ہوم / صحت / آیوش / سددھا
شیئر
Views
  • صوبہ Open for Edit

سددھا

سددھ نظام ہندوستان میں دوا کے سب سے پرانے نظاموں  میں سے ایک ہے۔ ' سددھ  ' لفظ کا معنی ہے کامیابیاں اور سددھ، صوفی مرد ہوتے تھے جو دوا میں نتیجہ حاصل کرتے تھے۔ ہے۔ اس حصے میں انہی نتائج اور ان کا موجودہ استعمال بتایا گیا ہے۔

سددھ کی ابتداء

سددھ نظام ہندوستان میں دوا کے سب سے پرانے نظاموں میں سے ایک ہے۔ ' سددھ ' لفظ کا معنی ہے کامیابیاں اور عالم غیب، صوفی مرد ہوتے تھے جو دوا میں نتیجہ حاصل کرتے تھے۔ ایسا کہا جاتا ہے کہ اٹھارہ سددھوں  نے اس طبی نظام کی ترقی کی سمت میں شراکت دیا۔ سددھ ادب تمل زبان میں لکھا گیا ہے اور یہ ہندوستان کے تمل ہندوستانی  بولنے والے  حصے میں اور غیرملک میں بڑے پیمانے پر مشہور ہے۔ سددھ نظام کافی حد تک قدرتی علاج میں اعتماد رکھتی ہے۔

سددھ کی تاریخ

عالم کے تخلیق کار کے ذریعے انسانی ذات کو کیا گیا مختص اصل سابق سمت میں اور صحیح طور پر ہندوستان کے گرم اور زرخیر علاقے میں تھا۔ یہی سے انسانی ذات نے اپنی تہذیب اور کیریئر شروع کئے۔ اس لئے، ہندوستان کو بنا کسی شک کے ایسا ملک کہا جا سکتا ہے جہاں سے انسان تہذیب اور تہذیب کی پیدائش اور پھیلاؤ ہوا۔ ہندوستانی تاریخ کے مطابق آریوں کے آنے سے پہلے، دروڑ ہندوستان کے پہلے شہری  تھے جن میں سے تمل سب سے اہم تھے۔ تمل نہ صرف سب سے پہلے مہذب ہوئے بلکہ یہ وہ لوگ بھی تھے جنہوں نے کنہی بھی دیگر قدیم لوگوں کے مقابلے میں تہذیب میں کافی تیزی سے ترقی کی۔ ہندوستان کی زبانیں دو عظیم طبقات میں تقسیم تھیں، شمال میں بنیادی طور پر سنسکرت اور جنوب میں آزاد بنیاد کے ساتھ دروڑ زبان۔ طبی سائنس انسان کی صحت اور وجود بچائے رہنے کے لئے بنیادی اہمیت کا حامل ہے اور اس لئے اس کا انسان کے ساتھ ارتقاء ہوکر تہذیب کی شکل میں ترقی ہوئی ہوگی۔ اس لئے اس وقت کے عین مطابق پوائنٹ کو مقرر کرنے کی کوشش کرنا جب ان طریقوں کی شروعات ہوئی، ایک طرح سے ٹھیک  ہے۔ وہ چرنتن ہیں، وہ انسان کے ساتھ شروع ہوئیں اور اس کے ساتھ ہی ختم ہو سکتی ہیں۔ سددھ جنوب میں پھلا پھولا اور شمال میں آیوروید مشہور تھا۔ ان نظاموں کی بانی کے طور پر  کسی شخص کا نام دینے کے  بجائے ہمارے آباواجداد نے عالم کے  تخلیق کار کو اس کا اصل موجد بتایا۔ روایت کے مطابق وہ شیو تھے جنہوں نے سددھ معالج نظام کا علم اپنی بیوی پاروتی کو بتایا جنہوں نے اس کو آگے نندی دیو کو اور انہوں نے سددھر کو منتقل کیا۔ سددھر قدیم دور میں عظیم سائنس داں تھے۔ روایت کے مطابق، سددھ طبی نظام  کے نسب کا کریڈٹ عظیم  سددھ  ' اگستیار ' کو دیا جاتا ہے۔ ان کا کچھ کام ابھی بھی دوا اور جراحی کی معیاری کتابوں کا حصہ ہے اور سددھ معالج کے ذریعے روزمرہ استعمال میں لایا جاتا ہے۔

