ہوم / صحت / آیوش / یونانی
شیئر
Views
  • صوبہ Open for Edit

یونانی

اِس حصے میں یونانی طبی پریکٹس کے بارے میں معلومات دی گئی ہے۔

یونانی اِس حصے میں یونانی طبی پریکٹس کے بارے میں معلومات دی گئی ہے۔

تعارف

یونانی طبی پریکٹس کے ہندوستان میں ایک لَمبا اَور شاندار ریکارڈ رہا ہے۔ یہ ہندوستان میں عَرب ملک کے لوگوں اَور ایرانیوں کے ذریعے گیارہوِیں صدی کے اِرد گِرد پیش کی گئی تھی۔ جہاں تَک یونانی طبی کا سوال ہے، آج ہندوستان اِس کا استعمال کرنے والے معروف ممالک میں سے ایک ہے۔ یہاں یونانی تعلیمی، تحقیق اَور صحت دیکھ بھال کرنے والے اداروں کی سَب سے بَڑی تعداد ہے۔
جیسا کہ نام کی طرف اشارہ کرتا ہے، یونانی نظام نے گریس میں جنم لیا۔ ہِپّوکریٹس کے ذریعے یونانی نظام کی بنیاد رکھی گئی تھی۔ اِس نظام کے موجودہ شکل کا کریڈِٹ عَرب کو جاتا ہے جِنہوں نے نہ صرف ترجمہ کر گریک ادب کے زیادہ تر حصے بلکہ اپنے خود کی شراکت داری کے ساتھ روزمرّہ کی دوا کو افزودہ بنایا۔ اِس نظام میں اُنہوں نے طبیعیات سائنس، عِلم کیمیاء، نباتات سائنس، ایناٹامی، فِزیولاجی، پیتھولاجی، علاج اَور سرجری کا وسیع استعمال کیا۔
یونانی دوائیں اُن پہلوؤں  کو اپناکر افزودہ ہوئی جو مصر، سیرِیا، عراق، فارس، ہندوستان، چین اَور دیگر بیچ مشرق کے ممالک میں روایتی دواؤں کی ہم عصر نظاموں  میں سَب سے اَچّھی تھی۔ ہندوستان میں یونانی طبی پریکٹِس عربوں کے ذریعے پیش کی گئی تھی اَور جلدہی اِس نے مضبوت جڑیں جما لی۔ دِلّی کے سُلطان (حکمراں) نے یونانی نظام کے علماء کرام کو تحفظ فراہم کیا اَور یہاں تَک کہ کچھ کو ریاستی اہلکاروں اَور درباری معالج کے طور پر  نامزد بھی کیا تھا۔
ہندوستان میں برِٹیش حکومت کے دوران اِس نظام کو ایک سنگین جھٹکا لگا۔ ایلوپیتھک نظام شروع کیا گیا اَور اُس نے اپنے پیر جما لئے۔ اِس نے دوا کی یونانی نظام کی تعلیم، تحقیق اَور مشق کو دھیما کر دیا۔ یونانی نظام کے ساتھ ساتھ علاج کے تمام روایتی نظام کو تقریباً دو صدیوں تَک تقریباً پوری طرح ناقدری کا مقابلہ کرنا پڑا۔ ریاست کے ذریعے تحفظ واپس لینے سے عام عوام کو بہت زیادہ نقصان نہیں ہوا کیونکہ اُس نے اِس نظام میں اعتماد ظاہر کیا اَور اِس کی مشق جاری رہی۔ بریٹش دور کے دوران بنیادی طور پر دِلّی میں شریفی خاندان، لکھنئو میں عزیزی خاندان اَور حیدر آباد کے نظام کی کوششوں کی وجہ سے یونانی علاج بچ گئی۔
آزادی کے بعد دوا کی ہندوستانی نظام کے ساتھ ساتھ یونانی نظام کو قَومی سرکار اَور لوگوں کے تحفظ کے تحت پھر سے بڑھاوا مِلا۔ حکومتِ حند نے اِس نظام کے بھرپور ترقی کے لئے کئی قدم اُٹھائے۔ سرکار نے اِس کی تعلیم اَور تربیت کو جاری کرنے اَور بڑھاوا دینے کے لئے قانون پاس کئے۔ سرکار نے اِن دواؤں کی پیداوار اَور مشق کے لئے تحقیقی اداروں، ٹیسٹ تجربہ گاہوں اَور ہم معیار ی اصولوں کا قیام کیا۔ آج اپنے تسلیم شدہ معالج، ہسپتالوں اَور تعلیمی اَور تحقیقی اداروں کے ساتھ دوا کی یونانی نظام، قَومی صحت دیکھ بھال فراہم کرنے کے نظام کا ایک غیرمنقسم حصہ ہے۔

