ہوم / سماجی بہبود / سماجی بیداری / صارفین کے حقوق / گمراہ کن اشتہار اَور قانون-گاہک تحفظ سے متعلق
شیئر
Views
  • صوبہ Open for Edit

گمراہ کن اشتہار اَور قانون-گاہک تحفظ سے متعلق

اِس حصے میں گمراہ کن اشتہار اَور قانون کی معلومات گاہکوں کے تحفظ کے موضوع میں دی گئی ہے۔

اطلاع اَور تکنیک کے زمانے میں اشتہار ہمارے زندگی کے غیرمنقسم عضو بنتے جا رہے ہیں، اِس کے اثر سے بچ پانا ہم سبھی کے لِئے کافی مشکل سا ہو گیا ہے۔ آج سماج کا ہر طبقہ چاہے بچّے ہوں یا پھِر بزرگ، کام کاجی خواتین ہوں یا خاتون خانہ۔ سبھی پر اشتہارات کا اثر دیکھا جا سکتا ہے۔ اشتہار ہماری زندگی پر گہری چھاپ چھوڑتے ہیں۔ ہمارا کھان-پان، رہن-سہن سب کچھ اشتہارات سے متاثر ہو رہا ہے، یہاں تَک کہ ہمارے سوچنے اَور طرز عمل کے طریقے میں بھی اشتہارات کی جھلک صاف نظر آنے لگی ہے۔ ہم یہ بھی کہہ سکتے ہیں کہ اشتہار سماج کے آئینہ ہیں جِس طرح کا سماج ہوگا، اشتہار کی کاپی تیار کرتے وقت اِس کے مکالمہ، تصویر، مشتہر مصنوعات وغیرہ اُسی طرح کے ہوں‌گے۔ یہ کہہ پانا کافی مشکل ہے کہ سماج کی چھاپ اشتہارات میں نظر آتی ہے، کہ اشتہارات کی چھاپ سماج میں دِکھائی دے رہی ہے۔ آم صارفین کو یہ جاننا ضروری ہے کہ اشتہار کیا ہوتے ہیں، یہ ہماری زندگی کو کَیسے متاثر کرتے ہیں اَور کب یہ اشتہار گمراہ کن ہو جاتے ہیں۔ ساتھ ہی یہ بھی جاننا چاہئے کی اِن گمراہ کن اشتہارات کی روک تھام یا قابو کے لئے ملک میں کون-کون سے قانون ہیں۔ اِن تمام باتوں کی گفتگو اِن باب میں کی گئی ہے تاکہ صارف بیدار ہو سکیں اَور اُس کے حقوک کی حفاظت ہو سکے۔
اشتہاری چیزوں اَور خدمات کی تشہیر کے ذرائع ہوتے ہیں، لیکِن جب اشتہار بازوں کے ذریعے جان بوجھ کر جھوٹی تشہیر کی جاتی ہیں اَور حقائق کو توڑ-مروڑ‌کر پیش کیا جاتا ہے، تب یہ قابل اعتراض ہو جاتا ہے۔ جب کوئی پیداکار یا اشتہار باز کِسی مصنوعات کے بارے میں کوئی دعویٰ کرتا ہے، تو اُس کو اُسے ثابت بھی کرنا چاہئے۔ اَگر وہ ایسا نہیں کر پاتا ہے تو اِس کو گمراہ کن اشتہار مانا جائے‌گا اَور ملک کے مختلف قانونوں کے تحت اُس کے خلاف کاروائی کی جا سکتی ہے۔ اشتہارات کے تعلق میں غیر مناسب طرز عمل کے زمرہ میں درج ذیل باتیں آتی ہیں :

  • کِسی مصنوعات کے تعلق میں اُس کے اشتہار میں کہی گئی بات ثابت نہ ہوں۔
  • خاص مصنوعات کی خرید پر مفت تحفے کی بات تبھی سچ ہو سکتی ہے، جب اُس تحفے کی قمیت اُس چیز میں نہ جوڑی گئی ہو، مفت تحفے کی قمیت چیز میں جُڑی ہونے پر غیر مناسب طرز عمل مانا جائے‌گا۔
  • تہوار خصوصی پر پُرانی مصنوعات سے چھٹکارا پانے کے لئے خاص چھوٹ کا اعلان کر مصنوعات کو بیچنا۔
  • مصنوعات کے تعلق میں اہم اطلاع چھوٹے اَور مہین حروف میں اشتہار کے ساتھ نیچے چھاپنا یا دِکھانا جو صارف کے ذریعے صحیح سے پَڑھا نہ جا سکے۔