سددھ  کا اصل نظریات

اس نظام کے اصول اور قاعدہ، بنیادی اور عملی دونوں میں کیمیاوی سائنس میں مہارت کے ساتھ آیوروید سے ایک قریبی یکسانیت ہے۔ اس نظام کے مطابق انسانی جسم کائنات کی نقل ہے اور اسی طرح   سے کھانا اور دوائیں بھی جو اپنے نسب سے باہر ہوتے ہیں۔ آیوروید کی طرح اس نظام کا بھی ماننا ہیں کہ انسانی جسم سمیت کائنات میں تمام مادہ پانچ اصل مادوں یعنی زمین، آب، آگ، ہوا اور آسمان سے بنے ہیں۔ جو کھانا انسانی جسم لیتا ہے اور جن دواؤں کا استعمال کرتا ہے وہ تمام ان پانچ مادوں سے بنے ہیں۔ دواؤں میں موجود مادوں کا تناسب بدلتا ہے اور ان کی برتری یابصورت دیگر کچھ فعل اور دافع امراض نتیجہ کے لئے ذمہ دار ہیں۔ آیوروید کی طرح سددھ نظام بھی انسانی جسم کو تین ہیومرس، سات بنیادی بافتوں اور پاخانہ، پیشاب اور پسینہ جیسے فضلہ مصنوعات کے طور پر مانتا ہے۔ کھانا انسانی جسم کی بنیادی تعمیر سامان مانا جاتا ہے جو ہیومرس، جسم کے بافتوں  اور فضلہ مصنوعات میں عمل شدہ کیا جاتا ہے۔ ہیومرس کا توازن صحت کے طور پر مانا جاتا ہے اور اس میں گڑبڑ یا عدم توازن بیماری یا بیماری پیدا کرتا ہے۔ یہ نظام زندگی میں نجات کے نظریہ سے بھی متعلق ہے۔ اس نظام  پر اعتماد رکھنے والے مانتے ہیں کہ اس حالت کی حصولیابی ادویات اور دھیان کے ذریعے ممکن ہے۔

دوا کیفیت

اس عمل نےدوا کے علم کا ایک خوشحال اور انوکھا خزانہ تیار کیا ہے جس میں دھاتوں اور معدنیات کے استعمال کی مضبوط وکالت کی گئی ہے۔ معدنیات، دوا کیفیت کے علاقے میں علم کی عمل کی گہرائی کے بارے میں کچھ اندازہ دوا کے وسیع درجہ بندی سے کیا جا سکتا ہے، جو مختصر میں نیچے بیان شدہ ہے :