یونانی کے اصول اَور نظریات

یونانی نظام کے بُنِیادی اصول ہِپّوکریٹس کے مشہور چار ہیومرس کے اصول پر منحصر ہے۔ یہ جسم میں چار ہیومرس یعنی خون، کف، پیلا پت اَور کالی پت کی حاضری کو مان‌کر چلتا ہے۔

انسان جسم کو درج ذیل سات حصوں سے بنا ہوا مانا جاتا ہے :

ارکان (عنصر)


انسانی جسم میں درج ذیل چار جزو ہوتے ہیں : اِن عناصر میں سے ہر ایک کا ذاتی مزاج درج ذیل شکل سے ہوتا ہے : عنصر

عنصر

مزاج

ہوا

گرم اَور نم

زمین

ٹھَنڈا اَور سُوکھا

آگ

گرم اَور سُوکھا

پانی

ٹھَنڈا اَور نم

زیادہ معلومات کے لئے ویب سائٹ : www.nium.in

مزاج (عادت)

یونانی نظام میں، آدمی کا مزاج بہت مہتوپورن ہے کیونکہ یہ چھِدْرا مانا جاتا ہے۔ کِسی آدمی کا مزاج مادوں کے پرسپر نظام کا نتیا مانا جاتا ہے۔ مزاج حقیقی طورپر تبھی ٹھِیک ہو سکتا ہے جب یہ چار مادے برابر مقدار میں ہوں۔ ایسا وجود میں نہیں ہوتا ہے۔ مزاج ٹھِیک ہو سکتا ہے۔ اِس کا مطلب ہے انصاف معقول عادت اَور جِس کی ضروری مقدار کی حاضری۔ آخرمیں، مزاج کھراب ہو سکتا ہے۔ اِس معاملے میں انسان جسم کے سوستھ جاری نظام کے لئے اُن کی ضروریات کے مُطابق مزاج کے ٹھِیک تقسیم کی کمی ہوتا ہے۔

اخلات (ہیومرس)

ہیومرس جسم کے وہ نم اَور مائع مادہ ہوتے ہیں جو بیماری سے تبدیلی اَور تحول کے بعد تیار ہوتے ہیں ؛ وہ پرورش، ترقی، اَور مرمت کا کام کرتے ہیں ؛ اَور آدمی اَور اُس کی نسل کے تحفظ کے لئے توانائی کی پیداوار کرتے ہیں۔ ہیومر جسم کے مختلف اعضأ کی نمی کو بنائے رکھنے کے لئے ذمہ دار ہیں اَور جسم کو غذائیت بھی فراہم کرتے ہیں۔ کھانا ہضم کے چار حصوں سے گُزرتا ہے ؛ (1) گیسٹرِک ہضم جب کھانا کائم اَور کائل میں تبدیل کر دیا جاتا ہے اَور میسینٹیرِک نبضوں کے ذریعے جگر کو پہُنچایا جاتا ہے (2) ہیپیٹِک ہضم جِس میں کائل الگ مقدار میں چار ہیومرس میں تبدیل کیا جاتا ہے، جِس میں خون کی مقدار سب سے زیادہ ہوتی ہے۔ اس طرح، جگر سے نِکلنے والا خون دیگر ہیومرس یعنی کف، پیلا پت اَور کالی پت کے ساتھ مخلوط ہوتا ہے۔ ہضم کے تِیسرے اَور چَوتھے حصہ (3) نالی اَور (4) بافت ہضم کی شکل میں جانے جاتے ہیں۔ جبکہ ہیومر خون نالی میں بہتے ہیں، ہر بافت اپنی کشش طاقت کے ذریعے اپنی پرورش کو جذب  کرتا ہے اَور اپنی اختیاری طاقت کے ذریعے روک‌کر برکرار رکھتا ہے۔ پھر اختیار جمع کرنے کی طاقت کے ساتھ آمیزش میں ہضم طاقت اِس کو بافت میں تبدیل کر دیتی ہے۔ اِس حصے میں ہیومر کا فضلہ مادہ خارِج کار طاقت کے ذریعے خارج کیا جاتا ہے۔ اِس نظام کے مُطابق جب بھی ہیومر کے توازن میں کوئی بھی گڑبڑی ہوتی ہے، تو یہ بیماری کا سبب بنتی ہے۔ لہذا علاج، ہیومرس کا مزاج کا توازن بہال کرنے پر زیر ہدف ہوتا ہے۔

اعضاء (عضو)

یہ انسانی جسم کے مختلف عضو ہیں۔ ہرایک ذاتی عضو کی صحت یا بیماری پُورے جسم کی صحت کی حالت کو متاثر کرتا ہے۔