اشتہار کب گمراہ کن ہو جاتے ہیں ؟

درج ذیل حالتوں میں کِسی چیز یا خدمت کے تعلق میں کئے جا رہے اشتہار گمراہ کن ہو جاتے ہیں :

  • جب کِسی مصنوعات یا خدمت کے اشتہار میں موضوع کی تعریف غلط طریقے سے کی جائے۔
  • جب اشتہار صارف کی اطلاعاتی حصول کے حق کی خلاف ورزی کر رہا ہو۔ مثال کے لئے، خریداروں میں اعتماد جمانے کے لئے نقلی کاغذات کا استعمال کیا جانا، گمراہ کن قیمتوں کا ذکر کیا جانا، دُوسری مصنوعات کے بارے میں قابلِ مذمت طور پر شبہ پیدا کیا جانا، وغیرہ۔
  • جِس اشتہار میں صارف کی حفاظت کے حق کی خلاف ورزی ہو رہی ہو۔
  • صارف کے انتخاب یا پسند کے حق کی خلاف ورزی ہو رہی ہو۔
  • بچّوں کو نشانہ بنا کرکے ایسے اشتہار شائع اَور نشر کئے جانا جِس سے اُن میں تشدد کے جذبات پر زور ہو۔
  • مصنوعات یا خدمت کو مبالغہ آمیز کرکے مشتہر کرنا۔
  • تحریص سے متعلق اشتہار۔
  • سماج اَور صحت کے لئے نقصان دہ مصنوعات کا اشتہار کرنا۔

گمراہ کن اشتہارات کا اثر

گمراہ کن اشتہار صارف کے اطلاع، حفاظت اَور انتخاب کے حقوق کی تلفی کرتے ہیں۔ گمراہ کن اشتہارات کے اثر میں آکر صارف کئی بار ایسی چیزوں اَور خدمات کا استعمال کر بیٹھتا جو اُس کی صحت اَور زندگی کے لئے مہلک ہو سکتی ہیں۔ اِس کی وجہ سے اُس کو جسمانی اَور دماغی کے ساتھ-ساتھ مالی نقصان بھی پہُنچاتی ہے۔
اشتہارات میں دِکھائے جانے والے منظراتب کا بچّوں کے دل اَور عقل پر گَہرا اثر پڑتا ہے۔ اشتہارات میں دِکھائے جانے والے تشدد آمیز اَور اشتعال انگیز منظر بچّوں کے دماغ میں اِس طرح سے بیٹھ جاتے ہیں، کہ وہ اِس کی نقل کرنے لگتے ہیں۔
اخبار  اَور ٹیلی ویژن میں کبھی-کبھی ہمیں اس طرح کی خبریں سُننے، دیکھنے کو مِلتی ہیں، کہ فلاں جگہ پر بچّے نے سُپر مین کی نقل کرتے ہوئے چھت سے چھلانگ لگا دی اَور اپنی جان گواں بیٹھا۔ اِس لئے اس طرح کے اشتہارات پر سختی سے رکاوٹ لگانے کی ضرورت ہے۔

گمراہ کن اَور جھوٹے اشتہارات کے زمرہ جات

گمراہ کن اَور جھوٹے اشتہارات کے خصوصاً دو زمرہ جات ہوتے ہیں۔ پَہلے زمرہ میں ایسے اشتہار آتے ہیں جو صارف کے اطلاع اَور انتخاب کی حق تلفی کرتے ہیں اَور اُن کو مالی نقصان اَور دماغی تکلیف پہُنچاتے ہیں۔ وہیں کچھ اشتہار ایسے ہوتے ہیں جو غیر معین علاج اَور دواؤں کی تشہیر کرتے ہیں یا جھوٹموٹھ کی صحت سے متعلق سامان کو بیچنے کی کوشش کرتے ہیں۔ اس طرح کے اشتہار اور زیادہ خطرناک اَور تشدد آمیز ہوتے ہیں،