  • پانی میں حل پذیر غیر نامیاتی ' اپپو ' نامی مرکبات کی 25 اقسام ہیں۔ یہ شوریت اور نمک کے مختلف قسم ہیں۔
  • معدنیات دواؤں کی ایسی 64 اقسام ہیں جو پانی میں حل نہیں ہے لیکن آگ میں ڈالنے پر بخارات کا اخراج کرتی ہیں۔ ان میں سے بتّیس قدرتی ہیں اور باقی مصنوعی ہیں۔
  • ایسی 7 دوائیں ہیں جو پانی میں حل نہیں ہیں لیکن گرم کرنے پر بخارات پیدا شدہ کرتی ہیں۔
  • اس نظام نے دھاتوں اور مرکب دھاتوں کے الگ الگ زمرہ بنائے ہیں، جو گرم کرنے پر پگھلتے ہیں اور ٹھنڈا کرنے پر ٹھوس ہو جاتے ہیں۔ ان میں سونا، چاندی، تانبا، ٹن، شیشہ اور لوہا کی طرح کے آئٹم شامل ہیں۔ ان کو خاص طریق کار کے ذریعے جلا (اسنریٹ) کر دوا میں استعمال کیا جاتا ہے۔
  • دواؤں کا ایک گروپ ہے جو گرم کرنے پر سبلمیشن دکھاتا ہے اور اس میں پارا اور اس کے مختلف گروپ جیسے پارے کی ریڈ سلفائڈ، مرکیورک کلورائڈ اور پارے کی ریڈ آکسائڈ وغیرہ شامل ہیں۔
  • سلفر، جو کہ پانی میں نا قابل تحلیل ہے، طبی سائنس میں اور صحت کے رکھ رکھاؤ میں استعمال کے لئے پارے کے ساتھ سددھ دوا کیفیت میں اہم مقام پاتا ہے۔
  • مذکورہ درجہ بندی معدنیات کی تفْصیلی علم اور مطالعے کو دکھاتا ہے جو اس نظام نے علاج کے لئے تیار کیا ہے۔ اس کے علاوہ جانور ذرائع سے حاصل دواؤں ہیں۔ عام امراض اور بیماریوں کے علاج کے لئے اس نظام کی اشاعت اوردستی کتاب ہے۔

 

سددھ میں علم کیمیا


سددھ نظام میں علم کیمیاء  دوا اور کيميا گر ی کے ایک مددگار سائنس کی شکل میں اچھی طرح سے تیار پایا گیا ہے۔ اس کو دوا تیار کرنے اور اصل دھاتوں کے سونے میں تبدیل شدہ صورت کرنے میں کارآمد پایا گیا تھا۔ پودوں اور معدنیات کا علم کئی سطحوں کا تھا اور وہ سائنس کی تقریباً تمام شاخوں سے پوری طرح سے آشنا تھے۔ سددھر کئی طریقہ کار میں تقسیم آپریشن کے بارے میں بھی جان کار تھے جیسے کہ کالسیشں، سبلمیشن، ڈسٹلیشن، فيوزن، سیپریشن کنجنکشن آر کامبنیشن، کنجیلیشن، سائبیشن، فرمنٹیشن، ایكذالٹیشن† یعنی سونے کے استقلال یا بہتر کرنے کے عمل یعنی اس کو نان- وولیٹائل حالت میں لانا یعنی آگ، پاکیزگی، دھاتوں کو جلائے جانے، سیّال  کرنے، نکاسی وغیرہ کا مزاحمت کرنے کی حالت میں لانا۔
یہاں تک کہ سونے اور چاندی کا کیوپیلیشن جو کيميا گر ی میں ایک ضروری عمل ہے جس کے عربوں کے ذریعے کھوجنے کا دعویٰ کیا گیا ہے، بہت وقت سے سددھروں کو معلوم تھی۔
وہ پالی-فارماسسٹ بھی تھے اور کیمْیاوی مادوں کی بائلنگ، ڈذلونگ، پریسپٹیٹنگ اور کویگلیٹنگ میں ملوث تھے۔ ان کے کچھ خفیہ طریقے، خصوصی طور پر آگ کا مزاحمت نہ کر پانے والے سلفر،ہرتال، سندور، آرسینک  جیسے کچھ غیر مستحکم مادوں کی فکسنگ اور مضبوط بنانا وغیرہ ابھی بھی راز بنے ہوئے ہیں۔

سددھ کی طاقت

سددھ نظام ہنگامی معاملات کے علاوہ بیماری کے دیگر تمام اقسام کے علاج میں لائق ہے۔ عام طور پر یہ نظام گٹھیا اور الرجی خرابی کے علاوہ جلد کے مسائل کے تمام قسم، خصوصی طور پر سوریاسس،جنسی طور پر منتقل شدہ  بیماری، پیشاب کی نالی کے انفیکشن، جگر اور گیسٹرو آنتوں کی نالی کےبیماریوں، عام کمزوری، بعد وضع حمل انیمیا، دست اور عام بخار کے علاج میں مؤثر ہے۔

