ہوم / صحت / آیوش / مقامی جڑی بوٹی اور ہماری صحت
شیئر
Views
  • صوبہ Review in Process

مقامی جڑی بوٹی اور ہماری صحت

اس حصے میں، قدرتی ادویات کے تحت مقامی جڑی بوٹیوں کے علاج اور ہمارے صحت کے فوائد کی اہمیت واضح کی گئی ہے-

بیماریوں کی شناخت، علاج اور احتیاطی تدابیر

  1. لیوکوری (سفید پانی آنا /اسہال مخاطی) (Leucorrhoea)

پہچان :

  • کمر میں درد
  • پیٹ
  • شروع میں سفید پانی بعدمیں دہی جیسا گاڈھی رطوبت
  • بدبودار اور پیپ جیسی رطوبت
  • کبھی کبھی  شرمگاہ کے   راستے سے ہرا، پیلا خون شامل رطوبت
  • کبھی کبھی رطوبت کے ساتھ جلن
  • کمزوری محسوس ہونا

علاج :

  1. گھرتکماری / گھیکنور (aloe-barbadenis) گڑ یا مصری کے ساتھ خالی پیٹ لیں۔ M

خوراک : 1 چمچ 5-10 دنوں کے لئے، اگر حالت میں اصلاح نہ ہو تو اس کو جاری رکھیں۔ ایک ہفتہ یا دس دن کے مدت پر، یہ علاج 1-2 مہینے تک جاری رکھ سکتے ہیں ضرورتاً۔

  1. اڑهل (hibicus rosasinensis-shoe flower) کی ٹانک لیں (تدبیر دیکھیں صحت مند ٹانک)
  2. اشوک (saraca-indica-ashoka-tree) کا 60 گرام چھال کو 1 لیٹر پانی میں ابال‌کر 250 ملی لیٹرتک کر لیں.

خوراک : چاربار 1-2 چمچ روزانہ لیں، 1-2 مہینے تک۔

  1. سیمل (Bomabax-malabaricum-Silk cotton) کی چھال-200 گرام، پلاس (Butena fondosa-palas) کی چھال-200 گرام، ستاور (Asparagus recemosus) کی جڑ (مولکند)-200 گرام، سبھی کو برابر  لےکر کوٹ-پسكر چھان_کر سفوف کو کانچ کی شیشی میں بھر‌کر رکھ لیں۔ اس سفوف کو 1-2 چمچ ٹھنڈے پانی یا چاول کے پانی، یا گوندھ (ٹھنڈا) کے ساتھ 15-20 دن تک صبح شام لیں۔
  2. ستاور (Asparagus Racemosus) کی تازی کندمول یا سوکھی جڑو کا سفوف 5-10 گرام بطورذائقہ زیرہ کے سفوف کے ساتھ 1 کپ دودھ میں صبح خالی پیٹ میں پلانے سے کمزوری اور کشیدگی سے ہونے والی لکوریا رحم سے سفید پانی گرنا 2-3 ہفتے میں ٹھیک ہو جاتی ہے۔
  3. برہمی، بینگ ساگ (Centella asiatica) کا سفوف دو چھوٹی چمچ یا اس کا رس 1-2 چائے کا چمچ دن میں دو بار مصری کے ساتھ 15-20 دن تک دیں۔
  4. ارہر (Canjanus cajan) کے پتوں کا رس (بنا پانی ملائے) ایک چمچ دن میں دو بار 12-15 دن تک دیں۔ یا ارہر کا عرق، سیندھا نمک میں مل‌کر دن میں ایک بار 30 دنوں تک دیں۔


نوٹ : دھرتکماری کے گچّھا کا استعمال کرنے سے پہلے اس کی کانٹوں کو صاف کر لیں، یہ زہریلا ہے۔
تیل، کھٹائی، مسالہ، ٹماٹر، گرمی پیدا کرنے والے کھانے اور قبض سے متعلق کھانے کی چیزوں کا استعمال نہ کریں.

  1. تکلیف دہ ماہواری رطوبت (Dysmenrrhoea)

پہچان :

  • ماہانہ خارج ہونے والے مادہ کے پہلے اور بعد میں درد
  • کمر، پیڈو پر درد

علاج

  • اڑهل پھول کی ٹانک (تدبیر دیکھیں-صحت مند ٹانک)
  • مالکانگنی یا کجری (Celastrus paniculata) کے کومل پتوں کو ساگ کی طرح کاٹ‌کر سرسوں ساگ میں پکا لیں۔ 1 چائے چمچ کی مقدار دن میں دو بار 15-20 دنوں تک دیں۔
  • 4 چمچ پیسا ہوا دوب گھاس (Cynodon dactylon) ایک گلاس پانی میں، ایک چمچ عروا چاول کے آٹا اور مصری کے ساتھ شربت جیسا گھول‌کر دن میں 1بار 12-15 دنوں تک دیں۔
  • ہڈجورا (Vitis quadranaularis) کے تنے کا سفوف آدھا چمچ ایک چمچ شہد یا گڑ کے ساتھ دن میں ایک بار 12-15 دنوں تک دیں۔
  • گرم اور ٹھنڈے پانی کی سینک-تولئیے کو گرم پانی میں میں ڈبوکر عرق النساء میں سینک دیں پھر ٹھنڈے پانی میں ڈبوکر دوبارہ لپیٹیں۔ یہ عمل گرم-ٹھنڈ اپانی کا عدل-بدل کرن ا ہوگا۔
  • ترپھلا کے سفوف میں ہرّا (Terminalia chebula)، بہیڑا (Terminalia belerica) اور آنولا (phyllanthus embilica) کے پھلوں کا سفوف برابر مقدار میں ملایا جاتا ہے. ایک-چوتھائی عکون (Calotropis gigantea) سفوف ملا دیں۔ اس سفوف کو دن میں دو بار، ایک ایک چوٹکی تھوڑا شہد یا پرانے گڑ کے ساتھ دیں۔


نوٹ : علاج کے دوران گوشت، مچھلی، انڈا، گرم مسالہ، لال کالی مرچ، املی، کچّے آم کی کھٹائی، چٹنی، اچار سے پرہیز کریں. اس کا علاج حیض شروع ہونے کے کچھ دن پہلے شروع کریں.

  1. عرش بواسیر (Piles، Hemorrhois)

پہچان :

  • مقعد نالی کے چمڑا اور بلغم  کے ٹھیک نیچے نبضوں کی ترقی *۔
  • مقعد راستے پر سوجن
  • پاخانہ کے ساتھ خون کا باہر آنا
  • علاج کی کمی سے خون کمی کا ہونا

علاج :

  1. کٹی * غسل لیں۔ 20 منٹ کے لئے سشم پانی میں جس میں نیم کی پتّیوں اور ہلدی کو ابالا گیا ہو۔ پانی میں بیٹھنے سے پہلے تھوڑا-سا نمک پانی میں ڈال لیں۔
  2. گھرتکماری (Aloe-barbadenis) کے گچّھےدار پتے کو ایک چامچ میں گڑ (پرانا) کے ساتھ صبح خالی پیٹ میں لیں۔
  3. لال چندن کی لکڑی اور چھوئی_موئی (تدبیر دیکھیں) (Mimosa pudica) کا پیسٹ متاثر حصے میں لگائیں۔ (اوپر دئے گئے استعمال کو کم سے کم 7 دن تک کریں)
  4. بڑی چکوڑ (Cassia fistula) کے سات پتے، پانچ گول مرچ کے ساتھ شربت بناکر صبح-شام 1-15 تک دیں۔
  5. اگر  بواسیر ابتدائی دنوں میں ہو تو املی کی پتّیوں کو چبانا کافی ہے اور ا س کے رس کو نگل جائیں، صبح خالی پیٹ، کچھ دنوں تک۔


نوٹ : بواسیر سے متاثر آدمی قبضیت سے بچنے کے لئے پانی زیادہ مقدار میں پیئیں۔ چکن اور انڈا بواسیر کے لئے بہت شدیدنقصان ہے۔

  1. سوکھی بیماری

پہچان

  • پیٹ باہر کی طرف نکل آتا ہے
  • جسم سوکھنے لگتا ہے
  • بچّا بلاوجہ روتا ہے
  • کمر پتلی ہوتی جاتی ہے
  • پتلا دست آنا
  • کولہوں سكھنا اور جلد میں جھرریاں پڑ جاتی ہے
  • بیچینی اور چڑچڑاپن

علاج : (انڈا چڑھانا)

کمبل کے ٹکڑے پر مقامی مرغی کا تازہ انڈے پھوڑكر رکھ دیں. متاثر بچے کو ننگا کرکے اس پر بٹھا دیں۔ مقعد میں سوراخ سے انڈا مادہ بڑے رفتار سے بچے کے اندر کھنچ جائے‌گا۔ جب تک بچہ مکمّل صحت مند نہ ہو تب تک روزانہ 1 انڈا اسی تدبیر سے چڑھاتے رہیں۔ تقریبا 1 ماہ میں خشک بیماری اچھی ہو جاتی ہے. بیماری ختم ہونے پر بچے کے مقعد راستے سے انڈا چڑھانا خود بند ہو جاتا ہے۔ یہ تدبیر بیماری کے علاج کے ساتھ-ساتھ اس کے جائزے کی تدبیر کا طریقہ  بھی ہے۔
نوٹ : بچے کو صاف ہوا  اور سورج کی دھوپ لینا چاہئیے۔ دودھ، انڈے، گوشت اور پھل کا رس کھانا کھلانے سے خشک بیماری سے بچا جاسکتا ہے-

  1. دمہ (Asthma)

پہچان :

  • وقت- وقت پر سانس کی گھٹن
  • ہانپنی اور بےچینی
  • کبھی کبھی لگاتار کھانسی
  • سانس لینے پر سینہ میں بار- بار کی آواز
  • تیز دورہ پڑنے پر مریض بےہوش بھی ہو سکتا ہے

علاج :

اڈوسا (Adhatoda vasica) کا پتا اور ڈنٹھل 1 کلو، بھٹکٹیّیا * یا رینگنی (Solanum xanthocarpum) 250 گرام کے چھوٹے-چھوٹے حصے کرکے ایک بھگونے میں 8 گنا پانی کے ساتھ دھیمے آنچ پر رکھ دیں۔ جب ایک چوتھائی مقدار باقی رہ جائے تب بھگونے کو آنچ سے اتار‌کرمرکب کو چھان_كر رکھ دیں. چھاننے کے بعد اگر گڑ ملانا ہو تو گڑ ملاکر دوبارہ گرم کریں جس سے گڑ اچھی طرح گھل جائے۔ اگر گڑ‌کی جگہ  پر شہد ملائیں۔ (دی گئی مقدار میں-گڑ یا شہد 300 گرام) اگر چاہے تو اس میں کشمش، چھوہارا ڈال‌کر استعمال کریں۔
خوراک : 1-2 چائے چمچ صبح شام لیں۔ اس دوا کے استعمال کے بعد کم سے کم 1 گھنٹہ کچھ نہ کھائیں۔
مکمل چاند میں کھیر بناکر دمہ بیماری میں استعمال کرنے کی بات بھی کی جاتی ہے۔ کہا جاتا ہے دھل‌_كے الرجی میں یہ دوا منافع بخش ہے۔ ارجن (Terminalia) کے تنے کی چھال لےکر اس کا سفوف بنا لیں۔
مکمل چاند کی شام کو 50-100 گرام گائے کے دودھ سے کھیر بنائیں، اس میں میوہ بھی بطورذائقہ ڈال سکتے ہیں۔ کھیر کو رات بھر ایسی جگہ پر رکھیں جہاں رات بھر چاندنی پڑتی ہو۔ بلی، کتے سے بچائیں۔ صبح طلوع آفتاب کے ثابق اس میں 1 چمچ ارجن کا سفوف ملاکر پوری کھیر رکھ لیں۔
نوٹ : 10 یا 11 بجے دورہ پڑ سکتا ہے لیکن گھبرائیں نہیں۔ اگر ایک بار میں بیماری پوری طرح اچھی نہیں ہوئی تو دوسرےماہ کامل مکمل چاند کی شام کو دہرائیں۔
احتیاط : تمباکو، شراب، تیل، کھٹائی سے پرہیز کریں۔ قبض اور بدہضمی سے بچیں۔ دمہ کے مریض کو پرسکون اور فکرسے آزاد رکھنے کی کوشش کرنی چاہئیے۔ روزانہ یوگا فائدہ مند ہوگا. سونے سے پہلے کوشش کریں پیٹ خالی ہو اس کےسبب رات کو-کھانا ہو سکے تو جلد کریں۔

  1. تپ دق (Tuberculosis) (پھیپھیڑے کا)

پہچان :

  • (ابتدائی دنوں میں)
  • لگاتار کھانسی
  • ہلکا بخار دوپہر میں اور رات میں بےچینی
  • سینہ میں یا اوپری حصے میں درد
  • وزن میں گراوٹ
  • کمزوری کا بڑھنا

(بعدکے دنوں میں)

  • کھانسی کا دورہ
  • سست چہرہ
  • آواز میں سختی

علاج :