گمراہ کن اَور جھوٹے اشتہار کے زمرہ جات

  • ایسے اشتہار جو غیر معین علاج اَور دواؤں کی تشہیر کرتے ہیں یا غلط صحت سے متعلق سامان کو بیچنے کی کوشش کرتے ہیں۔
  • ایسے اشتہار جو صارف کو اطلاع اَور انتخاب کے حق سے محروم کرکے مالی نقصان اَور دماغی تکلیف پہُنچاتے ہیں۔

کیونکہ وہ صارف کی صحت اَور جسم کو نقصان پہُنچانے والے ہوتے ہیں۔ کئی بار ایسی دواؤں کے استعمال سے لوگوں کی جان تَک چلی جاتی ہیں۔ ایسے اشتہار دُوسرے زمرہ کے ہوتے ہیں۔

اشتہارات کو منضبط کرنے والے اصول

قانون اور دَساتیر

حکومتِ حند کئی اصول، قانون، اَور دستوروں کے ذریعے تِجارَتی سرگرمیوں کو منضبط کرنے کی کوشش کرتی ہے۔ سرکار کے ذریعے بنائے گئے کئی اصول، قانون اَور دَساتیر ایسے ہیں، جِن میں ہندوستان میں اشتہارات کو منضبط کرنے کے اہتمام ہیں۔ لیکِن بد قسمتی سے اِن کی صحیح سے تعمیل نہیں ہو پانے سے گمراہ کن اشتہارات پر پوری طرح سے رکاوٹ نہیں لگ پا رہی ہے۔
صارف کی بیداری کے لئے یہاں کچھ اہم اصول، قانون اَور دستوروں کی تفصیل دی جا رہی ہے۔ جو درج ذیل ہیں :

  • ہندوستانی معاہدہ قانون، 1872
  • چیز فروخت قانون، 1930
  • دوا اَور کاسمیٹِک قانون، 1940
  • ضروری چیز قانون، 1955
  • اشیائےخوردنی اپ-مرکب بیخ کنی قانون، 1955
  • ٹریڈ اَور مارکینڈائز قانون، 1958
  • ناپ-تول معیار قانون، 1976
  • کالا بازاری مزاحم اَور ضروری چیز قانون، 1980
  • اجارہ داری اَور مزاحم کاروبار عمل، (ایم آر ٹی پی)قانون، 1969
  • کیبل، ٹیلی ویژن، نیٹورک قابو قانون، 1995
  • دوا اَور کرشمائی علاج قانون، 1954
  • بچہ کا دودھ اَور بچہ کی خوردنی اشیا قانون، 1992
  • کمپنی قانون، 1956 کی دفعہ 58
  • موٹر گاڑی قانون، 1956
  • مقابلہ قانون، 2002
  • فُوڈ حفاظت اینڈ اسٹینڈرڈ ایکٹ، 2006
  • صارفی تحفظ قانون، 1986

اس کے علاوہ بھی کئی اصول، قانون اَور ضابطہ دَساتیر حکومتِ حند کے ذریعے بنائی گئی ہیں جو صارف کے حقوک کی حفاظت کرتی ہیں۔
کچھ اِنْضباطی اتھارٹی جِن کو اپنے-اپنے علاقوں میں اشتہارات پر کنٹرول کا حق ہے

  • بھارتیہ رِزَرو بینک
  • بھارتیہ علاج کونسل
  • ہندوستانی ضمانت اَور مبادلہ بورڈ
  • ہندوستانی ٹیلی کمیونیکیشن اِنْضباطی اتھارٹی
  • بیمہ اِنْضباطی ترقی اتھارٹی

ہندوستانی اشتہار معیاری کونسل کے ذریعے خود پر قابو

ہندوستانی اشتہار معیاری کونسل، پیداکار اشتہار اجینسیوں اَور مواصلاتی ذرائع کا ایک خود مختار ادارہ ہے۔ معیاری کونسل اپنے ممبروں کو صبروتحمل کا سجھاؤ دیتی ہے، اُس کا ماننا ہے کہ اَگر صبروتحمل نہیں ہوگا تو کوئی دوسرا کنٹرول کرے‌گا۔ معیاری کونسل کے ذریعے تیار دستور العمل کے بُنیادی اصول ذیلی طورپر ہیں :
اشتہار کے قول میں سچ اَور ایمانداری کی آمیزش کرکے گمراہ کن تشہیر سے بچانا۔