ارواہ

روح (روح) ایک گیس دار مادہ ہے، جو منترشدہ ہوا سے حاصل ہوتی ہے، یہ جسم کی تمام نظام تکسید سرگرمیوں میں مدد کرتی ہے۔ یہ اکھلات لتیپھاہ کو جلاکر ہر طرح کی کُوا (طاقتوں) اَور ہرارت گریجِیاہ پَیدا شُدہ کرتی ہے، یہ جسم کے تمام اعضأ کے لئے زندگی طاقت کا ماخذ ہے۔ اِن کو زندگی طاقت مانا جاتا ہے، اَور اس لئے، بیماری کے تشخیص مرض اَور علاج میں مہتوپورن ہیں۔ یہ مختلف طاقتوں کی واہک ہیں، جو پُورے جسم کی نظام اَور اُس کے حصوں کو کرِیاشیل بناتی ہے۔

کُوا (طاقتیں)


طاقتوں کے تین قسم ہیں :

  1. کُوا طبیہ یا قدرتی طاقت تحول اَور ولادت کی طاقت ہے۔ جگر اِس طاقت کی جگہ ہے اَور یہ عمل جسم کے ہر بافت میں ہوتی ہے۔ تحول کا تعلق انسانی جسم کی پرورش اَور ترقی کے عمل کے ساتھ ہے۔ غذائیت کھانے سے آتا ہے اَور جسم کے تمام حصوں میں لے جایا جاتا ہے، جبکہ اضافہ کی طاقت انسانی روح کی تعمیر اَور ترقی کے لئے ذمہ دار ہے۔
  2. کُوا نفسانیہ یا دماغی طاقت اعصاب اَور دماغی طاقت کو حوالہ کرتی ہے۔ یہ دماغ کے اندر واقع ہوتی ہے اَور علم دوستی  اَور چلنے پھِرنے کی طاقت کے لئے ذمہ دار ہے۔  علم دوستی  طاقت سوچ یا احساس بتاتی ہے اَور چلنے پھِرنے کی طاقت احساس کے رد عمل کی شکل میں حرکتوں کو انجام دیتی ہے۔
  3. کُوا ہیوانِیاہ یا زندگی طاقت زندگی کو بنائے رکھنے کے لئے ذمہ دار ہے اَور ذہنی طاقت کے اثر کو منظور کرنے کے لئے تمام اعضأ کو لائق بناتی ہے۔ یہ طاقت دل میں واقع ہوتی ہے۔ یہ بافتوں کو زندہ رکھتی ہے۔

افال (کام)

یہ جزو جسم کے تمام اعضأ کی حرکتوں اَور کام کرنے کے لئے حوالہ دیتا ہے۔ ایک صحت جسم کے مختلف عضو نہ صرف مناسب شکل میں ہوتے ہیں، بلکہ اپنے متعلقہ کام بھی مناسب طریقے سے کرتے ہیں۔ اِس انسانی جسم کے کام کی پُوری توسیع میں مکمل علم رکھنا ضروری بناتا ہے۔
صحت : صحت انسانی جسم کی اُس حالت کو حوالہ دیتا ہے جب جسم کے تمام کام عام طور پر کئے جا رہے ہوں۔ بیماری صحت کے برعکس ہے جِس میں جسم کے ایک یا زیادہ اعضأ یا شکلوں میں گڑبڑ ہو۔
تشخیصی مرض : یونانی نظام میں تشخیصی نظام مُشاہِدہ اَور جسمانی ٹیسٹ پر منحصر ہے۔ ایک شخص کی کسی بھی بیماری کو اِن کا ایک اثر مانا جاتا ہے :

  • وہ اشیاء اور مواد جِس سے وہ بنا ہو
  • مزاج، ساخت اَور عادت کی طاقت کی قسم جو اُس کے پاس ہوں
  • باہر سے اُس پر کام کرنے والے عامِل کی قسم، اَور
  • اُس کے جسمانی کاموں کو بنائے رکھنے کی نوعیت کی کوشش اَور جہاں تَک مُمکِن ہو رکاوٹوں کو دور رکھنے کی کوشش

تمام فرق متعلقہ عوامل کو دھیان میں رکھتے ہوئے، بیماری کا سبب اَور قدرت معلوم کر علاج متعین کیا جاتا ہے۔ تشخیص مرض میں اچھی طرح سے اَور توسیع میں بیماری کی وجوہات کی جانچ شامِل ہے۔ اِس کے لِئے، بنیادی طور پر معالج پلس (نبض) پڑھنے اَور پیشاب اَور پاخانے کا ٹیسٹ پر منحصر رہتا ہے۔ دل کے سِسٹولِک اَور ڈایسٹولِک کے ذریعے تیار، شریانوں کے باری باری سے سکُڑن اَور پھیلاؤ کو پلس (نبض) کہا جاتا ہے۔ نبض پڑھنے اَور پیشاب اَور پاخانے کی جسمانی ٹیسٹ کے ذریعہ کے علاوہ، جائزہ، گھبراہٹ، ٹکّر، اَور احتجاب کی شکل میں دیگر روایتی ذریعہ بھی تشخیصی مرض کے مقاصد کے لئے استعمال کئے جاتے ہیں۔