  • انڈا اور لیمو کی ٹانک (دیکھیں-صحت مند ٹانک)
  • کٹھل کی ٹانک (دیکھیں-صحت مند ٹانک)
  • آڈوسا کے پتے اور ٹہنیوں (1 کلو) کو چھوٹے-چھوٹے ٹکڑے کر اچھی طرح صاف کرلیں 16 لیٹر پانی میں ابالیں، جب پانی 1 لیٹر رہ جائے تو اس کو اتار‌کر چھان لیں۔ اس چھنے ہوئے کاڑھے میں 1 کلو چینی یا گڑ ملاکر اس کی چاشنی بنائیں، دوبارہ چاشنی میں 125 گرام گھی ڈالیں۔ جب وہ گاڑھا ہو جائے تو اس میں چھوٹی پیپل کا 125 گرام سفوف ملاکر کسی صاف شیشہ کی بوتل میں رکھیں۔ اس کو ٹی بی کے علاوہ کھانسی، سانس کی تکلیف میں بھی استعمال کر سکتے ہیں۔


خوراک : بچّے-1 چمچ دن میں دو بار
بالغ-2 چمچ دن میں 3بار
اس کا استعمال گرم دودھ یا گنگنے پانی سے کرنا چاہئیے

  1. ایک انڈا (دیشی مرغی) کو 3/4 دودھ کی گلاس میں اچھی طرح پھیٹیں اور 2 چمچ دارچینی (Cinnamon cassia) کا کاڑھا میلائیں۔ (دارچینی کا کاڑھا بنانے لئے 250 گرام دارچینی کی چھال کو 3 لیٹر پانی میں ابالیں جب تک 1 لیٹر نہ ہو جائے، تب اس میں چٹکی بھر نمک ڈال‌کر بوتل میں رکھ لیں)
  2. 3 بوندیں مالکانگنی یا کجری (Celastrus paniculata) تیل کو دیشی مرغی کے انڈا کی سفیدی میں ملاکر صبح خالی پیٹ 48 دنوں تک لیں۔
  3. اس کے ساتھ طاقت بڑھانے کے لئے لیمو-انڈا ٹانک یا کٹھل ٹانک بھی لیں (دیکھیں صحت مند ٹانک)

تپ دق (ٹی۔ بی۔) میں طاقت کے لئے :

رات میں صاف سوکھا مہوا (Maduka indica) پھول مٹھی بھر لےکر 1 گلاس پانی میں بھگو لیں، صبح اس پانی کو دیں پھر دوبارہ اسی مہوا میں پانی بھر‌کر شام میں پینے کو دیں۔ روزانہ رات میں مہوا پھول بدل دیں۔


خوراک : 1-1 گلاس صبح شام 2 مہینے تک۔
تازہ مہوا پھول لےکر بويام میں بھریں اور 1 بڑا چمچ چینی ڈال‌کر 30 دن دھوپ دکھائیں۔
خوراک : 2 چائے چمچ 2-3بار 2 مہینے تک۔

سوکھا صاف مہوا کا پھول بويام میں بھر دیں۔ اس میں آدھا پانی اور مٹّی بھر چینی ڈال دیں اور 1 ماہ تک دھوپ دکھائیں۔ رس نچوڑ‌کر چھان لیں، رس جتنا پرانا ہوگا اتنا ہی فائدہ مند ہوگا۔


خوراک : 1/2 کپ صبح شام، 1 سال کے بعد دن میں صرف ایک بار ہی دیں۔
نوٹ: اوپر دیے گئے اقدامات کو طاقت میں اضافے كے_لے دینا ضروری ہے چونکہ اس بیماری میں آدمی بہت کمزور ہو جاتا ہے۔

ٹی۔ بی۔ کے مریض کو زیادہ  توانائی پروٹین اور وٹامن کھانے کی ضرورت ہوتی ہے۔ مریض کے لئے سوکھی سرلا (کٹائی) ساگ، پیچکی ساگ چھوٹا چاکوڈ (cassia tora) دینا فائدہ مند ہے۔ کھپرا ساگ (Boerhavia diffusa) اور گولگولا ساگ دینا چاہئیے، اس میں لوہےکی مقدار زیادہ رہتی ہے، یہ خون کو بڑھاتا ہے۔ چرائگوڈوا (Vitex peduncularis) کے پتّوں یا چھالوں کی چائے بھی خون میں نشو ونما اور صاف کرتی ہے۔ اس کے علاوہ گوشت، مچھلی، انڈا، کبوتر اور مرغے کا گوشت دینا چاہئیے۔


پرہیز : خنزیر، بھیڑ گوشت، چنگڑی مچھلی، آم، املی اور ان سے بنی چٹنی، لال کالی مرچ زیادہ گھی، تیل، چربی، گرم مسالہ نہ لیں۔ شراب سے مکمل پرہیز کرنا ہے نہی تو دوا زہر کی شکل لے سکتی ہے۔

  1. بلڈ پریشر (Blood pressure)


کم بلڈ پریشر (Low Blood Pressure)

پہچان :

  • کمزوری لگنا
  • چکر آنا
  • آنکھوں کے سامنے اندھیرا چھا جانا
  • کبھی کبھی گردن میں درد وغیرہ

علاج :

 

  • چرائگوڈوا (Vitex peduncularis) کے پتوں کی چائے 1 کپ دن میں دو (صبح شام) دیں 10-12 دنوں تک۔
  • رات میں سونے سے پہلے ایک انڈا اور دودھ لیں
  • پننروا یا کھپرا ساگ (Boerhavia diffusa) کا سوپ دن میں دو بار لیں 10-12 دنوں تک۔
  •  

    1. ہائی بلڈ پریشر (High blood pressure)

    پہچان :

    • سر درد، سر میں بھاری پن محسوس ہونا
    • دل کا دھڑکنا
    • تھکان
    • کبھی کبھی کندھے کی بائیں طرف سینہ میں درد
    • سانس لینے کے لئے کوشش کرنا

    علاج :

    1. سہجن / منگا (Moringa oleifera) کے پیلے یا پکے پتّو ں کا رس گڑ کے ساتھ پاک بناکر رکھیں۔ صبح خالی پیٹ میں 1-1 چمچ سات دنوں تک لیں
    2. یا
    3. سہجن کے پکے پتّوں کارس 1 چمچ صبح اور 1 چمچ شام کو دیں جب تک بلڈ پریشر معمول نہ ہو جائے۔
    4. یا
    5. سہجن کے پتوں کا سوپ تیار (مٹّی بھر پتّی) دن میں دو بار لیں۔
    6. چھوٹی کریلی (Momordica charantia) کو مسل‌کر 1 گلاس پانی میں بھگوکر رکھیں، صبح خالی پیٹ پانی کو پیئیں۔
    7. لہسن کے کچھ جوا (Clove) کو شہد میں 40 دنوں تک رکھیں۔ صبح خالی پیٹ میں 2 جوا کھائیں۔
    8. 250 گرام لہسن اور 250 گرام ادرک کو چھوٹے-چھوٹے ٹکڑوں میں کاٹ لیں۔ اس کو 1 کلو پرانے گڑ میں پاک تیار کر لیں اور شیشہ کے صاف بويام میں رکھ‌کر 21 دنوں تک رکھیں۔


    خوراک : 1 چمچ صبح شام لیں۔ اس کے ساتھ کریلا (Momordica charantia) یا نیم (Azadirachta indica) یا (Andrographis paniculata) کا عرق لیں۔
    نوٹ : دواؤں کے استعمال کے ساتھ دماغی اور جسمانی سرگرمیوں میں قابو رکھنا بھی ضروری ہے۔ فکر اور گھبراہٹ سے بچیں،ہائی بلڈ پریشر میں نمک کی مقدار کم کریں۔ زیادہ چربی والے کھانا، مٹھائی *، سٹارچ یا پیچ پر مشتمل کھانے سے بچیں۔ باقاعدگی سے ورزش کرنے سے کیفیت میں بہتری کی جا سکتی ہے.

    1. یرقان (Jaundice) :

    پہچان :

    • آنکھوں کا پیلاپن اور سست ہو جانا
    • بخار آنا، الٹی آنا
    • کھانے سے بو آنا جس سے الٹی ہو سکتی ہے
    • پیشاب میں پیلاپن
    • کبھی کبھی ناف کے اوپری حصہ، داہنی طرف درد ہونا
    • قبض کی شکایت رہتی ہے

    علاج

    1. بھئی آنولا (Phyllanthus niruri) کی ٹانک (دیکھیں-صحت مند ٹانک)
    2. بھئی آنولا (Phyllanthus niruri) کی جنتری کو اچھی طرح صاف کر اس میں مصری اور بطورذائقہ زیرہ ملاکر پیس‌کر صبح پیئیں، 5-7 دنوں تک۔
    3. برامہی (Centella asiatica) کی جنتری اور مصری ملاکر صبح شام لیں 1 گلاس 5-7 دنوں تک۔
    4. ایرنڈی (Ricinus communis) کے کومل پتوں کا عرق مصری کے ساتھ صبح خالی پیٹ 1 کپ لیں 5-7 دنوں تک۔
    5. کرہینی چاول کا ماڑی (ہنڈیا) میں 1 گلاس پانی ڈال دیں۔1 گھنٹہ بعد پانی کو نکال دیں، اس کو مریض کو نہ دیں۔ اس کے بعد 1 گلاس پانی ڈالیں۔ دوبارہ 1 گھنٹہ کے بعد اس کو چھان‌کر مریض کو پلائیں۔ دن میں 3بار صبح-دوپہر-شام کے کھانے کا آدھا گھنٹہ پہلے مریض کو 5-7 دنوں تک دیں۔ عام طور پر 3 دنوں کے فرق پر بنایا ہوا 1-1 کلو چاول کا گوندھی (ہنڈیا) 1 کورس کے لئے کافی ہوتا ہے مہندی کا پتا اور بھئی آنولے برابر مقدار میں لیں اور انار پھل‌کے چھلکے کو دو گلاس پانی میں ابالیں جب تک یہ 1 گلاس نہ ہو جائے۔


    مقدار : 1 گلاس دن میں ایک بار، خالی پیٹ صبح میں لیں 3 دنوں تک۔
    نوٹ :دوائیں لینے کے دوران نمک سے پرہیز کریں۔ چربی والے غذائی مادہ تیل کم سے کم 2 مہینے تک استعمال نہ کریں۔ گنّا کا رس، پھلوں کا رس، گلوکوس، دہی، مریض کھا سکتا ہے۔ تازی-ہرا ساگ-سبزی ابال‌کر مریض کو دیں۔

    1. ملیریا (Maleria)

    پہچان :

    • جاڑےکے ساتھ بخار ہونا
    • سر-درد
    • بخار پسینہ کے ساتھ اترتا ہے
    • کمزوری
    • وقفہ وقفہ سے بخار آنا

    علاج :

    1. میٹھی گھانس (Scoparia dulcis) کا پنچاڈگ *، پٹھا (Cissampelos pareira) کی جڑ اور چرچٹی (Achyranthes aspera) کی جڑ برابر مقدار میں پیس‌کر پانی میں گھولیں۔


    خوراک : آدھا-آدھا کپ دن میں 3بار، 10-12 دنوں تک دیں۔

    1. چرئیتا (Andrographis paniculata) کا پنچاڈگ * پانی کے ساتھ پیس‌کر کاڑھا آدھا کپ دن میں 2بار دیں، 10-12 دنوں تک۔
    2. چرائگوڈوا یا سمکارا (Vitex peduncularis) کے پتوں یا چھال کا کاڑھا 1 کپ دن میں 2بار 10-12 دنوں تک دیں۔
    3. بھئنیم / کالمیگھ (Andrographis paniculata) 30-35 گرام 1 گلاس پانی میں ابال‌کر 1/2 کریں۔


    خوراک ؛ 1 کپ دن میں 2بار 1 مہینے تک دیں۔1 کپ دن میں 1بار، دوسرے مہینے میں اور 1 دن کےدرمیان پر 1 کپ تیسرے ہفتے میں دیں۔

    1. سندوار / شیت منجری (Vitex negundo) 100 گرام، کالی مرچ 10 گرام، گڑ-100 گرام سبھی کو آدھے لیٹر پانی میں ابالیں جب تک کہ وہ ایک چوتھائی نہ ہو جائے۔ خوراک : 1 کپ دن میں دو بار۔
    2. نیم (Azadirachta indica) کے پتے اور چھال ملیریا کے لئے بہت موثر  ہے یہ رس اور کاڑھا دونوں شکل میں لے سکتے ہے۔


    خوراک : رس-1 چمچ اور کاڑھا-1 کپ دن میں 3بار، اس کو 5 دنوں تک لیں۔

    طویل مدتی ملیریا (Choronic maleria)

      >
    1. ایک چمچ کالی مرچ کو 2 گلاس پانی میں ڈال‌کر ابالیں جب تک کی یہ آدھی نہ ہو جائے۔ تیار ہونے کے بعد 12 گھنٹے چھوڑ دیں (شام میں تیار کر رات بھر رہنے دیں)، صبح اس کو چھان‌کر پیئیں۔ دوسری خوراک صبح میں تیار کریں اور شام میں لیں۔ صرف 2 خوراک ہی لیں۔ اس خوراک کو لینے پر کبھی کبھی مریض تھکان اور کمزوری محسوس کرتا ہے۔ لیکن یہ کچھ وقت بعد صحیح ہو جاتا ہے۔ کمزوری کے لئے دودھ لے سکتے ہیں۔ لیکن السر اور پیپٹیک والے مریض اس کاڑھا کو نہیں لے سکتے ہیں۔


    نوٹ : اگر بیماری کا علاج جلد نہیں کیا گیا تو مریض خون کی کمی،جگر کی بیماری کا شکار ہو جاتا ہے۔ ملیریا کی بیماری کی وجہ سے، اس وجہ سے  بڑھ ہو گئی ہو تو چرچٹی (Achyranthes aspera) کی جڑ پیس‌کر مٹر کے برابر گولی پپّلی (Piper longum) کے پھل کے ساتھ دن میں 2بار 7-10 دنوں تک دیں۔
    روک تھام کے لئے چراگوڈوا کی چائے کی طرح لیں تو بہتر ہے۔ بلند اور کم بلڈ پریشر  کی روک تھام کے ساتھ کینسر کی دوابھی ہو سکتی ہے