  • یہ مقررہ کرنا ہے کہ اشتہار سماج کی شرافت کے عقائد کو ٹھیس نہ پہُنچائے۔
  • ایسے اشتہارات سے بچانا جو سماج اَور افراد کے حقوک کے برعکس ہوں اَور صرف انسان کو ناقابل قبول ہوں۔
  • یہ مقررہ کرنا کہ اشتہار کاروبار کے مقابلہ باز صیغہ کی اطاعت کریں جِس سے کہ صارف کے انتخاب اَور عقل میں خلل انداز نہ بنے اَور اِس مقابلہ سے پیداکار اَور گاہکوں دونوں کو نفع ہو۔

کوئی بھی صارف یا صنعتی ادارہ اِس دستور العمل کی خلاف ورزی کرتے ہوئے کِسی دیگر ادارے کو دیکھے، تو اِس کی شکایت کونسل سےکر سکتا ہے۔ شکایت حاصل ہونے پر کونسل، اشتہار دینے والے ادارہ سے دو ہفتے کے اندر جواب مانگ‌کر شکایت ساختی اکائی کے سامنے فیصلے کے لئے پیش کرتی ہے۔ اَگر مقرر مدت میں اشتہار دینے والے ادارہ کی طرف سے کوئی جواب نہ مِلے تو کونسل کو حق ہے کہ وہ اُس ادارہ کے خلاف یکطرفہ فیصلہ دے سکتی ہے۔ ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی پائے جانے پر ساختی اکائی اشتہار ہٹانے یا اُس کو بدلنے کے لئے کہتا ہے اَور کونسل کے ممبر اِس فیصلے کو ماننے کے لئے پابند ہیں۔ وقت-وقت پر کونسل خود بھی اشتہار کرکے لوگوں کو جھوٹ، گمراہ کن اَور غیراخلاقی اشتہارات کی شکایت کرنے کی ترغیب دیتی ہے۔

صارف کو گمراہ کن اشتہارات سے ہوئے نقصان کا معاوضہ دِلانے والے قانون

وَیسے تو صارف کے حقوق کی حفاظت کے لئے کئیوں اصول، قانون اَور دَساتیر موجود ہیں۔ اِن کا ذکر اوپر کیا جا چُکا ہے۔ لیکِن اِن میں شامل دو ایسے قانون ہیں جو صارف کو جھوٹ اَور گمراہ کن اشتہارات سے ہونے والے نقصان کے لئے معاوضہ دِلا سکتے ہیں۔
یہ قانون مندرجہ ذیل ہیں :

  • اجارہ داری اَور مانع کاروباری رویہ (ایم۔ آر۔ ٹی۔ پی۔)قانون، 1969
  • صارفی تحفظ قانون، 1986

اجارہ داری اَور مانع کاروباری رویہ قانون،1969

اِس قانون کو اجارہ داری اَور مانع تِجارَتی رویہ کو منضبط کرنے کے لئے بنایا گیا تھا۔ 80 اَور 90 کی دہائی میں اِس قانون کا کافی اثر تھا۔ سنہ 1984 میں نا مناسب کاروباری نظام سے وابستہ کچھ اَور انعقاد اِس میں جوڑ دئے گئے۔ بعد میں ایک دیگر ترمیم میں مالی طاقت کے ذخیرہ خانہ سے متعلق ایک حصہ کے کچھ انعقاد کو سال 1991 میں ہٹا لیا گیا۔ اس کے بعد اِس قانون کی طاقتیں کافی کم ہو گئی۔