 

مرض کی روک تھام

بیماری کی روک تھام اِس نظام کے لئے اُتنی ہی فکر کا موضوع ہے جِتنا کہ اُس بیماری کے علاج کا۔ اپنی شروعاتی حالت سے ہی کِسی انسان کی صحت کی حالت پر آس پاس کے ماحول اَور ماحولیاتی حالت کا اثر ہونا منظور کیا گیا ہے۔ کھانا، پانی اَور ہوا کو آلودگی مبرّا  رکھنے کی ضرورت پر زور دیا گیا ہے۔ صحت کو بڑھاوا دینے اَور بیماری کی روک تھام کے لئے چھے ضروری شرط اول (اسباب سِتّا اے ضروریہ) مقررہ کی گئی ہیں۔ یہ ہیں :

  • ہوا
  • خوردنی اَور مشروب
  • جسمانی حرکت اَور آرام کرنا
  • دماغی حرکت اَور آرام کرنا
  • سونا اَور جاگے رہنا
  • نکاسی اَور رکاوٹ

اَچّھی اَور صاف ہوا کو صحت کے لئے سَب سے ضروری مانا جاتا ہے۔ مشہور عَرب معالج، ایوِسینّا نے یہ پایا کہ ماحول کی تبدیلی سے کئی بیماریوں کے مریض کو راحت مِلتی ہے۔ اُنہوں نے مناسب وینٹیلیشن کے ساتھ کھُلے ہوا دار مکان کی ضرورت پر بھی زور دیا۔ یہ سفارش کی جاتی ہے کہ ایک شخص سڑن اَور بیماری پَیدا کار عناصر سے آزاد رکھنے کے لئے تازہ کھانا لے۔ گَندے پانی کو کئی بیماریوں کے ایک کیریئر کے طور پر مانا جاتا ہے۔ یہ نظام، اس لئے، مضبوطی سے پانی کو تمام قسم کی غلطیوں سے آزاد رکھنے کی ضرورت پر زور دیتی ہے۔ کثرت کے ساتھ ساتھ آرام بھی اَچھی صحت کو بنائے رکھنے کے لئے ضروری مانا جاتا ہے۔ کسرت پٹھوں کی ترقی میں مدد کرتا ہے اَور پرورش متعین کرتا ہے، خون کی فراہمی اَور فضلہ نکاسی نظام کی سرگرمی معقول طور پر بڑھ جاتی ہے۔ یہ جگر اَور دل کو بھی اَچّھی حالت میں رکھتی ہے۔ یہ نظام خوشی، دکھ، اَور غصے وغیرہ کی شکل میں نفسیاتی وجوہات کی صحت پر اثر کو بڑے پیمانے پر نامزد کرتی ہے۔ یونانی علاج کی ایک شاخ ماہر نفسیات علاج ہے، جو اِس موضوع سے توسیع میں منسلک ہے۔ عام طور پر سونا اَور جاگنا اَچھی صحت کے لئے ضروری مانا جاتا ہے۔ نیند جسمانی اَور دماغی آرام فراہم کرتی ہے۔ ایسا مانا جاتا ہے کہ اِس کی کمی توانائی، دماغی کمزوری اَور ہضم میں گڑبڑی پھَیلاتی ہے۔ فضلہ نکاس کے عمل کا مناسب اَور عام کام کاج اَچھی صحت رکھنے کے لئے ضروری ہے۔ اَگر جسم کے فضلہ مصنوعات پوری طرح اخراج نہیں ہوتے ہیں یا جب اُس میں گڑبڑ یا رکاوٹ ہوتی ہے، تو یہ بیماری اَور بیماری کا سبب بنتا ہے۔

 

طبی سائنس


اِس نظام میں ایک مریض کے کامِل شخصیت کو دھیان میں رکھا جاتا ہے۔ ہرایک شخص کے اپنے ذاتی بُنِیادی ساخت، جسم، میک اپ، خود دفاعی نظام، ماحولیاتی عامِل کے لئے رد عمل، پسند اَور ناپسند ہوتے ہیں۔
یونانی علاج میں علاج کے درج ذیل خاص قسم ہیں
ریجِمینٹل علاج (علاج-بِل-تدبیر) ریجِمینٹل علاج فضلہ مادوں کو ہٹانے اَور جسم کی حفاظتی نظام میں اصلاح کے ذریعے جسم کی صحت کی حفاظت کی خاص تکنیک / جسمانی طریقہ ہے۔ دُوسرے الفاظ میں یہ سَب سے اَچھے معلوم " ڈیٹاکسِفکیشن کے طریقے " ہیں۔ ریجِمینٹل علاج میں اہم تکنیکیں  اُن بیماریوں کے ساتھ، جِن کے لِئے وہ موثر مانی جاتی ہیں، مختصر میں نیچے بیان شدہ ہیں :