    1. میعادی بخار / ٹائیفائڈ (Typhoid)

    پہچان :

    • ٹھنڈ اور فلو سے شروعات
    • 3-4 دن کے بعد سردرد، کاہلی، بےچینی، نیند نہ آنا اور بخار
    • پیٹ کے نچلے حصے میں دبانے سے درد
    • کبھی کبھی مریض کو الٹی، ڈائریا یا قبض  کی بھی  شکایت ہوتی ہے

    علاج :


    چناکو بھن‌کر سفوف تیار کریں، اسی برابر مقدار میں بارلی (جوار سفوف) اور باجرا کا سفوف لیں، سبھی کو ملا لیں اور 1 چمچ لیں شہد یا گڑ کے ساتھ۔

    خوراک : 1 چمچ دن میں 3بار


    ببول درخت (Acacia arabica) کی چھال (60 گرام) کو 2 گلاس پانی میں تب تک ابالیں جب تک آدھی نا ہو جائے۔

    خوراک : 1 کپ، 3 گولمرچ کے پاؤڈر کے ساتھ دن میں 3بار کھانے سے پہلے، 3 دن تک۔


    میٹھی گھانس (Scoparia dulcis) کا پنچاڈگ، 9 گولمرچ، پیپل (Ficus Religiosa) کے سات پتے، بانس (Bambusa spp) کے پتے اور مصری ملاکر مرکب بنائیں۔

    خوراک : 2 چائے چمچ صبح شام


    امرود (Psidium guyava) سات پھول مسلیں اور اس کو 1 کپ بکری کے دودھ (بنا ابالے) میں ملاکر خالی پیٹ میں تین بار دیں۔ (صرف 3 خوراک دینی ہے۔ )

    جسم پر ملیں :

    1. پرانی ڈوری (Bassia latifolia) کا تیل لگانے کے بعد جسم پر ڈوری اورارنڈی کا تیل ملاکر ملیں۔
    2. شہدکا رس اور کاغذی لیمو کا رس ملاکر کھوپڑی کے نرم حصے پر لگائیں۔
    3. گائے کا گھی اور شہدکا رس ملاکر ناف میں لگائیں۔


    نوٹ : ٹائیفائڈ کا صحیح علاج نہیں ہونے سے زیادہ دن ہونے پر پھوڑا ہو جا سکتا ہے۔ یہ بڑھنے پر سوراخ میں بدل جا سکتا ہے۔ اور مریض کو خطرہ بڑھ جاتا ہے۔ کھانے میں گیلا چاول، سابودانہ، دلیہ دیں۔ خوردنی اشیا کے لئے ڈاکٹر سے صلاح ضروری ہے۔ چونکہ اس بخار میں پیچیدگی کے آنے کے امکانات ہمیشہ بنے رہتے ہے۔

    1. ذیابطیس (Diabetes)

    پہچان

      1. زیادہ پیاس لگنا / منہ سوکھنا
      • بار بار پیشاب کرنا
      • پیشاب میں چینی آنا
      • کمزوری / تھکان
      • زیادہ بھوک
      • زیادہ نیند لگنا
      • زیادہ پسینہ آنا
      • وزن میں کمی نظر میں رکاوٹ وغیرہ
      <

      علاج :


      (ک) سادہ ذیابیطس (Excessive urination)
      املی (Tamarindus indica) کے بیجوں کو پانی میں بھگاکر اوپر کا چھلکا نکل لیں۔ دوبارہ اس کو سوکھا کر سفوف بنا لیں۔
      خوراک : 2-2 چھوٹی چائے کا چمچ لیں ٹھنڈے دودھ کے ساتھ 10-15 دن
      ہرّا (Terminalia chebula) کے پھل‌کےاوپری چھلکا کا مرکب 8 گنا پانی میں تب تک تیار کریں جب تک کی چوتھائی نہ ہو جائے۔ پھر چھان‌کر پکائے جب تک گولی بنانے لائق نہ ہو جائے۔
      خوراک : 2-2 گولی دن میں 3بار 7-10 دنوں تک دیں۔
      • خشخاش 20 گرام پیس‌کر اور پرانا گڑ 20 گرام ملاکر مٹر کے برابر گولی بنا لیں۔ خوراک : 2-2 گولی دن میں 2بار 7-10 دنوں
      • تک دیں۔
      • آدھا گلاس سہجن (Moringa Oleifera) کے پتے کے عرق میں تھوڑا سا نمک ملاکر 1 چمچ دیں تھوڑی دیر کے دوران میں با قاعدہ طور پر۔
      • میتھی 30 گرام، منزل کالی مرچ 20 گرام، مصری 40 گرام 1 کپ دودھ کے ساتھ دیں۔

      (کھ) ذیابطیس (Diabetes) کے لئے
      سدا بہار (سفید پھول والا) (Catharanthus roseus) کے پودے کی جڑ سے اوپری حصے کو چھوٹے-چھوٹے ٹکڑے کر 6 گنا پانی میں ابال‌کر ایک چوتھائی کر لیں۔ اس میں 3 گول-کالی مرچ پیس‌کر ملا دیں۔
      خوراک : 2 چائے چمچ دن میں 2بار (صبح شام) 30 دنوں تک دیں۔
      لاجونتی (Mimosapudica) کی پانچ پتے لےکر چھوٹے ٹکڑے کریں۔ لگ بھگ مٹّی بھر لےکر 200 گرام چاول کے ساتھ پکائیں۔ پکنے پر پینچ پساکر صبح شام 1-1 گلاس گرم پانی کو دیں۔
      خوراک : 1 گلاس دن میں 2بار صبح شام پینے دیں 20-25 دنوں تک۔
      1 چمچ میٹھی گھانس (Scoparia dulcis) کی جنتری پیس‌کر شہد یا مصری (آدھا چمچ) ملاکر دیں۔
      خوراک : صبح شام 30 دنوں تک دیں۔ (خون شکر کے لئے بھی)
      ڈجورا / گرچ (Tinospora cordifolia) کی بیل کا رس اور پتّھرچور (Bryophyllum Pinnatum) کے پتے کا رس برابر
      مقدار میں ملائیں۔
      خوراک : 2 چائے چمچ، صبح شام، 30 دنوں تک پانی کے ساتھ دیں۔
      کٹھ جامن (Enginia operculata) یا جامن (Enginia Jambolana) پھل کا بیج سکھاکر پیس‌کر سفوف آدھا چمچ اور شہد یا پرانا گڑ آدھا چمچ ملاکر دیں۔
      خوراک : چمچ (چائے) صبح شام دیں 30 دنوں تک۔
      سدا بہار (سفید پھول والا) کا پھول 5-9 روزانہ صبح شام کھائیں / یا /دوبارہ  کے 1-10 پتے صبح روزانہ لیں۔
      نوٹ : ذیابطیس میں خوردنی اشیا اہم کردار نبھاتا ہے۔ اگر مریض ذیابیطس سے متاثر ہےتو اس کی تشخیص ضروری ہے. کاربوہائیڈریٹ والے اناج چاول، گیہوں، دال کم مقدار میں لیں۔ متغیر مٹھائیوں، آلو، شکر قند  نہ لیں۔ چائے کافی سوپ بنا میٹھا کے لے سکتے ہیں۔ گوشت، مچھلی، اور انڈا کھایا جا سکتا ہے۔ باقاعدگی سے ورزش میں توجہ دیناضروری  ہے.
      1. پتھری (Stone)

      پہچان :

      • بیچ رات میں پیٹھ میں اچانک درد شروع ہوکر
      • نیچے کی طرف بڑھتا ہے
      • کبھی کبھی یہ درد جانگھوں یا خصیہ یا اندام نہانی تک چلا جاتا ہے
      • کبھی کبھی پیشاب کے ساتھ خون کا آنا

      علاج :

      1. کلتھی کوسپبوے * کے دوری‌کرنے کے وزن کا بارہ ضرب پانی میں ابال لیں۔ جب پانی ایک چوتھائی ہو جائے تو اتار لیں۔ کھانے میں وہی ابالا ہوا کلتھی روٹی اور دال پکاکر کھانے کو دیں۔ خوراک : 1-1 کپ صبح شام 18-20 دنوں تک دیں۔
      2. پتّھرچور (Bryophyllum Pinnatum) پتّوں کا رس نچوڑے  1/2 کپ یا 1 کپ لیں۔ اس میں 3 گولمرچ پیس‌کر ملا دیں۔
      <4>خوراک : 1 یا 1/2 کپ دن میں دو بار 15-20 دنوں تک دیں
      1. میٹھا گھانس () کا عرق دودھ کے ساتھ طلوع آفتاب کے پہلے دیں۔ پانی زیادہ سے زیادہ پیئیں۔

      سہجن (Moringa Oleifera) کا 60 گرام جڑ اور چھال کا کاڑھا تیار کریں اس میں چٹکی بھر نمک اور ہینگ (Asafoetida) میلائیں۔
      خوراک : 1 کپ دن میں ایک بار۔
      سنگا قسم کی مچھلی کے سر میں چھوٹی-چھوٹی پتھر پائے جاتے ہے۔ اس پتھر کو پیس‌کر لیمو کےرس میں لینے سے گردہ کی پتھری ٹوٹ‌کر نکل جاتی ہے
      خوراک : صبح شام 5 دنوں تک لیں۔

      نوٹ : اکجالیٹ پتھری ہونے پر مریض کو ٹماٹر، ادرک، املی، مولی، پیاز، یوریک، سلاد، گیہوں، پیچ کی، کندمول، آلو سے پرہیز کرنا ہوگا۔ یوریک تیزاب پتھری میں مریض کو چائے کافی، دال، کلیجی، گوشت، گردہ، وغیرہ نہیں کھانی چاہئیے۔ اگر شامل پتھری ہو یا یقین نہیں ہو کی کون سے پتھری ہے تو اوپر دئے گئے دونوں قسم کے کھانے کی اشیاء سے پرہیز کریں۔ چھوٹاناگپور کے قبائلی بہل علاقوں میں پتھری سے بچنے کے لئے کلتھی دال اور بتخ کا گوشت کھانے کارواج ہے۔

      1. کینسر (Cancer)

      پہچان :

      • جلد کینسر میں چھوٹے-چھوٹے گھاؤ، مسّا کی شکل میں تبدیلی۔
      • گلے کے کینسر میں نگلنے، سانس لینے میں پریشانی۔
      • جبڑے اور تالو کے کینسر میں لعاب دہن میں خون، گانٹھ، پھوڑا، یا سفید داغ، منہ سے بدبو بات چیت کرنے میں پریشانی۔
      • پھیپھڑے کے کینسر میں سینے میں درد، کبھی کبھی کھانسی میں اچانک اضافہ، بلغم کے ساتھ یا بلغم کے بغیر کھانسی۔
      • بچہ دانی کینسر میں ماہانہ  اخراج کے عمل کے درمیان خون کا بہنا، اور بیشمار  اخراج، جسم کا سست ہونا، کمر اور گھٹنوں کا درد، چہرے اور گردن میں سوجن اندام نہانی میں میں گانٹھ۔
      • آنت کے کینسر میں قبض، پتلا دست، پاخانہ، عدم تعلقی، کے بعدخون کا بہناپیٹ میں درد وغیرہ۔

      علاج :

      1. 2-3 چمچ گھرتکماری (Aloe vera) کے پتے لیں، آدھا کلو شہد کا رس، چار چمچ برانڈی یا وسکی یا مہوا سے بنا شراب لیں۔
      2. گھرتکماری کے کانٹے کو اچھی طرح صاف کر لیں اور چھوٹے چھوٹے ٹکڑے کر لیں اب اس میں دی ہوئی مقدار میں شہد اور شراب ملائیں۔ آپ چاہے تو اس کو مکسی میں پسیں اور ٹھنڈے مقام میں رکھ دیں۔ دوائی تیار ہے۔

      خوراک : 1 چمچ دن میں تین بار خالی پیٹ میں لیں۔ (دوا کھانا لینے کے 15 منٹ پہلے لیں) دوا 10 دنوں تک لگاتار لیں پھر 10 دن چھوڑ‌کر اسی وقفہ میں دوا لیں۔
      نوٹ : دوا لینے کے بعد الٹی، پتلا دست، چہرے میں دانا آنا وغیرہ علامات نظر آ سکتے ہیں لیکن اس سے گھبرانا نہیں ہے۔ روٹی، چاول، ہری-سبزی، گنّا، دال، آلو، تھوڑی مقدار میں شراب (2 چمچ پانی کے ساتھ) لیں سکتے ہیں۔ ہری سبزی آدھا پکا اور ابالا ہوا دیں۔ پانی زیادہ مقدار میں پیئیں۔ دوسرے دیگر مادوں کے ساتھ پھل نہ لیں۔ کینسر میں جلد، گلا، بچہ دانی، جگر، آنت کے کینسر کے علاوہ مناسب ادویات السر، گٹھیا جوڑوں کا درد کے لئے مفید ہے۔

      صحت مند ٹانک

      • انڈا لیمو کی ٹانک (Egg lemon tonic)