سددھ میں تشخیص  اور علاج

بیماریوں کی تشخیص  میں اس کےسبب کی پہچان شامل ہے۔ عامل کی پہچان نبض، پیشاب، آنکھوں، آواز کے مطالعہ، جسم کے رنگ، جیبھ اور عمل انہضام کے نظام کی حالت کی امتحان کے ذریعے کی جاتی ہے۔ اس نظام نے پیشاب معائنہ کی تفْصیلی عمل تیار کی ہے جس میں اس کے رنگ، بو، کثافت، مقدار اور تیل ڈراپ پھیلاؤ پیٹرن کا مطالعہ شامل ہیں۔ یہ نقطہٴ نظر ایک مجموعی طور پر  ہے اور تشخیص مرض میں شخص کا مکمل طور پر اور ساتھ ہی اس کی بیماری کا مطالعہ شامل ہے۔
علاج کاسددھ نظام اس بات پر زور دیتی ہے کہ علاج  نہ صرف بیماری کے لئے مبنی ہے، بلکہ وہ مریض، ماحول، موسم کی حالت، عمر، جنس، ذات، عادتوں، دماغی فریم، رہائش گاہ مقام، خوردنی اشیا، بھوک، جسمانی حالت، جسمانی تشکیل وغیرہ کو بھی دھیان میں رکھتی ہے۔ اس کا معنی یہ ہے کہ علاج ذہنی ہو، جو یہ مقررہ کرتا ہے کہ تشخیص مرض یا علاج میں غلطیاں کم از کم ہوں۔
سددھ نظام خواتین کی صحتی  متعلق مسائل کو بھی دیکھتی ہے اور سددھ کلاسکس میں کئی نسخے میسّر ہیں جو ایک بہتر زندگی کے لئے مسائل کا مقابلہ کر سکتے ہیں۔ خواتین کی صحت کے لئے دیکھ بھال لڑکی کے پیدا ہونے کے پہلے دن سے ہی شروع ہو جاتی ہے۔ سددھ نظام زندگی کے پہلے تین مہینوں تک دودھ پلانے کی مضبوط وکالت کرتی ہے۔سددھ نظام اس اصول میں اعتماد رکھتی ہے کہ کھانا خود دوا ہے اور نرسنگ مہلت کے دوران، دودھ پلانے والی ماؤں کو لوہا، پروٹین اور فائبر سے بھرپور کھانا لینے کی صلاح دی جاتی ہے تاکہ بچّے اور والدہ دونوں کو کسی بھی غذائی اجزاء امراض سے بچایا جا سکے۔ 15 دنوں میں ایک بار، ماؤں کو پیٹ کے کیڑوں کو ختم کرنے کے لئے آسان علاج لینے کی صلاح دی جاتی ہے تاکہ وہ خون کی کمی سے متاثر نہ ہوں۔
کسی بھی انفیکشن کی وجہ سے بیماریوں یا دیگر کے لئے علاج، خاص طور پر مریض کے امتحان کی بنیاد پر اسلوب ہے۔ ایک بار کوئی لڑکی حیض حاصل کر لے، تو سددھ نظام میں ایسے نسخے تیار ہیں جو اس کو مستقبل میں ایک صحت مند بچّے کو جنم دینے کے لئے اس کا تولیدی نظام کو مضبوط کر سکتے ہیں۔ ساتھ ہی سوقوفئی حیض  ختم ہونے کے مابعد کے مسائل، خاص طور پر ہارمونل عدم توازن سے متعلقہ مسائل کے لئے مؤثر علاج میسّر ہیں۔
سددھ عمل جگر، جلد بیماری خصوصی طور پر سورایسس، گٹھیا مسئلہ، انیمیا، پروسٹیٹ بڑھنے، خونی بواسیر اور پیپٹک السر کے دائمی معاملات کے علاج میں کارگر ہے۔ سددھ دوائیں جن میں پارا، چاندی، آرسینک، شیشہ، اور گندھک شامل ہیں، جماعی بیماریوں سمیت کچھ متعدی بیماریوں کے علاج میں مؤثر پائی گئی ہیں۔ معالج کا دعویٰ کیا ہے کہ سددھ دوائیں ایچ آئی وی / ایڈز کے مریض کے درمیان ظاہر بیشمار کمزور کرنے والی مسئلہ کو کم کرنے میں مؤثر رہی ہیں۔ فی الحال ان دواؤں کی افادیت کے بارے میں زیادہ تحقیق ترقی پر ہے۔

