ہوم / تعلیم / پالیسیاں اور اسکیمات / ابتدائی تعلیم کیلے اسکیمات
شیئر
Views
  • صوبہ Open for Edit

ابتدائی تعلیم کیلے اسکیمات

ابتدائی تعلیم کیلے اسکیمات

تعلیم کی قومی پالیسی کی تیاری کیساتھ، ہندوستان نے وسیع پیمانے پر اسکیمات اور پروگراموں کے ذریعہ UEE کے مقاصد کے حصول کا وسیع تر پروگرام ترتیب دیا ہے جیسے

  • آپریشن بلیک بورڈ
  • شکشا کرمی پروجیکٹ
  • لوک جنبش پروگرام
  • مہیلا سماکھیا
  • ڈسٹرکٹ پرائمری ایجوکیشن پروگرام

ابتدائی تعلیم کی عالمگیریت کیلئے سروشکشا ابھیان (SSA) ہندوستان میں نافذ کردہ اہم ترین پروگرام ہے اسکے مجموعی مقاصد میں عالمگیر رسائی اور پہنچ تعلیم میں سماجی اور نسلی طبقاتی فرق کو باٹنا، اور بچے کی تعلیمی لیول میں اضافہ یا بہتری کرنا شامل ہیں۔

ثانوی تعلیم کیلئے اسکیمات

تعلیم کا اہم ترین مرحلہ ثانوی تعلیم ہے کیونکہ یہ طلباء کو اعلیٰ تعلیم اور کام کی دنیا کے قابل بناتا ہے۔ اس وقت 14-18 سال عمر کے تمام بچوں کو معیاری دستیاب، قابل رسائی اور قابل برداشت ثانوی تعلیم فراہم کرنا حکومت کی پالیسی ہے ، درج ذیل اسکیمات ثانوی تعلیم کے مرحلہ پر توجہ دے کر ترتیب دی گئیں ہیں (کلا س نویں تا بارہویں) جو مرکزی رسپانسرڈ اسکیمات کے طور پر نافذ کی گئی ہیں۔

  • راشٹریہ مادھیاسک شکشا ابھیان
  • ماڈل اسکول اسکیم
  • گرلز ہاسٹل اسکیم
  • انکلوزیو اسکیم فارڈس ایبلڈریت سکینڈری اسٹیج (ثانوی درجہ پر اپاہجوں کے لیے مخصوص اسکیم)
  • وکیشنل ایجوکیشن کیلے اسکیم
  • نیشنل میرٹ کم مینس اسکالر شپ اسکیم
  • چانوی تعلیم کیلے لڑکیوں کو بھتنہ
  • لینگویج ٹیچرس کا تقرر
  • مدرسوں میں معیاری تعلیم
  • اقلیتی طلباء کیلئے اسکالرشپ اسکیمات
  • نیشنل اسکالر شپس

قومی کونسل برائے تعلیمی تحقیق وتربیت (NCERT) دونوں معیار اور تعداد کے معنیٰ میں تعلیمی ترقی کو پرموٹ کرتی ہے اور تفاوت کو ختم کرنے اور تمام طلباء کے لیے مساوی تعلیمی مواقع فراہم کرنے کیلئے خصوصی NCERT نیشنل ٹیلنٹ سرچ اسکیم کا انعقاد کرتی ہے۔ چاچا نہرو اسکالر شپس کے ذریعہ فنکارانہ اور اختراعی امتیاز کیلے فنکارانہ پیش رفت کو مزید تقویت دینے کی کوشش کی جارہی ہے۔ نیشنل بال بھون نے بال شری اسکیم کے تحت مختلف عمر کے ذہین طلباء کی ہمت افزائی کا ایک طریقہ 1995 میں شروع کیا تھا۔

اعلی تعلیم کے لیے اسکیمات

اعلی تعلیم مرکزاورریاستوں کی مشترکہ ذمہ داری ھے۔اداروں میں معیارات کے سلسلے میں ربط وضبط اور عزم مرکزی حکومت کی دستوری ذمہ داری ھے۔مرکزی حکومت UGC کوگرانٹ فراھم کرتی ھے اورملک میں مرکزی یونیورسٹیاں قائم کرتی ہیں۔ضروری اسباب رکھنے والی یا نہ رکھنے والے خاندانوں کے شاندار(میرٹ ہولڈر) طلباء کی حوصلہ افزائ اورانھیں انیسٹیوز کی ضرورت ہے تاکہ وہ تعلیم کے حصول میں خوب محنت کرتے رہیں اور انکے تعلیمی کرئیر میں اگلےمرحلہ کی تعلیم حاصل کرسکیں۔

ذیل میں چنداہم فیلوشپ اسکیمات/اسکالرشپس ہے جومختلف ادارے فراہم کرتے ہیں

  • قومی اسکالرشپس
  • پوسٹ ڈاکٹرریسرچ فیلوشپ (اسکیم)
  • بائیومیڈیکل سائنس کیلے جونیرریسرچ فیلوشپ
  • آل اندیا کونسل فاریٹکنکل ایجوکیشن اسکاکرشپس
  • وپارئمنٹ آف سائینس اینڈٹکنالوجی گرانٹس اور فیلوشپس
  • خارون سائنسدانوں اور ٹیکنالوجس کیلے(DST)کی اسکالرشپ اسکیم
  • ڈاکٹورل اورپوسٹ ڈاکٹورل اسٹڈیز کےکیلے(DBT)کی بائیوٹکنالوجی فیلوشپس
  • یونیورسٹی آف دہلی میں متعدوسا ئنس کورس کیلے گریجویشن اورپوسٹ گریجوپشن سطح پراسکالرشپس /ایوارڈس
  • جواہر لعل نہرو یونیورسٹی کی جانب سے فیلو شپس/اسکالرشپس/ایوارڈس
  • ایس سی طلباء کیلے اعلیٰ تعلیم جیسے M.Phil اور PHD کرنے کیلے راجیوگاندھی نیشنل فیلو شپ
  • تمام دنیا کے ذہن سائنسدانوں اور انجینئرس کیلے راما نوجن نیلو شپس
  • جے سی جوس نیشنل فیلو شپس
  • اسپورٹس اتھاریٹی آف انڈیا کی پرموشنل اسکیمات
  • معذور افراد کے امپاورمنٹ کیلے اسکیمات/پروگرامس
  • وزارت برائے قبائلی امور کی جانب سے قبائلی طلباء کیلے اسکالرشپ اسکیمات
  • ایس سی/ایس ٹی طلباء کیلے پوسٹ میٹرک اسکالرشپس
  • اقلیتی طلباء کیلے اسکالرشپس
  • آن لائن مائناریٹی، اسٹوڈنٹس ویلفیراسکالرشپس سسٹم
3.58333333333
اپنی تجاویز ارسال کریں (اگر مذکورہ بالا مواد پر آپ کو کوئی تبصرہ/تجویز دینی ہو تو براہ کرم یہاں درج کریں))
Enter the word
Back to top