      تدبیر : دیشی مرغی کے انڈا کو اچھی طرح پوچھ‌کر صاف کر لیں۔ ایک شیشہ کے بویام میں کاغذی لیمو کا رس آدھا ڈالیں۔ اس میں انڈا کو ڈبو دیں۔ انڈا ڈوب جانے کے بعد لیمو کا رس ایک انچ انڈا سے اوپر رہنا چاہئیے۔ اب اس کو دھوپ میں سات دنوں تک رکھیں۔ اس کے بعد دالگھوٹنی کو لےکر انڈا اور لیمو کا رس دونوں کو اچھی طرح ملا لیں۔ صاف کپڑے سے چھان‌کر اس کو الگ کر لیں۔ اس کے بعد چھانے ہوئے انڈے اور لیمو کے رس کو پرانے گڑ‌کو مربّہ میں ملانا ہے۔ دھیان رہے کہ رس کی مقدار  گڑ‌اورمربّہ کی مقدار برابر ہو۔ پھر بوتل کو اچھی طرح 21 دن دھوپ میں رکھ دیں۔22 ویں دن میں اس ٹانک کو استعمال کر سکتے ہیں۔
      خوراک : دو چمچ دن میں تین بار۔ یہ خصوصاً دمہ، ٹی بی۔، طویل مدتی سردی-کھانسی کے لئے مفید ہے۔

      کٹھل کی ٹانک (Jackfruit tonic)
      مکمل طور پر تیار پکا کٹھل لیں (نہ پوری طرح پکا ہوا اور نا کچّا) اس کے بعد کٹھل کے جھول سے بیج کو ہٹا دیں۔ اس کے بعد ایک صاف بویام میں پہلے پرانا گڑ پھر اس کے بعد جھول کی تہہ کو رکھتے جائے۔ دھیان رہنا چاہئیے کی بویام کے نچلے اور سب سے اوپر گڑ کی تہہ ہو۔ اس کے بعد اس کو دھوپ میں 21 دن رکھیں۔22 ویں دن سے تیار ہو جاتا ہے۔
      خوراک : 2-3 چمچ دن میں تین بار۔ یہ ٹانک ٹی بی کے مریض کے لئے مفید ہے۔ کم سے کم چھے : مہینے تک اس کو جاری رکھیں۔


      جوا پھول کی ٹانک (shoe-flower tonic)
      جوا پھول لےکر اس کے بیچ سے زر گل کو ہٹا دیں۔ صرف پنکھڑی کو پانی سے اچھی طرح دھو لیں۔ یہ دھیان میں رہے کے پانی کا انڈا پھول میں نہیں رہنا چاہئیے۔ اس کے بعد پرانے گڑ کی ایک تہہ بویام کے نچلے اور سب سے اوپر میں گڑ ہی رہے۔ اس کے بعد اس کو دھوپ میں 21 دن تک رکھیں۔ ٹانک تیار ہے۔
      خوراک : ایک چمچ دن میں دو بار۔ اگر آپ لیتے ہیں تو مواصلات، کے لئے ایک رکاوٹ موجود ہے. خصوصی طور پر ایک زبان رکاوٹ ہے۔ اس رکاوٹ کو پار کرنے کے لئے، ہم اس کو ایک پل بنا سکتے ہیں (حالانکہ شعری تمثیل کی شکل میں، یہ رکاوٹ کے ذریعے توڑنے یا توڑنے یا ایک رکاوٹ کے بجائے ایک پل یا چکّی کی تعمیر کے لئے زیادہ سمجھداری بناتا ہے۔۔۔ لیکن پھر بھی)۔ اس لئے اگر ہم زبان رکاوٹ کو پل کرتے ہیں، تو ہمیں ایک ایسا طریقہ مل گیا ہے جو الگ الگ زبان بولنے والے لوگوں کومؤثر طریقےسے پیغام کر سکیں۔ تو آپ حکم کا معنی صحیح ہے، اور آپ کا دوسرا ممکن نہیں ہے۔
      یہ ٹانک لکوریا، ماہانہ حیض میں بدانتظامی اور بچہ دانی سے متعلق بیماریوں میں مفید ہے۔ اگر یہ ٹانک آپ لکوریا مریض کے لئے بنا رہے ہیں دیکھو یہ دھیان رہے کہ لال جوا استعمال کر سکتے ہیں۔


      بھئی آنولے کی ٹانک (bhumi-amla tonic)
      بھئی آنولے کے پورے پنچاڈگ کو اچھی طرح دھوکر اس کو ابال لیں۔ اس کے بعد اس کا رس نچوڑ‌کر اس کا کاڑھا تیار کریں۔ پرانے گڑ کا مربہ تیار کرنے کے بعد یہ رس اس میں ملاکر ٹانک تیار کریں۔ اس کو دھوپ میں 21 دن رکھنا ہے۔ یہ دھیان رہے کہ گڑ اور بھئی آنولے کے رس کی مقدار برابر ہو۔
      خوراک : 2 چمچ دن میں تین یا دو بار۔
      یہ یرقان کے مریض کے لئے مفید ہے۔
      آنولے کا مادہ (Gooseberry aristam) 5 کلو آنولا لیں دھیان رہے اس میں کٹا پھٹا نہ ہو۔3 کلو پرانا گڑ لیں۔ آنولے کو دھو لیں اور صاف کپڑے سے پوچھ لیں جس سے پانی چلا جائے۔ اب ایک مٹی کا گھڑا لیں جس کو کم سے کم ایک سال تک استعمال کیا گیا ہو۔ اب گڑ کو اور اس کے بعد آنولے کو الگ الگ تہہ میں رکھتے جائیں۔ گھڑے کے سب سے اوپر گڑ کی تہہ ہو۔ دھیان رہے کہ اس میں پانی کا قطرہ  نہیں جائے۔ سواد کے لئے زیرہ، سونف، دارچینی، لونگ سبھی کا سفوف ملا سکتے ہیں۔ اس گھڑے کو اچھی طرح بندکر دیں جس سے ہوا اندر نہ جا پائے۔ اب گھڑے کو سکے زمین کے اندر رکھ دیں۔ اب 40 دن کے بعد گھڑے کو باہر نکالیں۔ پھر ا س کے عرق کو بویام میں رکھ‌کر 21 دن تک دھوپ میں رکھیں۔ اب اس کو استعمال میں لا سکتے ہیں۔
      خوراک : 1 چمچ دن میں دو بار۔ یہ بھوک بڑھانے کھانے ہضم کرنے، * دور کرنے اور بےخوابی کے مریض کے لئے مفید ہے۔


      سہجن کا شربت (Drumstic syrup)
      سہجن / منگا کے پتوں کا عرق 400 ملی لیٹر لیں۔ اب اس میں پرانا گڑ 1 کلو ملائیں۔ اب ان دونوں کو دھیمے آنچ میں ابالیں تاکہ کاڑھا گاڑھا ہو جائے۔ سواد کے لئے زیرہ سونف دارچینی ملاکر رکھ سکتے ہیں۔
      خوراک : 1 چمچ دن میں دو بار کھانے کے بعد 2-3 مہینے تک۔
      یہ حاملہ خواتین کے لئے مفید ہے۔

      ادویاتی درخت-پودے، بوٹانکل نام، جڑی-بھانگ کی تفصیل

      1. نیم (Azadirachta indica) :
      2. ایک چپرچت درخت ہے جو 20 میٹرکی اونچائی تک پایا جاتا ہے اس کی ایک ٹہنی میں قریب 9-12 پتے پائے جاتے ہے۔ اس کے پھول سفید رنگ‌کےہوتے ہیں اور اس کا پتا ہرا ہوتا ہے جو پکّ کر ہلکا پیلا-ہرا ہوتا ہے۔ اکثر یہ لوگو کے گھروں کے آس پاس دیکھا جاتا ہے۔ .

      3. تلسی (ocimum sanctum) :
      4. تلسی ایک جھاڑینما پودہ ہے۔ اس کے پھول گچّھےدار اور بیگنی رنگ‌کے ہوتے ہیں اور اس کے بیج گٹھلی نما ہوتے ہے۔ اس کو لوگ اپنے آنگن میں لگاتے ہیں۔

      5. برامہی / بینگ ساگ (hydrocotyle asiatica) :
      6. یہ ساگ پانی کی زیادتی میں سالوں بھر ہری بھری رہنے والی چھوٹی بیل ہے جو اکثر تالاب یا کھیت کے کنارے پائی جاتی ہے۔ اس کے پتے مقعد کی شکل (1/2-2 انچ) کے ہوتے ہیں۔ یہ ہری چٹنی کی شکل میں قبائلی سماج میں مشہور ہے۔

      7. برامہی (cetella asiatica) :
      8. یہ ایک بہت مفید اور موثر پودا ہے۔ یہ بیل کی شکل میں زمین میں پھیلتا ہے۔ اس کے کومل تنے 1-3 فٹ لمبے اور تھوڑی تھوڑی دور پر گانٹھ ہوتی ہے۔ ان گانٹھوں سے جڑیں نکل‌کر زمین میں چلی جاتی ہے۔ پتے چھوٹے، لمب، بیضوی، چکنے، موٹے ہرے رنگ‌کے اور چھوٹے-چھوٹے ہوتے ہیں سفید ہلکے نیلے گلابی رنگ کے پھول ہوتے ہیں۔ یہ نمی والے مقام میں پائے جاتے ہیں۔

      9. ہلدی (curcuma longa) :
      10. ہلدی کے کھیتوں میں اور باغان میں بھی لگیا جاتا ہے۔ اس کے پتے ہرے رنگ‌کے کسی قدر لمبے ہوتے ہیں۔ اس کی جڑکو استعمال میں لایا جاتا ہے۔ کچّی ہلدی کی شکل میں یہ بہت خوبصورت ہے۔ سکھی ہلدی کو لوگ مسالے کی شکل میں استعمال کرتے ہیں۔ ہلدی خون کو داغ اور کھانسی کو تباہ کرتی ہے۔

      11. چرائتا / بھئینیم (Andrographis paniculata) :
      12. چھوٹاناگپور کے جگلون میں کثیرمقدارمیں پایا جانے والا 1-3 فٹ اور اس کی کئی شاخیں پتلی-پتلی ہوتی ہے۔ اس کی پتّیاں نکیلی، بھالاکر، 3-4 انچ لمبی اور ایک سے سوا انچ چوڑی ہوتی ہے۔ پھول چھوٹے ہلکے گلابی اور سفید رنگ‌کے ہوتے ہیں یہ بارش کے دنوں میں پنپتا ہے اور جاڑے میں پھل اور پھول لگتے ہیں۔ یہ سواد میں کڑوا ہوتا ہے۔

      13. اڈوسا :
      14. یہ ہندوستان کے اکثر تمام علاقوں میں پایا جاتا ہے۔ اڈوسا کا پودا یہ سالوں بھر ہرا بھرا رہنے والا جھاڑی نما پودا ہے جو پرانا ہونے پر 8-10 فٹ تک بڑھ سکتا ہے۔ اس کی گہرے ہرے رنگ کی پتّیاں 4-8 انچ لمبی اور 1-3 انچ چوڑی ہے۔ موسم خزاں کے موسم میں اس کے اگلےحصوں کے گچّھا میں ہلکا گلابی پن کے ساتھ سفید رنگ‌کے پھول لگتے ہیں۔

      15. سدا بہار (Catharanthus roseus) :
      16. یہ ایک چھوٹا پودا ہے جو خاص دیکھ بھال کے بنا بھی رہتا ہے۔ سدا بہار کا پودا ادویات کے میدان میں اس کی اپنی اہمیت ہے. اس کی کچھ ٹہنیاں ہوتی ہے اور یہ 50سینٹی میٹر اونچائی تک بڑھ جاتی ہے. اس کے پھول سفید یا بیگنی شامل گلابی ہوتے ہیں۔ یہ اکثر باغان، بلعاہی علاقوں، گھیرا کی شکل میں بھی لگایا جاتا ہے۔

      17. سہجن /  منگا (Moringa oleifera) :
      18. منگا ایک مقبول عام درخت ہے۔ جس کی اونچائی 10 میٹریا زیادہ ہوتی ہے۔ اس کی چھالوں میں لسلسا گوند پایا جاتا ہے۔ اس کے پتے چھوٹے اور گول ہوتے ہیں اور پھول سفید ہوتے ہیں۔ اس کے پھول پتے اور پھل (جوکی) کھانے میں استعمال میں لائے جاتے ہیں۔ اس کے پتے (لوہا) لوہا کے  اہم ذرائع ہیں  جو حاملہ ماؤں کے لئے فائدہ مند ہیں۔ <

      19. ہڈجورا

      20. Tinospora cordifolia : ہڈجورا / امرتا ایک بیل ہے۔ اس کے پتے گہرے ہرے ہاڑجوڑا رنگ‌کے ساتھ اوردل کی شکل کے ہوتے ہیں۔ مٹر کے دانو کی شکل کے اس کے پھل کچّے میں ہرے اور پکنے پر گہرے لال رنگ ہوتے ہیں۔ یہ بیل درختوں، چاردیواری یا گھروں کی چھتوں پر آسانی سے پھیلتی ہے۔ اس کے تنے سی پتلی پتلی جڑیں نکل‌کر لٹکتی ہے۔
        Vitis quadrangularis : ہڈجورا کا یہ قسم گہرے ہرے رنگ میں پایا جاتا ہے۔ یہ گٹھلی دار اور تھوڑی تھوڑی دور پر گانٹھ ہوتے ہے۔ اس کے پتے بہت چھوٹے ہوتے ہیں۔ جوڑوں کے درد اور ہڈی کے ٹوٹنے اور موچ آنے پر اس کا استعمال کئے جانے کی وجہ سے اس کو ہڈجورا کے نام سے جانا جاتا ہے۔

      21. کڑھی پتا (Maurraya koengii) :
      22. کڑھی پتا کا درخت جنوبی ہندوستان میں اکثر تمام گھروں میں پایا جاتا ہے۔ اس کا استعمال کری کا پودا خاص کر کھانے میں خوشبو کے لئے استعمال کئے جاتے ہیں۔ ا س کے پتوں کی خوشبو بہت تیز ہوتی ہے۔ اس کی چھال گہری بھوری رنگ‌کی ہوتی ہے اس کے پتے بیضوی، چمکیلے اور ہرے رنگ‌کے ہوتے ہیں۔ اس کے پھول سفید ہوتے ہیں اور گچّھےدار ہوتے ہیں۔ اس کے پھل گہرے لال ہوتے ہیں جو بعدمیں بیگنی  مخلوط سیاہی لیے ہوتاہے.