صارفی تحفظ قانون،1986 اَور گمراہ کن اشتہار

صارفی تحفظ قانون، 1986 کو صارفین کے حقوک کو بہتر طریقے سے محفوظ کرنے کے لئے لاگو کیا گیا ہے۔ اَگرچہ اِس کے پہلے بھی کئیوں قانون ملک میں موجود تھے، لیکِن کوئی ایسا قانون نہیں تھا جو صارف کو ہوئے نقصان کے لئے معاوضہ دِلائے۔ صارفی تحفظ قانون کی دفعہ تین میں اہتمام کیا گیا ہے کہ قانون کی مختلف انتظامی ہم عصر کِسی قانون کے انتظامات کے خلاف نہیں ہیں، بلکہ اُس کی ضمیمہ ہیں۔ اِس قانون کی صفات اَور انتظام کے بارے میں سابقہ ابواب میں تَفْصِیلی جانکاری دی جا چُکی ہے۔ قانون میں یہ بندوبست دیا گیا ہے کہ اَگر کِسی گمراہ کن اشتہار کے اثر سے کِسی صارف کو جسمانی، دماغی یا مالی نقصان پہُنچا ہے تو وہ صارفی عدالت میں شکایت درج کرا سکتا ہے۔ صارف عدالتیں تمام پہلو پر خیال کرنے کے بعد مصیبت زدہ کو معقول معاوضہ دِلا سکتی ہیں اَور ایسے گمراہ کن اشتہارات پر روک لگانے یا اِس کو دوبارہ ترمیم شُدہ کر مشتہر کرنے کا حکم بھی دے سکتی ہیں۔ قانون کے اندر نا مناسب تِجارَتی برتاؤ سے وابستہ سرگرمیوں پر روک لگانے کی طاقتیں موجود ہیں۔ صارف عدالتوں کے ذریعے طے شدہ مختلف معاملات میں یہ بات واضح طور پر دیکھی جا سکتی ہے۔ اِس لئے لوگوں کو چاہئے کہ وہ بیدار صارف کی طرح ایسی کسی بھی سرگرمی یا سرگرمیوں کے خلاف آواز بلند کریں جو آم صارف کے لئے خطرناک ثابت ہو سکتی ہیں۔ چیز یا خدمت میں کِسی قسم کی خرابی یا کمی ہونے پر پہلے اپنی سطح پر اُس کو دور کرنے کی کوشش کریں اَور اَگر ایسا نہیں ہو پاتا ہے، تو صارف عدالتوں میں اِس کی شکایت کی جا سکتی ہے۔

سجھاؤ

صارفین کو اشتہارات میں کہی جانے والی باتوں پر آنکھ مُوند‌کر اعتماد نہیں کر لینا چاہئیے، اُس موضوع میں پُوری معلومات کرنے کے بعد ہی مشتہر چیز یا خدمت کا استعمال کرنا چاہئے۔ اشتہارات کی صرف شکل و صورت سے ہی متاثر ہونا ٹھِیک نہیں ہے۔

  • ایسے جھُوٹے اشتہارات کی کاپی دیگر صارفین، صارفی گروہوں اَور غیر سرکاری ادارہ کی توجہ اپنی طرف متوجہ کرانا چاہئے تاکہ اُس کے خلاف آواز اُٹھائی جا سکے۔
  • اپنے محلے، اسکول یا دفتر میں ایک چھوٹا صارف کلب قائم کرکے گمراہ کن اشتہار پر گفتگو کی جانی چاہئے اَور ایسے جھوٹ اَور گمراہ کن اشتہارات کا وابستہ اجینسی سے شکایت کرنی چاہئے۔
  • کِسی مواصلاتی خدمت سے متعلق نا مناسب اشتہارات کی شکایت ہندوستانی مواصلات اِنْضباطی کمیشن سے کی جا سکتی ہے۔
  • کیبل ٹیلی ویژن نیٹورک قانون کی خلاف ورزی کرنے والے اشتہارات کی شکایت مرکزی اطلاع اَور نشریات شعبہ وزرات کو کی جا سکتی ہے۔

گمراہ کن اشتہارات کی اطلاع دئے گئے پتے پر دی جا سکتی ہیں۔
ہندوستانی اشتہار معیار کونسل،205، بامبے مارکیٹ، تاڑدیو روڈ، مُمبئی 400034

ماخذ : بھارتیہ عوامی انتظامیہ ادارہ، نَئی دِلّی۔

3.09090909091
اپنی تجاویز ارسال کریں (اگر مذکورہ بالا مواد پر آپ کو کوئی تبصرہ/تجویز دینی ہو تو براہ کرم یہاں درج کریں))
Enter the word
Back to top