مشترکہ تنظیمی کھاتہ داروں کو چھوڈ کر سبھی بینک کھاتہ دار اہل ہیں۔

کیا پرواسی ہندوستانی پی ایم ایس وائیی میں شامل کئیے جانے کے اہل ہیں؟

ہندوستان میں قا ئیم کسی بینک برانچ میں اہل بینک کھاتہ والا کو ئیی این آر آ ئیی اس کھاتے کے ذریعہ سے پی ایم ایس بی وا ئیی بیما کی خرید کے لئیے اہل ہیں بشرط یہ کہ وہ اس اسکیم سے متعلق شرائیط و ضوابط کو مکمل کرتا ہو۔اور دعوی کے جانے کے معلاملے میں دعوی کے افادے کی ادائییگی ہندوستانی رقم میں ہی اس سے متعلق افسر اور نامزد شخص کو کیا جاے گا۔

کسی حادثہ میں موت یا جسمانی معذوری کے واقع ہو جانے پر اسپتال میں بھرتی کئیے جانے اخراجات کی فراہمی کے لئیے کوئیی پروگرام ہے؟

جی نہیں!

نامزدگی فارم دینے والے بینک کھاتہ دار کی موت کے معاملے میں بیما کے افادے کا دعوی کون کر سکتا ہے؟

اس اسکیم میں نامزدگی کرانے والے کھاتے دار کی موت کے معاملے میں نامزدگی فارم میں دیئیے گئیے متعلق نامزدگی /مقرر کردہ شخص کے ذریعہ یا سپرد کئیے گئیے بینک کھاتادار کے ذریعہ کوئیی نامزدگی نہ کئیے جانے کے معاملے میں قانونی وارث/وارثوں کے ذریعہ دعوی دائیر کیا جا سکتا ہے۔

دعوی کی قیمت کی ادائییگی کا کیا طریقہ ہے؟

معذوری سے متعلق دعوے بیما بینک کھاتہ دار کے بینک کھاتہ میں جمع کیا جائیے گا۔ موت کے دعوے کو نامزد/قانونی وارث/(وارثوں) کے بینک کھاتے میں منتقل کیا جائیے گا۔

اگر کھاتا دار خودکشی کرتا ہے تو کیا اس کے گھر والوں کو اس کے بیما کا فائیدہ ملے گا؟

جی نہیں!

کیا اس پالیسی کے تحت فائیدے کا دعوی کرنے کیلئیے حادثہ کے بارے میں پولیس میں رپورٹ درج کرانا اور ایف آئیی آر کا حاصل کرنا ضروری ہے؟

سڑک، ریل اور دیگر گاڑیوں متعلق حادثات ، ڈوبنے، کسی جرم کی وجہ سے ہونے والی موت جیسے حادثات کے معاملے میں حادثہ کی رپورٹ پولیس کو کی جانی چاہیے۔ سانپ کے کاٹنے ،پیڑ سے گرنے وغیرہ جیسے حادثات کے معاملے میں حادثہ کی تصدیق کا اسپتال کے ریکارڈ میں ہونا ضروری ہے۔

اگر بیما شدہ لاپتہ ہے اور اس کی موت کی تصدیق نہیں ہو پاتی ہے تو کیا بیما کا فائیدہ قانونی وارثوں کو ملے گا؟

بیما کا فائیدہ موت کی تصدیق ہونے یا موت تسلیم کرنے کیلئیے قانونی متعینہ معیار جوکہ 7 سال ہے کے گذر جانے کے بعد بیما کے فائیدے کی ادئییگی کی جائیے گی۔

ایک آنکھ سے معذور یا ایک ہاتھ یا ایک پیر جوکہ نا قابل استعمال ہوں اور حادثہ کے متاثر ہونے والے شخص کو کیا فائیدہ دیا جائیے گا؟

کوئیی فائیدہ قابل ادا نہیں ہوگا۔

کیا کھاتا دار ایک سے زیادہ بینکوں سے دعوے حاصل کرسکتا ہے جہان اس نے نامزدگی کرائیی ہو اور اس کا پریمیم کیا  ہو گا؟

جی نہیں ! بیما شدہ شخص اور نامزد شخص صرف ایک ہی دعوی کیلئیے اہل ہوں گے۔

کیا پی ایم ایس بی وائیی پالیسیز کو غیر ملکی بیما کمپنیوں کے تعاون سے لاگو کیا جا رہا ہے اور اس سے متعلق خدمات انجام دی جا رہی ہیں؟

حقیقتاً ہندوستان میں کوئیی غیر ملکی بیما کمپنی خدمت انجام نہیں دے رہی ہے۔ بیما ایکٹ اور آئیی آر ڈی اے آئیی قانون کے مطابق ہندوستان میں مشترکہ طور پر ضرور کچھ غیر ملکی کمپیناں ہندوستانی کمپنیوں کے ساتھ کام کر رہی ہیں لیکن ان غیر ملکی کمپنیوں کے شئییر کا فائیدہ 49% فیصد تک محدود رکھا گیا ہے۔