      23. دودھیا گھاس (Euphorbia hirat) :
      24. یہ عموماً کھیتوں، کھلیان، میدانوں میں گھاسوں کے ساتھ پائی جاتی ہے۔ ددھیا دھاس
        اس کے پھول بہت چھوٹے ہوتے ہیں جو پتوں کے درمیان ہوتے ہیں۔ یہ سواد میں
        کڑوا ہوتا ہے۔ اس کی چھوٹی ٹہنیوں کو توڑنے پر دودھ نکلتا ہے
        جو لسلسا ہوتا ہے۔

      25. میٹھی گھاس (Scoparia dulcis) :
      26.  

        1. 6۔ دمہ (Asthma)

        پہچان :

        • وقت وقت پر سانس کی گھٹن
        • ہانپنی اور بےچینی
        • کبھی کبھی لگاتار کھانسی
        • سانس لینے پر سینہ میں بار بار کی آواز
        • تیز دورہ پڑنے پر مریض بےہوش بھی ہو سکتا ہے

        علاج :

        عاڈوسا (Adhatoda vasica) کا پتا اور ڈنٹھل 1 کلو، بھٹکٹیّا * یا رینگنی (Solanum xanthocarpum) 250 گرام کے چھوٹے-چھوٹے حصے کرکے ایک بھگونے میں 8 گنے پانی کے ساتھ دھیمی آنچ پر رکھ دیں۔ جب ایک-چوتھائی مقدار باقی رہ جائے تب بھگونے کو آنچ سے اتار‌کر کاڑھا کو چھان‌کر رکھ دیں۔ چھاننے کے بعد اگر گڑ ملانا ہو تو گڑ ملاکر دوبارہ گرم کریں جس سے گڑ اچھی طرح گھل جائے۔ اگر گڑ‌کی جگہ پر شہد ملائیں۔ (دی گئی مقدار میں-گڑ یا شہد 300 گرام) اگر چاہے تو اس میں کشمش، چھوہارا ڈال‌کر استعمال کریں۔ خوراک : 1-2 چائے چمچ صبح شام لیں۔ اس دوا کے استعمال کے بعد کم سے کم 1 گھنٹہ کچھ نہ کھائیں۔ مکمل چاند کی رات میں کھیر بناکر دمہ کے مریض کو استعمال کرنے کی بات بھی کی جاتی ہے۔ کہہ جاتا ہے دھل‌کر  الرجی میں  یہ دوا منافع بخش ہے۔ ارجن (Terminalia) کے تنے کی چھال لےکر اس کا سفوف بنا لیں۔ ماہ کامل کی شام کو 50-100 گرام گائے کے دودھ سے کھیر بنائیں، اس میں میوہ بھی بطورذائقہ ڈال سکتے ہیں۔ کھیر کو رات بھر ایسی جگہ پر رکھیں جہاں رات بھر چاندنی پڑتی ہو۔ بلی، کتے سے بچائیں۔ صبح طلوع آفتاب کے پہلے اس میں 1 چمچ ارجن کا سفوف ملاکر پوری کھیر رکھ لیں۔ نوٹ : 10 یا 11 بجے دورہ پڑ سکتا ہے لیکن گھبرائیں نہیں۔ اگر ایک بار میں بیماری پوری طرح اچھی نہیں ہوئی تو دوسرےماہ کامل کو دہرائیں۔ احتیاط : تمباکو، شراب، تیل، کھٹائی سے پرہیز کریں۔ قبض اور بدہضمی سے بچیں۔ دمہ کے مریض کو سکون اور فکر سے آزاد رکھنے کی کوشش کرنی چاہئیے۔ روزانہ یوگ ابھياس منافع بخش ہوگا۔ سونا کے پہلے کوشش کریں پیٹ خالی ہو اس سبب رات-کھانا ہو سکے تو جلد کریں۔

        1. 7۔ تپ دق (Tuberculosis) (پھیپھڑے کا)

        پہچان :

        • (پہلے کے دنوں میں)
        • لگاتار کھانسی
        • ہلکا بخار دوپہر میں اور رات میں بےچینی
        • سینہ میں یا اوپری حصے میں درد
        • وزن میں گراوٹ
        • کمزوری کا بڑھنا

        (بعدکے دنوں میں)

        • کھانسی کا دورہ
        • سست چہرہ
        • آواز میں سختی

        علاج :

        1. انڈا اور لیمو کی ٹانک (دیکھیں-صحت مند ٹانک)
        2. کٹھل کا ٹانک (دیکھیں-صحت مند ٹانک)
        3. عاڈوسا کے پتے اور ٹہنیوں (1 کلو) کو چھوٹے-چھوٹے ٹکڑے کر اچھی طرح صاف کر 16 لیٹر پانی میں ابالیں، جب پانی 1 لیٹر رہ جائے تو اس کو اتار‌کر چھان لیں۔ اس چھنے ہوئے کاڑھے میں 1 کلو چینی یا گڑ ملاکر اس کی چاشنی بنائیں، دوبارہ چاشنی میں 125گرام گھی ڈالیں۔ جب وہ گاڑھا ہو جائے تو اس میں چھوٹی پیپل کا 125 گرام سفوف ملاکر کسی صاف شیشہ کی بوتل میں رکھیں۔ اس کو ٹی بی کے علاوہ کھانسی، سانس کی تکلیف میں بھی استعمال کر سکتے ہیں۔

        خوراک : بچّے-1 چمچ دن میں دو بار
        بالغ-2 چمچ دن میں 3بار
        اس کا استعمال گرم دودھ یاگنگنے پانی سے کرنا چاہئیے
        1. ایک انڈا (دیشی مرغی) کو 3/4 دودھ کی گلاس میں اچھی طرح پھیٹیں اور 2 چمچ دارچینی (Cinnamon cassia) کا کاڑھا میلائیں۔ (دارچینی کا کاڑھا بنانے لئے 250 گرام دارچینی کی چھال کو 3 لیٹر پانی میں ابالیں جب تک 1 لیٹر نہ ہو جائے، تب اس میں چٹکی بھر نمک ڈال‌کر بوتل میں رکھ لیں)
        2. 3 بوندیں مالکانگنی یا کجری (Celastrus paniculata) تیل کو دیشی مرغی کے انڈا کی سفیدی میں ملاکر صبح خالی پیٹ 48 دنوں تک لیں۔
        3. اس کے ساتھ طاقت  بڑھانے کے لئے لیمو-انڈا ٹانک یا کٹھل ٹانک بھی لیں (دیکھیں صحت مند ٹانک)

        تپ دق (ٹی۔ بی۔) میں طاقت کے لئے :

        1. رات میں صاف سوکھا مہوا (Maduka indica) پھول مٹھی بھرکر 1 گلاس پانی میں بھگو لیں، صبح اس پانی کو دیں پھر دوبارہ اسی مہوا میں پانی بھر‌کر شام میں پینے کو دیں۔ روزانہ رات میں مہوا پھول بدل دیں۔

        خوراک : 1-1 گلاس صبح شام 2 مہینے تک۔ تازہ مہوا پھول لےکر بوئیام میں بھریں اور 1 بڑا چمچ چینی ڈال‌کر 30 دن دھوپ دکھائیں۔
        خوراک : 2 چائے چمچ 2-3بار 2 مہینے تک۔ سوکھا صاف مہوا کا پھول بوئیام میں بھر دیں۔ اس میں آدھا پانی اور مٹّی بھر چینی ڈال دیں اور 1 ماہ دھوپ دکھائیں۔ رس نچوڑ‌کر چھان لیں، رس جتنا پرانا ہوگا اتنا ہی فائدہ مند ہوگا۔
        خوراک : 1/2 کپ صبح شام، 1 سال کے بعد دن میں صرف ایک بار ہی دیں۔
        نوٹ : اوپر دیے گئے اقدامات کو طاقت میں اضافے كےلے دینا ضروری ہے چونکہ اس بیماری میں آدمی بہت کمزور ہو جاتا ہے۔

        ٹی۔ بی۔ کے مریض کو زیادہ توانائی پروٹین اور وٹامن پر مشتمل کھانے کی ضرورت ہوتی ہے۔ مریض کے لئے سوکھی سرلا (کٹئی) ساگ، پیچکی ساگ چھوٹا چاکوڈ (cassia tora) دینا فائدہ مند ہے۔ کھپرا ساگ (Boerhavia diffusa) اور گولگولا ساگ دینا چاہئیے، اس میں لوہا کی مقدار زیادہ رہتی ہے، یہ خون کو بڑھاتا ہے۔ چرائگوڈوا (Vitex peduncularis) کے پتّوں یا چھالوں کی چائے بھی خون بڑھاتی ہے اور صاف کرتی ہے۔ اس کے علاوہ گوشت، مچھلی، انڈا، کبوتر اور مرغے کا گوشت دینا چاہئیے۔ پرہیز : خنزیر، بھیڑ گوشت، چنگڑی مچھلی، آم، املی اور ان سے بنی چٹنی، لال کالی مرچ زیادہ گھی، تیل، چربی، گرم مسالہ نہ لیں۔ شراب سے مکمل پرہیز کرنا ہے ورنہ دوا زہر کی شکل لے سکتا ہے۔

        1. 8۔ بلڈ پریشر (Blood pressure)

        کم بلڈ پریشر (Low Blood Pressure)

        پہچان :

        • کمزوری لگنا
        • چکر آنا
        • آنکھوں کے سامنے اندھیرا چھا جانا
        • کبھی کبھی گردن میں درد وغیرہ

        علاج :

        1. چرائگوڈوا (Vitex peduncularis) کے پتوں کی چائے 1 کپ دن میں دو (صبح شام) دیں 10-12 دنوں تک۔
        2. رات میں سونا سے پہلے ایک انڈا اور دودھ لیں
        3. پننروا یا کھپرا ساگ (Boerhavia diffusa) کا سوپ دن میں دو بار لیں 10-12 دنوں تک۔
        1. 9۔ ہائی بلڈ پریشر (High blood pressure)

        پہچان :

        • سر درد، سر میں بھاری پن کا احساس ہونا
        • دل کادھڑکنا
        • تھکان
        • کبھی کبھی کندھے کی بائیں طرف سینہ میں درد
        • سانس لینے کے لئے کوشش کرنا

        علاج :

        سہجن / منگا (Moringa oleifera) کے پیلے یا پکے پتّو ں کا رس گڑ کے ساتھ مربہ بناکر رکھیں۔ صبح خالی پیٹ میں 1-1 چمچ سات دنوں تک لیں یا سہجن کے پکے پتّو ں کا رس 1 چمچ صبح اور 1 چمچ شام کو دیں جب تک بلڈ پریشر معمول نہ ہو جائے۔ یا

        1. سہجن کے پتوں کا سوپ تیار (مٹّی بھر پتّی) دن میں دو بار لیں۔
        2. چھوٹی کریلی (Momordica charantia) کو مسل‌کر 1 گلاس پانی میں بھگوکر رکھیں، صبح خالی پیٹ پانی کو پیئیں۔
        3. لہسن کے کچھ جوا (Clove) کو شہد کے رس میں 40 دنوں تک رکھیں۔ صبح خالی پیٹ میں 2 جوا کھائیں۔
        4. 250 گرام لہسن اور 250 گرام ادرک کو چھوٹے-چھوٹے ٹکڑے میں کاٹ لیں۔ اس کو 1 کلو پرانے گڑ میں مربہ تیار کر لیں اور شیشہ کے صاف بوئیام میں رکھ‌کر 21 دنوں تک رکھیں۔

        خوراک : 1 چمچ صبح شام لیں۔ اس کے ساتھ کریلا (Momordica charantia) یا نیم (Azadirachta indica) یا (Andrographis paniculata) کا عرق لیں۔
        نوٹ : دواؤں کے استعمال کے ساتھ دماغی اور جسمانی سرگرمیوں میں قابو رکھنا بھی ضروری ہے۔ فکر اور گھبراہٹ سے بچیں، ہائی بلڈ پریشر میں نمک کی مقدار کم کریں۔ زیادہ چربی والا کھانا، مٹھائی *، نشاستہ یا پینچ پر مشتمل کھانے سے بچیں۔ باقاعدگی سے ورزش کرنے سے حالت کو بہتر کیا جا سکتا ہے۔
        1. 10۔ یرقان (Jaundice) :

        پہچان :

        • آنکھوں کا پیلاپن اور سست ہو جانا
        • بخار آنا، الٹی آنا
        • کھانے سے بو آنا جس سے الٹی ہو سکتی ہے
        • پیشاب میں پیلاپن
        • کبھی کبھی ناف کے اوپری حصہ، داہنی طرف درد ہونا
        • قبض کی شکایت رہتی ہے

