ہوم / صحت / زندگی کے سچ / چوٹ سے بچاؤ
شیئر
Views
  • صوبہ Open for Edit

چوٹ سے بچاؤ

اِس مضمون میں چوٹ سے بچاؤ کے موضوع میں تفصیل سے معلومات دی گئی ہے۔

چوٹ سے بچاؤ کی اطلاع کا پھیلاؤ اَور اُس کے مُطابق کام کرنا کیوں ضروری ہے ؟

سالانہ 7،50،000 بچّوں کی چوٹ کی وجہ سے موت ہو جاتی ہے۔دیگر 40 کروڑ سنگین طور پر زخمی ہو جاتے ہے۔اِن میں سے کئی چوٹیں دماغ کو نقصان پہُنچانے والی یا مستقل نقصان پہُنچانے والی ہوتی ہے۔بچّوں میں موت اَور معذوریت کی اہم وجہ چوٹ یا نقصان پہُنچنا ہے۔

سَب سے عام نقصان گِرنے،جلنے یا سڑک حادثہ سے ہوتی ہے۔اِن میں سے زیادہ تر نقصان گھر کے ارد گرد ہی واقع ہوتی ہے۔اِن میں سے سبھی کا بچاؤ کیا جا سکتا ہے۔اَگر سرپرستوں کو یہ پتہ ہو کہ چوٹ پہُنچنے کے بعد کیا کیا جانا چاہئے تو اِن میں سے کئی کی سنجیدگی کم کی جا سکتی ہے۔

چوٹ سے بچاؤ اہم پیغام 1

اَگر سرپرست یا بچّوں کا دھیان رکھنے والے شخص ہوشیار رہیں اَور بچّوں کے کھیلنے کے مقام کو محفوظ رکھا جائے تو بہت سی نقصان ٹالی جا سکتی ہیں۔ 18 مہینے سے لگاکر 4 سال تک کے بچّوں کو جوکھم اَور موت سے بچانا سب سے زیادہ ضروری ہے۔اِن میں سے زیادہ تر حادثات گھر پر ہی ہوتی ہیں۔اِن میں سے سبھی کا بچاؤ کیا جا سکتا ہے۔

گھر پر ہونے والے حادثات کی اہم وجہ ہیں

  • آگ سے جلنا،اسٹوو،اوون،کھانا پکانے کے برتن،گرم کھانا،اُبلتا ہوا پانی،بخارات،گرم گھی یا تیل،پےرافِن لیمپ،استری اَور برقی آلات
  • ٹُوٹے کانچ،چاقو،کینچی یا کلہاڑی سے کٹ جانا
  • پلنگ،کھڑکی،میز یا سیڑھیوں سے گِر جانا
  • سکّے،بٹن یا کِسی گِری کا گَلے میں پھنس جانا
  • بلیچ اَور ڈِٹرجینٹ،پےرافِن یا کیروسِن یا جراثیم کش سے زہر کا اثر پڑنا
  • کھُلے یا ٹُوٹے ہوئے بجلی تار سے کرنٹ لگ جانا یا اُن کے سویچ میں کوئی نُکِیلی مادہ وغیرہ ڈالنا

جو بھی مادہ سرگرم ہو اَور وہ چھوٹے بچّوں کے لئے خطرناک ہو،اُس کو اُن سے دور ہی رکھا جانا چاہئے بچّوں سے لَمبے وقت تَک کام نہیں کروایا جانا چاہئے جِس سے اُن کے لِئے جوکھم پَیدا  ہو جائے یا اُن کی پڑھائی۔تحریر شدہ کی روزمرہ بےترتیب ہو جائے۔بچّوں کو بھاری کام اَور خطرناک ڈِوائس اَور زہریلے کیمیائی اشیاء سے بچایا جانا چاہئے۔

چوٹ سے بچاؤ اہم پیغام 2

بچّوں کو آگ،باورچی خانہ چولہا،لیمپ،ماچس اَور بجلی آلات سے دور رکھا جانا چاہئے۔
حسد،نَنہیں بچّوں میں عام طورپر ہونے والے حادثہ کا مثال ہے۔بچّوں کو کھانا پکانے کا چولہا،اُبلتا ہوا پانی،گرم کھانا اَور گرم استری وغیرہ کو چھُنے سے منع کیا جانا چاہئے۔جلنے سے سنگین نقصان اَور مستقل داغ پڑ سکتے ہیں اَور کئی زخم کھترناک بھی ہو سکتے ہے۔اِن میں سے زیادہ تر حادثہ کو ٹالا جا سکتا ہے۔
جلنے سے حفاظت کی جا سکتی ہے۔

  • نَنہیں بچّوں کو آگ،ماچس اَور سگریٹ سے دور رکھ‌کر
  • اسٹوو وغیرہ کو سپاٹ اَور اُونچی سطح پر رکھ‌کر جِس سے وہ بچّوں کی پہنچ میں نہ ہو اَگر کھُلے میں کھانا پکایا جا رہا ہو تو مٹّی کا چولہا اُس کے ارد گرد بنایا جانا چاہئے۔سیدھے زمین پر آگ جلاکر کھانا نہ بنائیں
  • سبھی کھانا پکانے کے برتن کے ہتھے بچّوں کی پہنچ سے دور رکھے جائیں
  • پیٹرول،پےرافِن،لیمپ،ماچس،لائیٹر،گرم استری اَور بجلی تار وغیرہ کو بچّوں کی پہنچ سے دور رکھنی چاہئے