  1. وینیسیکٹِاو (فسد) علاج کے اس طریقہ کو اِن میں بہت موثر پایا گیا ہے :
    • خون سے متعلقہ مسائل میں اصلاح اَور بُلند فشار خون  سے چھٹکارا
    • زہر آلودگی سے حفاظت اَور خون میں فضلہ مادے کے جمع کی روک تھام
    • جسم کے مختلف حصوں سے بیکار مادوں کا اخراج
    • تحول کے عمل کی اشتعال
    • کچھ حیض متعلقہ خرابیوں کی وجہ سے ہوئی بیماریوں کا علاج
    • مزاج میں گرم تاثیر میں اصلاح
  2. چشکن (ال حجاما) : علاج کے  اس طریقہ کا اِن کے لِئے استعمال کیا جاتا ہے :
    • جلد کی بےکار  مادوں سے صاف صفائی
    • بےشمار حیض یا ناک سے خون آنا بند کرنا
    • جگر بیماری کو ٹھِیک کرنا
    • ملیریا اَور تلّی کی خرابیوں کا علاج
    • بواسیر، خصیہ اَور بچہ دانی کی سوجن، کھجلی، پھوڑے وغیرہ کا علاج
  3. پسینہ آنا (تاریک) : جلد، خون اَور جسم کے دیگر حصوں سے سے فضلہ پسینہ کے عام عمل کے ذریعے خارج کیا جاتا ہے۔ یہ بےشمار گرمی کو کم کرنے میں مدد کرتا ہے۔ سُوکھا یا گیلا سینک، گرم پانی سے غسل، مالش اَور ایک گرم ہوا کے کمرے میں مریض رکھنا پسینہ کے کچھ طریقوں میں سے ایک ہے۔
  4. ڈائیوریسِس یا ادرار (ادرار باؤل) : زہریلے مادہ، فضلہ مصنوعات اَور فاضل ہیومرس پیشاب کے ذریعے خارج کئے جاتے ہیں۔ یہ دل، جگر اَور پھیپھڑوں کی بیماریوں کے لئے علاج کی شکل میں لاگو کیا جاتا ہے۔ کبھی کبھی ادرار ایک ٹھَنڈے کمرے میں مریض کو رکھ‌کر اَور ٹھَنڈا پانی ڈال‌کر کیا جاتا ہے۔
  5. تُرکی غسل (حمام) : اِس کی اِن کے لِئے سفارش کی جاتی ہے :
    • بیکار مادہ ہٹانا اَور پسینہ میں اضافہ
    • ہَلکی گرمی فراہم کرنا
    • غذا بڑھانا
    • چربی کم کرنا
    • چربی بڑھانا
    • ٹھَنڈا غسل عام صحت میں بہتر ہے۔ گرم غسل کو عام طور پر فالج اَور پٹھے میں کھینچاؤ وغیرہ جیسی بیماریوں کے علاج کے لئے مالش کے بعد لاگو کیا جاتا ہے۔
  6. مالش (دَلک، مالش) : مُلایم مالش خاموش اَور آرام دہ ہے، خشک اَور سخت مالش رکاوٹ ہٹاتی ہے اَور خون کی فراہمی بڑھ جاتی ہے، جبکہ تیل سے مالش پُٹھوں کو آرام دیتی ہے اَور جلد کو نرم کرتی ہے۔
  7. حسد کم کرنا : یہ تکنیک درد، سنسنی اَور حسد سے راحت فراہم کرتی ہے۔ یہ سوجن کو کم کرنے میں مدد کرتی ہے اَور ٹیومر کو بھر دیتی ہے۔
  8. داغنا (عملِ کئی) : یہ ایک عضو سے زہر کا قہر دیگر اعضأ کو منتقل ہونے کو روکتا ہے۔ ہِپ کے جوڑ‌کے درد کے معاملے میں، یہ تکنیک بہت مفید  پائی گئی ہے۔ اِس تکنیک کے ذریعے مرض آور مادہ، جو کچھ ساختوں سے جُڑے ہوتے ہیں، ہٹا دئے جاتے ہیں یا اصلاح دئے جاتے ہیں۔
  9. صفائی (اِشال) : یونانی علاج آنتوں کی صفائی کے لئے وسیع طور پر جلاب کا استعمال کرتی ہے۔ اِس طریقہ کار کا استعمال کرنے کے لئے تحریری اصول ہیں۔ یہ تدبیر عام  تحول کے عمل کو متاثر کرتی ہے۔
  10. اُلٹی (وَمَن) : ایمیٹِکس کا استعمال سِردرد، مائگرین، ٹونسِلائیٹی، برونکونیومونِیا اَور دمہ کے علاج کے لئے بھی کیا جاتا ہے۔ یہ دیوانگی اَور غم کی طرح کے دماغی بیماریوں کے علاج بھی کرتا ہے۔
  11. کثرت (رياذات) : جسمانی کثرت اَچھی صحت کے رکھ رکھاؤ اَور کچھ بیماریوں کے علاج کے لئے بہت اہمیت رکھتی ہے۔ یہ پیٹ اَور ہضم کو مضبوت بنانے کے لئے اَچّھی کہی جاتی ہے۔ مختلف قسم کی کثرتوں کے لئے اصول، وقت، اَور شرطیں بنائی گئی ہیں۔
  12. لیچِنگ (طلاقِ الاق) : یہ تدبیر خون سے بُری بات دور کرنے کے لئے استعمال کی جاتی ہے۔ یہ جلد کی بیماریوں اَور رِنگ وَرم وغیرہ کے لئے مفید ہے۔ یہ نظام اِس کو لاگو کرنے کے لئے مخصوص حالات کا بیان کرتی ہے۔