        علاج

        1. بھئی آنولا (Phyllanthus niruri) کی ٹانک (دیکھیں-صحت مند ٹانک)
        2. بھئی آنولا (Phyllanthus niruri) کا مربہ کو اچھی طرح صاف کر اس میں مصری اور بطورذائقہ زیرہ ملاکر پیس‌کر صبح پیئیں، 5-7 دنوں تک۔
        3. برامہی (Centella asiatica) کے مربہ اور مصری ملاکر صبح شام لیں 1 گلاس 5-7 دنوں تک۔
        4. ایرنڈی (Ricinus communis) کے کومل پتوں کا عرق مصری کے ساتھ صبح خالی پیٹ 1 کپ لیں 5-7 دنوں تک۔
        5. کرہینی چاول کا ماڑی (ہنڈیا) میں 1 گلاس پانی ڈال دیں۔1 گھنٹہ بعد پانی کو نکال دیں، اس کو مریض کو نہ دیں۔ اس کے بعد 1 گلاس پانی ڈالیں۔ دوبارہ 1 گھنٹہ کے بعد اس کو چھان‌کر مریض کو پلائیں۔ دن میں 3بار صبح-دوپہر-شام کے کھانے کا آدھا گھنٹہ پہلے مریض کو 5-7 دنوں تک دیں۔ عام طور پر 3 دنوں کے فرق پر بنایا ہوا 1-1 کلو چاول کا گوندھی (ہنڈیا) 1 کورس کے لئے کافی ہوتا ہے مہندی کا پتا اور بھئی آنولے برابر مقدار میں لیں اور انار پھل‌کےچھلکے کو دو گلاس پانی میں ابالیں جب تک یہ 1 گلاس نہ ہو جائے۔

        مقدار : 1 گلاس دن میں ایک بار، خالی پیٹ صبح میں لیں 3 دنوں تک۔
        نوٹ : دوائیاں لینے کے دوران نمک سے پرہیز کریں۔ چربی والے غذائی مادہ تیل کم سے کم 2 مہینے تک استعمال نہ کریں۔ گنّا کا رس، پھلوں کا رس، گلوکوس، دہی، مریض کھا سکتا ہے۔ تازی-ہرا ساگ-سبزی ابال‌کر مریض کو دیں۔
        1. 11۔ ملیریا (Maleria)

        پہچان :

        • جاڑےکے ساتھ بخار آنا
        • سر-درد
        • بخار پسینہ کے ساتھ اترتا ہے
        • کمزوری
        • وقفہ کے بعد بخار

        علاج :

        1. 1۔ میٹھی گھانس (Scoparia dulcis) کا مربہ *، پٹھا (Cissampelos pareira) کی جڑ اور چرچٹی (Achyranthes aspera) کی جڑ برابر مقدار میں پیس‌کر پانی میں گھولیں۔

        خوراک : آدھا-آدھا کپ دن میں 3بار، 10-12 دنوں تک دیں۔
        1. 2۔ چرئیتا (Andrographis paniculata) کا مربہ * پانی کے ساتھ پیس‌کر کاڑھا آدھا کپ دن میں 2بار دیں، 10-12 دنوں تک۔
        2. 3۔ چرائگوڈوا یا سمکارا (Vitex peduncularis) کے پتوں یا چھال کا کاڑھا 1 کپ دن میں 2بار 10-12 دنوں تک دیں۔
        3. بھئنیم / کالمیگھ (Andrographis paniculata) 30-35 گرام 1 گلاس پانی میں ابال‌کر 1/2 کریں۔

        خوراک ؛ 1 کپ دن میں 2بار 1 مہینے تک دیں۔1 کپ دن میں 1بار، دوسرے مہینے میں اور 1 دن وقفہ پر 1 کپ تیسرے ہفتے میں دیں۔
        1. سندعار / شیت منجری (Vitex negundo) 100 گرام، کالی مرچ 10 گرام، گڑ-100 گرام سبھی کو آدھے لیٹر پانی میں ابالیں جب تک کہ وہ ایک چوتھائی نہ ہو جائے۔ خوراک : 1 کپ دن میں دو بار۔
        2. نیم (Azadirachta indica) کے پتے اور چھال ملیریا کے لئے بہت مفید ہے یہ رس اور کاڑھا دونوں شکل میں لے سکتے ہے۔

        خوراک : رس-1 چمچ اور کاڑھا-1 کپ دن میں 3بار، اس کو 5 دنوں تک لیں۔
        1. لمبے وقت کا ملیریا (Choronic maleria)

        1۔ ایک چمچ  کالی مرچ کو 2 گلاس پانی میں ڈال‌کر ابالیں جب تک کی یہ آدھی نہ ہو جائے۔ تیار ہونے کے بعد 12 گھنٹے چھوڑ دیں (شام میں تیار کر رات بھر رہنے دیں)، صبح اس کو چھان‌کر پیئیں۔ دوسری خوراک صبح میں تیار کریں اور شام میں لیں۔ صرف 2 خوراک ہی لیں۔ اس خوراک کو لینے پر کبھی کبھی مریض تھکان اور کمزوری محسوس کرتا ہے۔ لیکن یہ کچھ وقت بعد صحیح ہو جاتا ہے۔ کمزوری کے لئے دودھ لے سکتے ہیں۔ لیکن السر اور پیپٹیک کے مریض اسکے کاڑھا کو نہیں لے سکتے ہیں۔
        نوٹ : اگر بیماری کی علاج جلد نہیں کی گئی تو مریض خون کی کمی، متعلقہ جگر وغیرہ بیماریوں کا شکار ہو جاتا ہے۔ ملیریا بیماری کی وجہ سے اگر تاپ تلّی کی اضافہ ہو گئی ہو تو چرچٹی (Achyranthes aspera) کی جڑ پیس‌کر مٹر کے برابر گولی پپّلی (Piper longum) کے پھل کے ساتھ دن میں 2بار 7-10 دنوں تک دیں۔
        روک تھام کے لئے چرائگوڈوا کی چائے کی طرح سال لیں تو بہترین ہے۔ ہائی اور کم بلڈ پریشرکی روک تھام کے ساتھ کینسر کی بھی دوا ہو سکتی ہے

        1. 12۔ جازب بخار / ٹائی فائڈ (Typhoid)

        پہچان :

        • ٹھنڈ اور فلو سے شروعات
        • 3-4 دن کے بعد سردرد، کاہلی، بےچینی، نیند نہ آنا اور بخار
        • پیٹ کے نچلے حصے میں دبانے سے درد
        • کبھی کبھی مریض کو الٹی، ڈائریا یا قبض کی بھی  شکایت  ہوتی ہے

        علاج :

        چناکو بھن‌کر سفوف تیار کریں، اسی برابر مقدار میں بارلی (جوار سفوف) اور باجرا کا سفوف لیں، سبھی کو ملا لیں اور 1 چمچ لیں شہد یا گڑ
        کے ساتھ۔
        خوراک : 1 چمچ دن میں 3بار
        ببول درخت (Acacia arabica) کی چھال (60 گرام) کو 2 گلاس پانی میں تب تک ابالیں جب تک آدھی نا ہو جائے۔
        خوراک : 1 کپ، 3 گولمرچ کے پاؤڈر کے ساتھ دن میں 3بار کھانے سے پہلے، 3 دن تک۔
        میٹھی گھانس (Scoparia dulcis) کا مربہ، 9 گولمرچ، پیپل (Ficus Religiosa) کے سات پتے، بانس (Bambusa spp) کے پتے اور مصری ملاکر کاڑھا بنائیں۔
        خوراک : 2 چائے چمچ صبح شام
        امرود (Psidium guyava) سات پھول مسلو اور اس کو 1 کپ بکری کے دودھ (بنا ابالے) میں ملاکر خالی پیٹ میں تین بار دیں۔ (صرف 3 خوراک دینی ہے۔ )
        جسم پر ملیں : پرانی ڈوری (Bassia latifolia) کا تیل لگانے کے بعد جسم پر ڈوری اور ایرنڈی کا تیل ملاکر ملیں۔ شہد کا رس اور کاغذی لیمو کا رس ملاکر کھوپڑی کے نرم حصے پر لگائیں۔ گائے کا گھی اور شہدکا رس ملاکر ناف میں لگائیں۔
        نوٹ : ٹائیفائڈ کا صحیح علاج نہیں ہونے سے زیادہ دن ہونے پر پھوڑا ہو جا سکتا ہے۔ یہ بڑھنے پر سوراخ میں بدل جا سکتا ہے۔ اور مریض کو خطرہ بڑھ جاتا ہے۔ کھانے میں گیلا چاول، سابودانہ، دلیہ دیں۔ خوردنی اشیا کے لئے معالج سے صلاح ضروری ہے۔ چونکہ اس بخار میں پیچیدگی کے آنے کے امکان ہمیشہ بنے رہتے ہے۔

        1. 13۔ ذیابطیس (Diabetes)

        پہچان

        • زیادہ پیاس لگنا / منہ سوکھنا
        • بار بار پیشاب کرنا
        • پیشاب میں چینی آنا
        • کمزوری / تھکان
        • زیادہ بھوک
        • زیادہ نیند لگنا
        • زیادہ پسینہ آنا
        • وزن میں کمی نظر میں رکاوٹ وغیرہ

        علاج :

        (ک) ذیابیطس (Excessive urination)
        املی (Tamarindus indica) کے بیجوں کو پانی میں بھگاکر اوپر کا چھلکا نکل لیں۔ دوبارہ اس کو سوکھا کر سفوف بنا لیں۔
        خوراک : 2-2 چھوٹی چائے کا چمچ لیں ٹھنڈے دودھ کے ساتھ 10-15 دن
        ہرّا (Terminalia chebula) کے پھل‌کے اوپری چھلکے کا کاڑھا 8 گنا پانی میں تب تک تیار کریں جب تک کے چوتھائی نہ ہو جائے۔ پھر چھان‌کر پکائے جب تک گولی بنانےکے لائق نہ ہو جائے۔
        خوراک : 2-2 گولی دن میں 3بار 7-10 دنوں تک دیں۔
        پوستا دانا 20 گرام پیس‌کر اور پرانا گڑ 20 گرام ملاکر مٹر کے برابر گولی بنا لیں۔ خوراک : 2-2 گولی دن میں 2بار 7-10 دنوں تک دیں۔
        آدھا گلاس سہجن (Moringa Oleifera) کے پتے کے عرق میں تھوڑا سا نمک ملاکر 1 چمچ دیں تھوڑی دیر کے دوران میں با قاعدہ طور پر۔
        میتھی 30 گرام، گول کالی مرچ 20 گرام، مصری 40 گرام 1 کپ دودھ کے ساتھ دیں۔
        (کھ) ذیابطیس (Diabetes) کے لئے
        سدا بہار (سفید پھول والا) (Catharanthus roseus) کے پودے کی جڑ سے اوپری حصے کو چھوٹے-چھوٹے ٹکڑے کرکے 6 گنا پانی میں ابال‌کر ایک چوتھائی کر لیں۔ اس میں 3 گول-کالی مرچ پیس‌کر ملا دیں۔
        خوراک : 2 چائے چمچ دن میں 2بار (صبح شام) 30 دنوں تک دیں۔
        لاجونتی (Mimosapudica) کا مربہ لےکر چھوٹے ٹکڑے کریں۔ لگ بھگ مٹّی بھر لےکر 200 گرام چاول کے ساتھ پکائیں۔ پکنے پر پینچ پساکر صبح شام 1-1 گلاس گرم پانی میں دیں۔
        خوراک : 1 گلاس دن میں 2بار صبح شام پینے دیں 20-25 دنوں تک۔
        1 چمچ میٹھی گھانس (Scoparia dulcis) کا مربہ پیس‌کر شہد یا مصری (آدھا چمچ) ملاکر دیں۔
        خوراک : صبح شام 30 دنوں تک دیں۔ (خون شکر کے لئے بھی)
        ہڈجورا / گرچ (Tinospora cordifolia) کی بیل کا رس اور پتّھرچور (Bryophyllum Pinnatum) کے پتے کا رس برابر مقدار میں ملائیں۔
        خوراک : 2 چائے چمچ، صبح شام، 30 دنوں تک پانی کے ساتھ دیں۔
        کٹھ جامن (Enginia operculata) یا جامن (Enginia Jambolana) پھل کا بیج سکھاکر پیس‌کر سفوف آدھا چمچ اور شہد یا پرانا گڑ آدھا چمچ ملاکر دیں۔
        خوراک : چمچ (چائے) صبح شام دیں 30 دنوں تک۔
        سدا بہار (سفید پھول والا) کا پھول 5-9 روزانہ صبح شام کھائیں / یا / پننروا کے 1-10 پتے صبح روزانہ لیں۔
        نوٹ : ذیابطیس میں خوردنی اشیا اہم کردار نبھاتی ہے۔ اگر مریض ذیابیطس سے متاثر ہے تو اس کی تشخیص ضروری ہے۔ کاربوہائیڈریٹ والے اناج چاول، گیہوں، دال کم مقدار میں لیں۔ گاڑھی مٹھائیاں، آلو، شکرقند نہ لیں۔ چائے کافی سوپ بنا میٹھا کئے لے سکتے ہیں۔ گوشت، مچھلی، اور انڈا کھایا جا سکتا ہے۔ باقاعدگی سے ورزش میں توجہ دینا  ضروری ہے۔

        1. 14۔ پتھری (Stone)

        پہچان :

        • بیچ رات میں پیٹھ میں اچانک درد شروع ہونا
        • نیچے کی طرف بڑھتا ہے
        • کبھی کبھی یہ درد جانگھوں یا خصیہ یا اندام نہانی تک چلا جاتا ہے
        • کبھی کبھی پیشاب کے ساتھ خون کا آنا

        علاج :