کیا پی ایم ایس وائیی اسکیم جسے ہنگامی صورت میں بڑھاوا دیا جا رہا ہے اور بڑی تعداد میں فروخت کیا جا رہا ہے، اسے ان غیر ملکی کمپنیوں کو بڑے پیمانے پر فائیدہ ہوگا جنہوں نے ہندوستانی کمپنیوں کے ساتھ مشترکہ طور پر عام بیما کمپنیاں شروع کی ہیں اور اس بیما حلقہ میں کام کر رہی ہیں؟

بیما ایکٹ کے مطابق ہندوستان میں صرف ہندوستانی بیما کمپنیاں ہی کام کر سکتی ہیں49% فیصدکے اندر غیر ملکی معاونین کے ساتھ ہندوستان میں کام کر رہی ایسی سبھی بیما کمپنیوں کے پالیسی رکھنے والنں کی لاگت کو ضابط کے مطابق ہندوستان میں لگایا جاتا ہے اور ان کا غیر ممالک میں صرف نہیں کیا جا سکتا ہے۔ پی ایم ایس بی وائیی کیلئیے رکھا جانے والا پریمیم سبھی ناگہانی اشارات ، چالو اموات قیمت اور برعکس انتخاب کو ذہن میں رکھتے ہوئیے بیما اعداد و شمار کی بیناد پر تیار کیا گیا ہے۔ اس طرح اس اسکیم سے بہت زیادہ کوئیی فا ئیدہ ہونے کی کوئیی امید نہیں ہے۔ اصلاً پریمیم میں زیادتی کئیے جانے کی مانگ ہے۔

پی ایم ایس پی وائیی کے ساتھ غیر بیما کمپنیوں کو کیوں شامل کیا گیا ہے جبکہ حکومتی حلقہ کی عام بیما کمپیناں (پی ایم ایس جی آئیی سی( جو کہ حکومتی مالیا ت والی کمپنیاں یں حکومت کے ذریعہ شروع کی گئیی اس اسکیم کا نظم کر سکتی ہیں؟

ہندوستان میں 21 عام کمپنیاں اپنے کام میں مصروف ہیں جنہیں ہندوستان میں عام بیما کروبار کرنے کیلئیے آئیی آر ڈی اے آئیی کے ذریعہ لائیسنس دیا گیا ہے۔ اس مقصد کو بڑھاوا دینے ،عمدہ قیمت طے کرنے اور گراہکوں کی خدمت کرنے کیلئیے ان تمام کمپنیوں کو حصہ لینے کی اجازت دی گئیی ہے۔ اس کے علاوہ وہ تمام ہندوستانی بیما کمپنیاں ہیں ان کے غیر ملکی معاونیں ، اگر کوئیی ہو، کا ان کمپنیوں میں %49 فیصد کی متعینہ حد کے تحت صرف شیئیر ہے۔ حکومتی عما بیما کمپنیاں (پی ایس جی آئیی سی) ابھی بھی ابتدائیی بیما کرنے والوں میں ہے جو اس اسکیم کے نفاذ میں شامل ہیں۔

دعووں کے خاتمہ نہ کئیے جانے کے معاملے میں کیا بھارت میں غیر ملکی بیما کرنے والوں کے خلاف قانونی کاروائیی ممکن ہے؟

کوئیی غیر ملکی بیما کمپنی ہندوستان میں مستقل طور پر کام نہیں کر رہی ہے۔ شرائیط و ضوابط اور اجازت کے ذریعہ چند غیر ملکی کمپنیاں ہندوستانی کمپنیوں کے ساتھ مشترکہ طور پر کام میں ہیں۔ جس میں غیر ملکی بیما کرنے والوں کے شیئیر کو%49 فیصد تک محدود رکھا گیا ہے۔ عملی طور پر یہ کمپنیاں ہندوستانی بیما کمپنیاں ہیں۔ یہ تمام کمپنیاں ہندوستانی قوانین کے مطابق ہیں اور ان کے خلاف قانونی کاروائیی کرنے میں کوئیی رخنہ نہیں ہے۔

کیا پریمیم کی قیمتیں بڑھ سکتی ہیں یا مستقل میں یہ کمپنیاں ان اسکیموں کو بند کر سکتی ہیں؟

بیما بھی کسی چیز کے مانند ہے۔ جبکہ مستقبل میں ان کی قیمتیں بڑھ سکتی ہیں۔ ہندوستان میں 21 عام بیما کمپنیوں کے زیر عمل ہونے سے ان کمپنیوں کے درمیان اپنی ہوڑ کی صورت میں قیمتوں کے ایک جگہ ٹھہرے رہنے کی امید ہے۔ اس بات کی امید ضرور ہے کہ پی ایم ایس بی وائیی کے کور کو دیکھتے ہوئیے اس کر قیمتوں کے طے ہو جانے کے بعد یہ اسکیم قائیم رہے گی اور اس اسکیم کے بند ہونے کی امید ناممکن جیسی ہے۔ کسی بھی صورت میں اگر کوئیی کمپنی اس اسکیم کو بند کرتی ہے تو بینکوں کے پاس دیگر بیما کمپنیوں کے ساتھ جڑنے کے دیگر متبادل بھی ہیں۔

2.1
اپنی تجاویز ارسال کریں (اگر مذکورہ بالا مواد پر آپ کو کوئی تبصرہ/تجویز دینی ہو تو براہ کرم یہاں درج کریں))
Enter the word
Back to top