خوردنی اشیا علاج (علاجِ غذا)

یونانی علاج میں کھانا ایک اہم کردار نِبھاتا ہے۔ کھانے کی خوبی اَور مقدار کو جاری  کرنے سے کئی بیماریوں کا بخیروخوبی علاج ہوتا ہے۔ کئی شائع شدہ کتابیں ہیں، جو مخصوص بیماریوں کے تعلق میں خوردنی اشیا کے موضوع میں بتاتی ہیں۔ کچھ خوردنی مادہ ملین، پیشاب آور، اَور پسینہ آور دوا کی شکل میں مانے جاتے ہیں۔

فارمیکوتھیریپی (علاج- بِل- دوا)

اس طرح کے علاج میں فطری طورپر ہونے والی دوائیں شامِل ہیں، زیادہ تر جڑی بوُٹیاں۔ جانوروں اَور معدنی نسب کی دواؤں کا بھی استعمال کیا جاتا ہے۔ صرف قدرتی دواؤں کا استعمال کیا جاتا ہے کیونکہ وہ مقامی طور پر میسّر ہیں اَور جسم پر بعدکے اثر کے بعد نہیں کے برابر یا کم ہوتے ہیں۔ یونانی علاج یہ مان‌کر چلتی ہے کہ دواؤں کو اپنی خود کی تاثیر ہوتی ہے۔ چُونکہ اِس نظام میں آدمی کی خاص تاثیر پر زور دیا جاتا ہے، دوا اس طرح دی جاتی ہے جو مریض کی تاثیر سے میل کھائے، اَور اِس طرح سے صحت مند ہونے کے عمل میں تیزی آئے اَور رد عمل کا جوکھم بھی نہ ہوں۔ دواؤں کی اپنی گرم، ٹھنڈی، نم اَور سُوکھی تاثیر کے ذریعے اثر ہونے کی توقع کی جاتی ہے۔ اصل میں دوائیں اپنی تاثیر کے مُطابق چار حصوں میں تقسیم کی جاتی ہیں اَور معالج اُس کی اپنی طاقت، مریض کی عمر اَور تاثیر، بیماریوں کی نوعیت اَور سنجیدگی کوں دھیان میں رکھتے ہیں۔ دوائیں پاؤڈر، کاڑھا، اشیائےخوردنی، جلسیک، جوارِش، ماجون، خمیرا، سِرپ اَور گولیوں وغیرہ کی شکل میں استعمال کی جاتی ہیں۔

سرجری / جراحی (علاج- بِل- یَد)

یہ علاج بہت محدود استعمال کی ہے،حالانکہ یونانی نظام کو اِس علاقے میں معروف ہونے اَور اپنے خود کے آلات اَور تکنیک کو تیار کرنے کا کریڈِٹ دیا جاتا ہے۔ فی الحال اِس نظام میں صرف معمولی سرجری استعمال میں ہے۔