        1. کلتھی کوسپبوے * کے دانے کے وزن کے بارہ گنا پانی میں ابال لیں۔ جب پانی ایک چوتھائی ہو جائے تو اتار لیں۔ کھانے میں وہی ابالا ہوا کلتھی روٹی اور دال پکاکر کھانے کو دیں۔ خوراک : 1-1 کپ صبح شام 18-20 دنوں تک دیں۔
        2. پتّھرچور (Bryophyllum Pinnatum) پتّو کا رس نچوڑے کر 1/2 کپ یا 1 کپ لیں۔ اس میں 3 گولمرچ پیس‌کر ملا دیں۔

        خوراک : 1 یا 1/2 کپ دن میں دو بار 15-20 دنوں تک دیں
        میٹھی گھانس () کا عرق دودھ کے ساتھ طلوع آفتاب کے پہلے دیں۔ پانی زیادہ سے زیادہ پیئیں۔ سہجن (Moringa Oleifera) کا 60 گرا، جڑ اور چھال کا کاڑھا تیار کریں اس میں چٹکی بھر نمک اور ہینگ (Asafoetida) میلائیں۔ خوراک : 1 کپ دن میں ایک بار۔
        سنگا قسم کی مچھلی کے سر میں چھوٹے-چھوٹے پتھر پائے جاتے ہے۔ اس پتھر کو پیس‌کر لیمو کے رس میں لینے سے گردہ کی پتھری ٹوٹ‌کر نکل جاتی ہے خوراک : صبح شام 5 دنوں تک لیں۔
        نوٹ :اوکجالیٹ پتھری ہونے پر مریض کو ٹماٹر، ادرک، املی، مولی، پیاز، یورک، سلاد، گیہوں، پیچکی، کندمول، آلو سے پرہیز کرنا ہوگا۔ یورک تیزاب پتھری میں مریض کو چائے کافی، دال، کلیجی، گوشت، گردہ،وغیرہ نہیں کھانا چاہیئے۔ اگر مخلوط پتھری ہو یا یقینی نہیں ہو کی کون سے پتھری ہے تو اوپر دئے گئے دونوں قسم کے اشیائےخوردنی مادوں سے پرہیز کریں۔ چھوٹاناگپور کے قبائلی بہل علاقوں میں پتھری سے بچنے کے لئے کلتھی دال اور بطخ کا گوشت کھانے کا رواج ہے۔
        1. 15 کینسر (Cancer)

        پہچان :

        • جلد کینسر میں چھوٹے-چھوٹے زخم، مسّا کی شکل میں تبدیلی۔
        • گلے کے کینسر میں نگلنے، سانس لینے میں پریشانی۔
        • جبڑے اور تالو کے کینسر میں لعاب دہن میں خون، گانٹھ، پھوڑا، یا سفید داغ، منہ سے بدبو بات چیت کرنے میں پریشانی۔
        • پھیپھڑے کے کینسر میں سینے میں درد، کبھی کبھی کھانسی میں اچانک اضافہ، بلغم کے ساتھ یا بلغم کےبغیر کھانسی۔
        • بچہ دانی کینسر میں ماہانہ ماہورای سلسلہ کے درمیان جریان خون، بےشمار رطوبت اور فاسد رطوبت، جسم کا سست ہونا، کمر اور گھٹنوں کا درد، چہرے اور گردن کی سوجن شرمگاہ میں گانٹھ۔
        • آنت کے کینسر میں قبض، پتلا دست، پاخانہ، عدم تعلقی، کے بعد خون کا اخراج پیٹ میں درد وغیرہ۔

        علاج :

        2-3 چمچ گھرتکماری (Aloe vera) کے پتے لیں، آدھا کلو  کا رس، چار چمچ برانڈی یا وسکی یا مہوا سے بنا شراب لیں۔ گھرتکماری کی کانٹو ں کو اچھی طرح صاف کر لیں اور چھوٹے چھوٹے ٹکڑے کر لیں اب اس میں دی ہوئی مقدار میں شہد ملائیں۔ آپ چاہے تو اس کو مکسی میں پسیں اور ٹھنڈے مقام میں رکھ دیں۔ دوائی تیار ہے۔
        خوراک : 1 چمچ دن میں تین بار خالی پیٹ لیں۔ (دوا کھانا لینے کے 15 منٹ پہلے لیں) دوا 10 دنوں تک لگاتار لیں پھر 10 دن چھوڑ‌کر اسی وقفہ میں دوا لیں۔
        نوٹ : دوا لینے کے بعد الٹی، پتلا دست، چہرے میں دانہ آنا وغیرہ علامت صفت دکھلائی پڑ سکتے ہیں لیکن اس سے گھبرانا نہیں ہے۔ روٹی، چاول، ہری-سبزی، گنّا، دال، آلو، تھوڑی مقدار میں شراب (2 چمچ پانی کے ساتھ) لیں سکتے ہیں۔ ہری سبزی آدھا پکا اور ابالا ہوا دیں۔ پانی زیادہ مقدار میں پئیں۔ دوسرے دیگر مادوں کے ساتھ پھل نہ لیں۔ کینسر میں جلد، گلا، بچہ دانی، جگر، آنت کے کینسر کے علاوہ مناسب دوا السر، گٹھیا جوڑوں کے درد کے لئے مفید ہے۔

        صحت مند ٹانک

        1. انڈا لیمو کی ٹانک (Egg lemon tonic)

        تدبیر : دیشی مرغی کے انڈا کو اچھی طرح پوچھ‌کر صاف کر لیں۔ ایک شیشہ کے بویام میں کاغذی لیمو کا رس آدھا ڈالیں۔ اس میں انڈا کو ڈبو دیں۔ انڈا ڈوب جانے کے بعد لیمو کے رس ایک انچ انڈا سے اوپر رہنا چاہئیے۔ اب اس کو دھوپ میں سات دنوں تک رکھیں۔ اس کے بعد دالگھوٹنی کو لےکر انڈا اور لیمو کا رس دونوں کو اچھی طرح ملا لیں۔ صاف کپڑے سے چھان‌کر اس کو الگ کر لیں۔ اس کے بعد چھانے ہوئے انڈا اور لیمو کے رس کو پرانے گڑ‌کے مربہ میں ملانا ہے۔ دھیان رہے کہ رس کی مقدار اور گڑ‌کے مربہ کی مقدار برابر ہو۔ پھر بوتل کو اچھی طرح 21 دن دھوپ میں رکھ دیں۔22 ویں دن میں اس ٹانک کو استعمال کر سکتے ہیں۔ خوراک : دو چمچ دن میں تین بار۔ یہ خصوصاً دمہ، ٹی بی۔، طویل مدتی سردی-کھانسی کے لئے مفید ہے۔

        کٹھل کی ٹانک (Jackfruit tonic) مکمل طور پر تیار پکا کٹھل لیں (نہ پوری طرح پکا ہوا اور نا کچّا) اس کے بعد کٹھل کے کھوہ سے بیج کو ہٹا دیں۔ اس کے بعد ایک صاف بویام میں پہلے پرانا گڑ پھر اس کے بعد کھوہ کی تہہ کو رکھتے جائے۔ دھیان رہنا چاہئیے کی بویام کے نچلے اور سب سے اوپر گڑ کی تہہ ہو۔ اس کے بعد اس کو دھوپ میں 21 دن رکھیں۔22 ویں دن سے تیار ہو جاتا ہے۔ خوراک : 2-3 چمچ دن میں تین بار۔ یہ ٹانک ٹی بی کے مریض کے لئے مفید ہے۔ کم سے کم چھے : مہینے تک اس کو جاری رکھیں۔

        جوا پھول کی ٹانک (shoe-flower tonic) جوا پھول لےکر اس کے بیچ سے زر گل کو ہٹا دیں۔ صرف پنکھڑی کو پانی سے اچھی طرح دھو لیں۔ یہ دھیان میں رہے کے پانی کا انڈا پھول میں نہیں رہنا چاہئیے۔ اس کے بعد پرانے گڑ کی ایک تہہ بویام کے نچلے اور سب سے اوپر میں گڑ ہی رہے۔ اس کے بعد اس کو دھوپ میں 21 دن تک رکھیں۔ ٹانک تیار ہے۔ خوراک : ایک چمچ دن میں دو بار۔ یہ ٹانک لکوریا،ماہورای میں بدانتظامی اور بچہ دانی متعلق بیماریوں میں مفید ہے۔ اگر یہ ٹانک آپ لکوریا مریض کے لئے بنا رہے ہیں تو یہ دھیان رہے کہ لال جوا استعمال کر سکتے ہیں۔

        بھئی آنولے کی ٹانک (bhumi-amla tonic) بھئی آنولے کے پورے مربہ کو اچھی طرح دھوکر اس کو ابال لیں۔ اس کے بعد اس کا رس نچوڑ‌کر اس کا کاڑھا تیار کریں۔ پرانے گڑ کا مربہ تیار کرنے کے بعد یہ رس اس میں ملاکر ٹانک تیار کریں۔ اس کو دھوپ میں 21 دن رکھنا ہے۔ یہ دھیان رہے کا گڑ اور بھئی آنولے کے رس کی مقدار برابر ہو۔ خوراک : 2 چمچ دن میں تین یا دو بار۔ یہ یرقان کے مریض کے لئے فائدہ مندہے۔

        آنولے کا مادہ (Gooseberry aristam) 5 کلو آنولا لیں دھیان رہے اس میں کٹا پھٹا نہ ہو۔3 کلو پرانے گڑ لیں۔ آنولے کو دھو لیں اور صاف کپڑے سے پوچھ لیں جس سے پانی چلا جائے۔ اب ایک مٹی کا گھڑا لیں جس کو کم سے کم ایک سال تک استعمال کیا گیا ہو۔ اب گڑ کو اور اس کے بعد آنولے کو الگ الگ تہہ میں رکھتے جائیں۔ گھڑے کے سب سے اوپر گڑ کی تہہ ہو۔ دھیان رہے کہ اس میں پانی کا  قطرہ نہیں جائے۔ سواد کے لئے زیرہ، سونف، دارچینی، لونگ سبھی کا سفوف ملا سکتے ہیں۔ اس گھڑے کو اچھی طرح بندکر دیں جس سے ہوا اندر نہ جا پائے۔ اب گھڑے کو سوکھی زمین کے اندر رکھ دیں۔ اب 40 دن کے بعد گھڑے کو باہر نکالیں۔ پھر ا س کے عرق کو بویام میں رکھ‌کر 21 دن تک دھوپ میں رکھیں۔ اب اس کو استعمال میں لا سکتے ہیں۔ خوراک : 1 چمچ دن میں دو بار۔ یہ  بھوک بڑھانے کھانا پچانے، * دور کرنے اور بےخوابی کے مریض کے لئے مفید ہے۔

        سہجن کا شربت (Drumstic syrup) سہجن /  مورینگا کے پتوں کا عرق 400 ملی لیٹر لیں۔ اب اس میں پرانا گڑ 1 کلو ملائیں۔ اب ان دونوں کو دھیمی آنچ میں ابالیں تاکہ کاڑھا گاڑھا ہو جائے۔ سواد کے لئے زیرہ سونف دارچینی مل‌کر رکھ سکتے ہیں۔ خوراک : 1 چمچ دن میں دو بار کھانے کے بعد 2-3 مہینے تک۔ یہ حاملہ خواتین کے لئے مفید ہے۔

        ادویاتی درخت-پودے، بوٹانکل نام، جڑی-بھانگ کی تفصیل
      27. ۔ نیم (Azadirachta indica) :
      28. ایک چپرچت درخت ہے جو 20 میٹرکی اونچائی تک پایا جاتا ہے اس کی ایک ٹہنی میں قریب 9-12 پتے پائے جاتے ہے۔ اس کے پھول سفید رنگ‌کے ہوتے ہیں اور اس کا پتا ہرا ہوتا ہے جو پکّ کر ہلکا پیلا-ہرا ہوتا ہے۔ اکثر یہ لوگو کے گھروں کے آس پاس دیکھا جاتا ہے۔

      29. ۔ تلسی (ocimum sanctum) :
      30. تلسی ایک جھاڑی نما پودا ہے۔ اس کے پھول گچّھےدار اور بیگنی رنگ‌کےہوتے ہیں اور اس کے بیج گھٹلی نما ہوتے ہے۔ اس کو لوگ اپنے صحن میں لگاتے ہیں۔

      31. ۔ برامہی / بینگ ساگ (hydrocotyle asiatica) :
      32. یہ ساگ پانی کی زیادتی میں سالوں بھر ہری بھری رہنے والی چھوٹی بیل ہے جو اکثر تالاب یا کھیت کے کنارے پائی جاتی ہے۔ اس کے پتے مقعد کی شکل (1/2-2 انچ) کے ہوتے ہیں۔ یہ ہری چٹنی کی شکل میں قبائلی سماج میں مشہور ہے۔

      33. ۔ برامہی (cetella asiatica) :
      34. یہ ایک بہت مفید اور موثر پودا ہے۔ یہ بیل کی شکل میں زمین میں پھیلتا ہے۔ اس کے نرم تنے 1-3 فٹ لمبے اور تھوڑی تھوڑی دور پر گانٹھ ہوتے ہے۔ ان گانٹھوں سے جڑیں نکل‌کر زمین میں چلی جاتی ہے۔ پتے چھوٹے، لمب، بیضوی، چکنے، موٹے ہرے رنگ‌کےاور چھوٹے-چھوٹے ہوتے ہیں سفید ہلکے نیلے گلابی رنگ کے پھول ہوتے ہیں۔ یہ نمی والے مقام میں پائے جاتے ہیں۔