سددھ کا قومی ادارہ (این آئی اس)، چینّئی


قومی سددھ ادارہ (این آئی اس)، چینّئی آيوش محکمہ،وزرات  صحت اور خاندانی فلاح و بہبود  ، حکومت ہند کے کنٹرول کے تحت ایک خود مختار تنظیم ہے. اس کی 14.78 ایکڑ زمین میں تعمیر کی گئی  ہے۔ یہ ادارہ سوسائٹی قانون کے تحت رجسٹرڈ کیا گیا تھا۔ یہ ادارہ سددھ طالب علموں کے لئے پوسٹ گریجوئیشن نصاب منعقد کرتا ہے، اس نظام کے ذریعے علاج دیکھ بھال فراہم کیا جاتا ہے، اس کے مختلف پہلو میں تحقیق منعقد کرتا ہے اور اس سائنس کی ترقی اور تشہیر کو بڑھاوا دیتا ہے۔ یہ نہ صرف سددھ علاج لینے میں ایک اہم ادارہ ہے، یعنی عام عوام اور تمام علاقوں کے لوگوں کو تمل دوا میسّر کرانے کے لئے، بلکہ تحقیقی سرگرمیوں کو فروغ دینے کے لئے بھی۔ یہ ادارہ تمل ناڈو حکومت کے ساتھ ایک مشترکہ منصوبے کے طور پر حکومت ہند کے ذریعے تنصیب کی گئی  ہے۔ سرمایہ خرچ کے لئے حکومت ہند اور ریاستی حکومت  کی حصہ داری 60:40 کے تناسب میں ہے اور دوبارہ خرچ کے لئے 75:25 کے تناسب میں۔ یہ ادارہ ہمارے ملک کو ہندوستان کے معزز وزیر اعظم ڈاکٹر. منموہن سنگھ کے ذریعے 3-9-05 کو وقف کیا گیا۔
ہرسال، اس ادارے میں، 46 طالب علم بھرتی کئے جاتے ہیں اور ان کو پوسٹ گریجوئیشن کی چھے  شاخوں مرتھوم (جنرل میڈیسن)، گنپدم (فارماكولجی)، سرپّ مرتھوم (خاص علاج)، کوزڈیائی مرتھوم (بچہ بیماری)، نوئ ناڈال (سددھ پیتھولاجی) اور ننجو نولم مرتھوا نیتھی نولم (علم سموم اور طبی  علم فقہ) میں معیاری  تعلیم دی جاتی ہے۔ اس ادارے کو تمل ناڈو کے ڈاکٹر یم جی آر میڈیکل یونیورسٹی، چینّئی کے ذریعےسددھ میں پی ایچ ڈی کی ڈگری دینے کے لئے ایک مرکز کی شکل میں منظورکیا گیا ہے۔

ماخذ :


ايوش محکمہ، وزارت صحت اور خاندانی بہبود، حکومت ہند

2.0
اپنی تجاویز ارسال کریں (اگر مذکورہ بالا مواد پر آپ کو کوئی تبصرہ/تجویز دینی ہو تو براہ کرم یہاں درج کریں))
Enter the word
Back to top