یونانی میں دوائی قابو

ہندوستان میں یونانی دوا کی تعمیر دوا اَور سولہ سنگار سامان 1940، قانون، اَور اُس کے تحت وقت وقت پر ترمیم شُدہ اصولوں کے ذریعے زیر انتظام ہے۔ حکومتِ ہند کے ذریعے تشکیل شدہ دوا تکنیکی صلاح کار بورڈ اِس قانون کے نفاد کے لئے ذمہ دار ہے۔ ایک دوا مشاورت کمیٹی ہے۔ یہ کمیٹی ملک میں دوا اَور سولہ سنگار سامان قانون کے معاملات میں انتظامیہ میں یکسانیت متعین کرنے کے لئے مرکز  اَور ریاستی سرکاروں / بورڈ کو صلاح دیتی ہے۔ حکومتِ حند کی صحت اَور وزرات  خاندانی فلاح و بہبود  نے یونانی دواؤں کی تعمیر کے لئے سمان معیاری تیار کرنے کے لئے یونانی دوا یکجا کمیٹی کی تشکیل کی ہے۔ اِس کمیٹی میں یونانی علاج، علم کیمیا، نباتات سائنس اَور دوا جیسے مختلف میدانوں کے ماہر ہوتے ہیں۔

یونانی فارماکوپِیا (دوا)

دوا معیارات کی ایک کتاب ہے، جو دواؤں کے معیارات کی تقلید اَور جائزہ / تجزیہ کے پروٹوکال کے تعلق میں کوالٹی کنٹرول کے لئے ضروری ہیں۔ اِن معیارات / پیمانوں کو یونانی دوا کمیٹیوں کے ذریعے آخری شکل دیا جاتا ہے / ؛ تجزیاتی کام کی ذمہ داری ہندوستانی طبی کے لئے دوائی تجربہ گاہ کو سونپی گئی ہے۔ 1091 نسخوں کے پانچ حصوں والے نشنل فارمولری فار یونانی میڈِسِن  (NFUM) اَور سنگل اصل کی دواؤں پر 298 مونوگراف سَمیت یونانی فارماکوپِیا آف اِنڈِیا (UPI) کے چھے حصہ اَور 50 مرکب نسخوں کے یونانی فارماکوپِیا آف اِنڈِیا، حصہ II، والیوم I شائع کئے گئے ہیں۔

دوائی  تجربہ گاہ

د فارمیکوپِال لیبوریٹری  فار انڈین میڈِسِن (پی ایل آئی ایم) غازی آباد، سال 1970 میں قائم شُدہ دوا کا آیوروید، یونانی اَور عالم غیب طبی نظام کے لئے معیار صنعت کم دوا جائزہ تجربہ گاہ ہے اَور قَومی سطح پر دوا اَور سولہ سنگار سامان ایکٹ 1940 کے تحت قانون کے دائرے میں شامِل ہے۔ تجربہ گاہ کے ذریعے تیار اعداد شمار آیوروید، یونانی اَور عالم غیب سے منسلک دوا کمیٹیوں کی حمایت کے بعد حسب ترتیب آیوروید، یونانی اَور عالم غیب طبی نظام کی دواؤں میں شائع کئے جاتے ہیں۔

یونانی میں تحقیق

  • مسیح ال ملک حکیم اجمل خان نے بنیادی طور پر دوا کی یونانی نظام میں 1920 کی دہائی میں تحقیق کے نظریہ تیار کی۔ اپنے وقت کی ایک ہمہ گیر صلاحیت، حکیم اجمل خان نے بہت جلدہی تحقِیق‌کی اہمیت کو تجربہ کیا اَور اُن کی متجسس قدرت نے ڈاکٹر  سلیم از زماں صدیقی، جو آیورویدی اَور یونانی طبیہ کالج، دِلّی میں تحقیقی کام میں لگے تھے، اُن کو دیکھا۔
  • ڈاکٹر  صدیقی کے پودوں کی دوائی خوبی کی کھوج، جِس کو عام  طور پر اسرول (پاگل بوٹی) کہا جاتا ہے، نے مسلسل تحقیق کو بنائے رکھا جِس نے اِس پودے کی چھِدْرا اثر انگیزی  کو قائم کیا، جِس کو دنیا بھر میں نیوروویسکُلر اَور نبض خرابیوں جیسے بُلند فشارخون، پاگل پن، ہِسٹیرِیا، بےخوابی اَور دماغی حالات کے لئے مانا جاتا ہے۔ 1969 میں مرکزی کونسل حکومتِ حند کی تحفظ میں، دیسی دوائی پر یونانی دواؤں سَمیت دیسی نظام میں منظم تحقیقی آغاز کیا گیا۔
  • ہندوستانی طبی اَور ہومیوپیتھی (CCRIMH) میں تحقیق کے لئے یونانی طبی میں تقریباً ایک دہائی تَک تحقیقی سرگرمیاں اِس کونسل کی تحفظ میں کی گئیں۔ سال 1978 میں، CCRIMH کو چار الگ تحقیقی کونسلوں میں تقسیم کی گئی تھی، آیوروید اَور عالم غیب، یونانی دوا، ہومیوپیتھی، یوگ اَور قدرتی علاج۔ہرایک کے لئے ایک۔