      35. ۔ ہلدی (curcuma longa) :
      36. ہلدی کے کھیتوں میں اور باغان میں بھی لگیا جاتا ہے۔ اس کے پتے ہرے رنگ‌کےلمبی شکل کےہوتے ہیں۔ اس کی جڑ استعمال میں لائی جاتی ہے۔ کچّی ہلدی کی شکل میں یہ جمالیات پسند ہے۔ سکھے ہلدی کو لوگ مسالے کی شکل میں استعمال کئے ہیں۔ ہلدی خون صاف کرنے والا اور کھانسی ختم کرنے کے لیے  مخرب ہے۔

      37. ۔ چرائتا / بھئی نیم (Andrographis paniculata) :
      38. چھوٹاناگپور کے جگلون میں کثیرمقدارمیں پایا جانے والا 1-3 فٹ اور اس کی کئی شاخیں پتلی-پتلی ہوتی ہے۔ اس کی پتّیاں نکیلی، بھالےکی شکل، 3-4 انچ لمبی اور ایک سے سوا انچ چوڑی ہوتی ہے۔ پھول چھوٹے ہلکے گلابی اور سفید رنگ‌کے ہوتے ہیں یہ بارش کے دنوں میں پنپتا ہے اور ٹھنڈ میں پھل اور پھول لگتے ہیں۔ یہ ذائقہ میں کڑوا ہوتا ہے۔

      39. ۔ اڈوسا :
      40. یہ ہندوستان کے اکثر تمام علاقوں میں پایا جاتا ہے۔ اڈوسا کا پودا یہ سالوں بھر ہرا بھرا رہنے والا جھاڑی نما پودا ہے جو پرانا ہونے پر 8-10 فٹ تک بڑھ سکتا ہے۔ اس کے گہرے ہرے رنگ کی پتّیاں 4-8 انچ لمبی اور 1-3 انچ چوڑی ہے۔ موسم خزاں کے موسم میں اس کے اگلا حصوں کے گچّھا میں ہلکا گلابی پن لئے سفید رنگ‌کے پھول لگتے ہیں۔

      41. ۔ سدا بہار (Catharanthus roseus) :
      42. یہ ایک چھوٹا پودا ہے جو خاص دیکھ بھال کے بنا بھی رہتا ہے۔ سدا بہار کا پودا طبی میدان میں اس کی اپنی اہمیت ہے۔ اس کی کچھ ٹہنیاں ہوتی ہے اور یہ 50 سینٹی میٹر اونچائی تک بڑھتا ہے۔ اس کے پھول سفید یا بیگنی مخلوط گلابی ہوتے ہیں۔ یہ اکثر باغان، بلعاہی علاقوں، گھیروں کی شکل میں بھی لگایا جاتا ہے۔

      43. ۔ سہجن / سہجن (Moringa oleifera) :
      44. سہجن ایک مقبول عام درخت ہے۔ جس کی اونچائی 10 میٹریا زیادہ ہوتی ہے۔ اس کی چھالوں میں لسلسا گوند پایا جاتا ہے۔ اس کے پتے چھوٹے اور گول ہوتے ہیں اور پھول سفید ہوتے ہیں۔ اس کے پھول پتے اور پھل (جوکی) کھانے میں استعمال میں لائے جاتے ہیں۔ اس کے پتے (لوہا) لوہا کے اہم ماخذ ہیں جو حاملہ خواتین کے لئےفائدہ مند ہے۔

      45. ۔ ہڈجورا

      46. 10.1-Tinospora cordifolia : ہڈجورا / امرتا ایک بیل ہے۔ اس کے پتے گہرے ہرے ہاڑجوڑا رنگ‌کے اوردل کی شکل کے ہوتے ہیں۔ مٹر کے دانو کی شکل کے اس کے پھل کچّے میں ہرے اور پکنے پر گہرے لال رنگ کے ہوتے ہیں۔ یہ بیل درختوں، چاردیواری یا گھروں کی چھتوں پر آسانی سے پھیلتی ہے۔ اس کے تنے سے پتلی پتلی جڑیں نکل‌کر لٹکتی ہے۔
        10.2 Vitis quadrangularis : ہڈجورا کی یہ قسم گہرے ہرے رنگ میں پائی جاتی ہے۔ یہ گٹھلی دار اور تھوڑی تھوڑی دور پر گانٹھے ہوتی ہے۔ اس کے پتے بہت چھوٹے ہوتے ہیں۔ جوڑوں کے درد اور ہڈی کے ٹوٹنے اور موچ آنے پر اس کا استعمال کئے جانے کی وجہ سے اس کو ہڈجورا کے نام سے جانا جاتا ہے۔
      47. ۔ کڑھی پتہ (Maurraya koengii) :
      48. کڑھی پتہ کا درخت جنوبی ہندوستان میں اکثر تمام گھروں میں پایا جاتا ہے۔ اس کا استعمال کری کا پودا خاص کر کھانے میں خوشبو کے لئے استعمال کئے جاتے ہیں۔ ا س کے پتوں کی خوشبو بہت تیز ہوتی ہے۔ اس کی چھال گہرے بھوری رنگ کی ہوتی ہے اس کے پتے بیضوی، چمکیلے اور ہرے رنگ‌کے ہوتے ہیں۔ اس کے پھول سفید ہوتے ہیں اور گچّھےدار ہوتے ہیں۔ اس کے پھل گہرے لال ہوتے ہیں جو بعد میں بیگنی شامل کالاپن لئے ہوتا ہے۔

      49. ۔ دودھیا گھاس (Euphorbia hirat) :
      50. یہ عموماً کھیتوں، کھلیان، میدانوں میں گھاسوں کے ساتھ پایا جاتا ہے۔ ددھیا دھاس اس کے پھول بہت چھوٹے ہوتے ہیں جو پتوں کے درمیان ہوتے ہیں۔ یہ سواد میں کڑوا ہوتا ہے۔ اس کی چھوٹی ٹہنیوں کو توڑ نے پر دودھ نکلتا ہے جو لسلسا ہوتا ہے۔

      51. ۔ میٹھی گھاس (Scoparia dulcis) :
      52. یہ باغان، کھیتوں کے ساتھ پائی جاتی ہے۔ میٹھی گھاس اس کے پتے چھوٹے ہوتے ہیں اور پھل چھوٹے-چھوٹے مقامی جڑی بوٹیاں  اور ہماری صحت ہوتے ہیں جو رائی کے دانے کے برابر دیکھنے میں لگتے ہیں۔ سواد میں میٹھا ہونے کی وجہ سے میٹھی گھاس کے طور پر جانا جاتا ہے۔

      53. ۔ بھئی آنولا (phyllanthus niruri) :
      54. یہ ایک بےشمار کارآمد پودا ہے جو بارش کے موسم میں یہاں-* پیدا ہوتے ہیں۔ مقامی جڑی بوٹیاں اور ہماری حفظان صحت جڑی بوٹیاں اور ہماری حفظان صحت جڑی بوٹیاں اور ہماری حفظان صحت جڑی بوٹیاں اور ہماری صحت اس پودے کی اونچائی 1-25 انچ اونچا اور کئی شاخوں والا ہوتا ہے۔ پتّیاں شکل میں آنولے کی پتّیوں کی سی ہوتی ہے اور نچلی سطح پر چھوٹے چھوٹی گول پھل پائے جاتے ہیں۔ یہ جاڑے کے آغاز ہوتے ہوتے پک جاتے ہیں اور پھل اور بیج پک‌کر جھڑ جاتے ہیں اور پودے ختم ہوتے ہیں۔

      55. ۔ جوا (Hisbiscus rosasinensis) :
      56. جوا کا پھول لوگو کے گھروں میں لگایا جاتا ہے۔ یہ دو قسم کا ہوتا ہے-لال اور سفید جو دوا کے کام میں لایا جاتا ہے۔ جوا کا پتا گہرا ہرا ہوتا ہے۔

      57. ۔ گھرتکماری / گھینکوار (Aloe vera) :
      58. یہ ایک سے ڈھائی فٹ بلند معروف  پودا ہے۔ اس کی ڈھائی سے چار انچ چوڑی، نکیلی اور کانٹےدار کناروں والی پتّیاں بےحد موٹی اور گودےدار ہوتی ہے پتّیوں میں ہرے چھلکےکے نیچے گاڑھا، لسلسا رنگین جیلی کے سامان رس بھرا ہوتا ہےجو دوا کے طور پر استعمال کیا جاتا ہے۔

      59. ۔ مہوا (madhuka indica) :
      60. مہوا کا درخت 40-50 فٹ اونچا ہوتا ہے۔ اس کی چھال کالاپن لئے  بھوری  رنگ کی اور اندر سے سرخ ہوتی ہے۔ اس کے پتے 5-9 انچ چوڑے ہوتے ہیں۔ یہ بیضوی، مستطیل، شاخوں کے اگلا حصے پر ذخیرہ میں ہوتے ہیں۔ مہوا کے پھول سفید رسیلے اور موٹے ہوتے ہیں۔ اس میں خوشبو آتی ہے۔ اس کا پکا پھل میٹھا اور کچّا میں ہرے رنگ کا اور پکنے پر پیلا یا نارنگی رنگ کا ہوتا ہے۔

      61. ۔ دوب گھاس (cynodon dactylon) :
      62. دوب گھاس 10-40  سینٹی میٹراونچا ہوتا ہے۔ اس کے پتے 2-10 سینٹی میٹر بھئی آونلہ لمبے ہوتے ہے اس کے پھول اور پھل سال بھر پائے جاتے ہے۔ دوب گھاس دو قسم کے ہوتے ہیں-ہرا اور سفید ہرے دوب کو نیلی یا کالا دوب بھی کہتے ہے

      63. ۔ آنولا (Phyllanthus emblica) :
      64. اس کا درخت 5-10میٹراونچا ہوتا ہے۔ آنولا سواد میں کٹو، تیکھے، کھٹّے، میٹھا، آونلہ اور کسیلے ہوتے ہیں۔ دیگر پھلوں کے مقابلے میں آونلہ میں وٹامن سی زیادہ ہوتی ہے۔ اس کے پھول پتيوں کے نیچے گچّھا  کے طور پر ہوتی  ہے۔ ان کا رنگ ہلکا ہرا اور خوشبودار ہوتا ہے اس کی چھال بھوری رنگ‌کی ہوتی ہیں۔ اس کے چھوٹے پتے 10-13 سینٹی میٹر لمبی ٹہنیوں کے سہارا لگا رہتا ہے اس کے پھل فروری-مارچ میں  پکایا جاتا ہے جو ہراپن لئے پیلا رہتا ہے۔

      65. ۔ پیپل (Ficus religiosa) :
      66. پیپل بہت بڑا درخت ہے جس کی کئی شاخیں ہوتی ہے۔ ان کے پتے گہرے ہرے رنگ‌کے دل کی شکل ہوتے ہے۔ ان کی جڑ، پھل، چھال، جٹا، دودھ تمام استعمال میں لائے جاتے ہیں۔ ہمارے ہندوستان میں پیپل کو مذہبی اہمیت ہے۔

      67. ۔ چھوئی موئی / لجولی (Mimosa pudica) :
      68. چھوئی موئی نمی والے مقامات میں زیادہ پائی جاتی ہے اس کے چھوٹے پودے میں کئی شاخیں ہوتی ہے۔ ان کے پتے کو چھونے پر یہ سکڑ‌کر آپس میں سٹ جاتی ہے۔ اس سبب اسے چھوئی موئی نام سے جانا جاتا ہے اس کے پھول گلابی رنگ‌کے ہوتے ہیں۔

      69. ۔ کریلا (Mamordica charantia) :
      70. یہ عام طور پر عمل میں لائی جانے والی کارآمد ہری سبزی ہے جو لتیدار ہوتی ہے۔ اس کا رنگ گہرا ہرا اور بیج سفید ہوتا ہے۔ پکنے پر پھل کا رنگ پیلا اور بیج لال ہوتا ہے۔ یہ ذائقہ میں کڑوا ہوتا ہے۔

      71. ۔ پپلی (Piper longum) :
      72. عام طور پر  یہ گرم مسلے  مواد کے طور پر جانا جاتا ہے۔ پپلی کی کومل بیل 1-2 میٹر زمین پر پھیلتی ہے یہ گہرے ہرے رنگ‌کےچکنے پتے 2-3 انچ لمبے اور 1-3 چوڑے دل کی شکل کے ہوتے ہیں۔ اس کے کچّے پھل پیلے ہوتے ہیں اور پکنے پر گہرا ہرا پھر کالا ہو جاتا ہے۔ ا س کے پھلوں کو ہی پپلی کہتے ہیں۔

      73. ۔ عمرد (Psidium guayava) :
      74. امرود ایک پھلدار درخت ہے۔ یہ عام طور پر لوگوں کے گھر کے آنگن میں پایا جاتا ہے اس کا پھل کچّا میں ہرا اور پکنے پر پیلا ہو جاتا ہے۔ قسم-یہ سفید اور گلابی حمل والے ہوتے ہیں۔ اس کے پھول سفید رنگ‌کےہوتے ہیں۔ یہ میٹھا کسیلا، ٹھنڈا مزیدار پھل ہے جو آسانی سے میسّر ہوتا ہے۔

      75. ۔ بھٹکٹیا / رینگنی (Solanum Xanthocarpum) :
      76. یہ ہر زمین میں پائے جانے  والے خار دارہلکی ہری جڑی ہے۔ اس کے کانٹےدار پودے 5-10 سینٹی میٹر لمبے ہوتے ہے۔ اس کے پھول بیگنی رنگ‌کے پائے جاتے ہیں۔ اس کے پھ