مرکزی یونانی طبی تحقیقی کونسل

یونانی طبی تحقیق کے لئے مرکزی کونسل نے جنوری 1979 سے صحت اَور وزرات خاندانی فلاح و بہبود، حکومتِ حند کے ایک خود مختاری تنظیم کے طور پر  آزادانہ طورپر کام کرنا شروع کر دیا۔ زیادہ معلومات کے لئے : www.ccrum.net پر جائیں۔

یونانی ہسپتال اَور دواخانہ

یونانی دوا کے  نظام عام عوام کے درمیان کافی مقبولِ عام ہے۔ یونانی علاج کے ملک بھر میں بِکھئے ہوئے معالج، قَومی صحتی دیکھ بھال تقسیمی ساخت کا ایک غیرمنقسم حصہ ہیں۔ سرکاری میسّر اعداد و شمار کے مُطابق، ملک میں 47،963 نامزد یونانی معالج ہیں۔ فی الحال 15 ریاستوں میں یونانی ہسپتال ہیں۔ ملک کے مختلف ریاستوں میں کام کر رہے ہسپتالوں کی کُل تعداد 263 ہے۔ اِن تمام ہسپتالوں میں کُل بستروں کی تعداد 4686 ہے۔ ملک میں بیس ریاستوں میں یونانی دواخانہ ہیں۔ یونانی دواخانوں کی کُل تعداد 1028 ہے۔ اس کے علاوہ، دس دواخانہ آندھر پردیش میں دو، اُتّر پرَدیش، کَرناٹَک اَور جنوبی بنگال ہر ایک  میں ایک اور دِلّی میں پانچ دواخانہ مرکزی حکومت کی صحتی اسکیم (سی جی ایچ ایس) کے تحت کام کر رہے ہیں۔

یونانی میں تعلیم

دوا کی یونانی نظام میں تعلیم اَور تربیت سہولیات کی فی الحال نگرانی ہندوستانی مرکزی طبی کونسل کے ذریعے کی جا رہی ہے، جو ہندوستانی مرکزی طبی کونسل ایکٹ 1970 کے طور پر جانے جاتے قانون سازمجلس کے ایک ایکٹ کے ذریعے قائم شُدہ ایک آئینی ادارہ  ہے۔ فی الحال، ملک میں 40 تسلیم شدہ یونانی طبی کالج ہیں، جو اِس نظام میں تعلیم اَور تربیتی سہولیات فراہم کر رہے ہیں۔ اِن کالجوں میں گریجویٹ نصابوں کے لئے ہر سال تمام 1770 طالب علموں کے داخلہ کی صلاحیت ہے۔ وہ یا تو سرکاری ادارے ہیں یا رضاکارانہ تنظیمات کے ذریعے قائم  کئے گئے ہیں۔ یہ تمام تعلیمی ادارہ مختلف یونیورسٹیوں سے منسلک ہیں۔ ہندوستانی مرکزی طبی کونسل کے ذریعے مقررہ نصاب کا اِن اداروں کے ذریعے تقلید کیا جاتا ہے۔ علم الادویہ (فارمیکولاجی)، معالجات (دوا)، کُلِّیت (بُنِیادی اصول)، حفظان صحت (ہائجِن)، جرّاحیت (سرجری)، تحفظی یا سماجی طب، امراض اتفل اَور قبلہ اَور امراض نِسواں (عورت مرض) موضوعات میں پوسٹ گریجوئیشن تعلیم اَور تحقیقی سہولیات میسّر ہیں۔ اِن نصابوں کے لئے کُل داخلہ صلاحیت 79 ہے۔

نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف یونانی میڈِسِن، بینگلور

قَومی یونانی طبی ادارہ، بنگلؤر 19 نومبر 1984 کو سوسایٹی نامزدگی قانون کے تحت یونانی طبی نظام خرابی اَور تشہیر کے لئے افضلیت کا ایک مرکز تیار کرنے کے لئے نامزد کیا گیا۔ N. I۔ U. M. حکومتِ حند اَور کَرناٹَک کی ریاستی حکومت کا ایک مشترکہ ادیم ہے۔ یہ راجیو گاندھی صحتی سائنس یونیورسٹی۔-بنگلؤر، کَرناٹَک کے ساتھ تعلق ہے۔ زیادہ معلومات کے لئے ویب سائٹ : www۔ nium۔ پرجائیں

متعلقہ ماخذ

  1. یونانی میں گھریلو نسخے
  2. آیوش تحقیقی پورٹل
  3. آیوش محکمہ، صحت اَور وزرات خاندانی فلاح و بہبود، حکومتِ حند
4.66666666667
اپنی تجاویز ارسال کریں (اگر مذکورہ بالا مواد پر آپ کو کوئی تبصرہ/تجویز دینی ہو تو براہ کرم یہاں درج کریں))
Enter the word
Back to top