بچّے اَگر پاوَر ساکیٹ میں ہاتھ ڈالتے ہے،تب اُن کو سنگین نقصان ہو سکتا ہے۔پاوَر ساکیٹس کو صحیح طریقے سے بند کیا جانا چاہئے جِس سے وہ بچّوں کی پہنچ سے دور ہوں۔ بجلی کی تاروں کو بچّوں کی پہنچ سے دور رکھا جانا چاہئے۔کھُلے بجلی کی تار خاص کر زیادہ خطرناک ہوتے ہیں۔

چوٹ سے بچاؤ اہم پیغام 3

بچّوں کو اوپر چڑھنا بَڑا اَچھا لگتا ہے۔سیڑھِیاں،بالکنی،چھت،کھڑکی اَور کھیلنے کا مقام محفوظ رہے جِس سے بچّوں کو گِرنے سے بچایا جا سکے۔ چوٹ،ہڈّی ٹُوٹنے اَور سنگین چوٹوں کی اہم وجہ بچّوں کا گِرنا ہوتا ہے اَور اس طرح کے حادثات کو روکا جا سکتا ہے۔

  • بچّوں کو غیر محفوظ مقامات پر چڑھنے سے روکا جائے
  • بالکنی،کھڑکی اَور سیڑھیوں کو ریلِنگ لگاکر محفوظ کیا جائے
  • گھر کو صاف اَور روشنی سے شامل رکھا جائے

چوٹ سے بچاؤ اہم پیغام 4

چاقو،کینچی،تیز دھار والے یا نوک والے اوزار یا ٹُوٹا ہوا کانچ،نقصان پہُنچا سکتے ہیں۔ایسے مادوں کو بچّوں کی پہنچ سے دور رکھا جانا چاہئے۔
ٹُوٹے ہوئے کانچ سے جسم کے عضو کٹ سکتے ہیں اَور اُس سے خون نِکل سکتا اَور انفیکشن بھی پھَیل سکتا ہے۔کانچ کی بوتل کو بچّوں کی پہنچ سے دور رکھا جانا چاہئے اَور کھیلنے کے مقام کو ٹُوٹے کانچوں سے الگ رکھنا چاہئے۔چھوٹے بچّوں کو یہ سِکھایا جائے کہ وہ ٹُوٹے ہوئے کانچ کو ہاتھ نہ لگائیں،تھوڑے بَڑے بچّوں کو اُن کو صحیح مقام پر پھینکنے کی تعلیم دی جانی چاہئے
چاقو،رےزر اَور کینچی کو چھوٹے بچّوں کی پہنچ سے دور رکھا جانا چاہئے۔بَڑے بچّوں کو اِن کے محفوظ استعمال کا طریقہ سِکھایا جانا چاہئے
دھاردار اوزار،مشین اَور جنگ لگی ہوئی کین کی وجہ سے جراثیم زدہ زخم ہو سکتے ہیں۔بچّوں کے کھیلنے کا مقام اِن سب سے دُور ہونا چاہئے۔گھر کا کچرا،جِس میں ٹُوٹی ہوئی بوتل اَور پُرانے ڈبّے وغیرہ ہوں،اُن کو صحیح طریقے سے پھینکا جانا چاہئے
دیگر چوٹوں سے بچاؤ کے لئے بچّوں کو محفوظ طریقے سِکھائے جا سکتے ہیں،جیسے پتھر نہ پھینکنا،دھاردار اشیاء کا استعمال نہ کرنا،جیسے چاقو اَور کینچی وغیرہ

چوٹ سے بچاؤ اہم پیغام 5

بچّوں کو چیزیں اپنے منھ میں ڈالنا اَچھا لگتا ہے۔ایسے میں چھوٹی چیزیں اُن کی پہنچ سے دور رکھی جانی چاہئے جِس سے وہ اُن کے گَلے میں پھنس نہ جائے
کھیلنے اَور سونے کے مقام کو چھوٹی چیزیں جیسے بٹن،سکّے،بیج وغیرہ سے غےر دور رکھا جانا چاہئے
بہت چھوٹے بچّوں کو مونگ پھلی،چھوٹے حصوں میں بنٹا ہوا کھانا یا نَنہی ہڈیوں اَور بیجوں سے شامل کھانا نہیں دی جانی چاہئے۔
چھوٹے بچّوں کو اُن کے کھانے کے وقت کبھی بھی اَکیلا نہی چھوڑنا چاہئے۔اُن کے کھانے کو آسان بناکر دیا جانا چاہئے
کھانسی آنا،سانس روکنا اَور اونچی آواز میں زور سے چِلّانا یا سانس لینے اَور آواز نِکالنے میں پریشانی ہونا،یہ گَلے میں کِسی چیز کے پھنس جانے کے صفت ہیں۔گَلے میں کچھ بھی پھنسنا،جان جوکھم میں ڈالنے والی ہنگامی صورت حال ہوتی ہے
اَگر بچّے کو کِسی نے بھی کوئی چیز منھ میں لیتے ہوئے نہ دیکھا ہو،تب بھی اَگر بچّہ کِسی قسم کا الگ علامات ظاہر کرتا ہے تو پریوار کے ممبروں کو اُس کے گَلے کی جانچ کرنی چاہئے

چوٹ سے بچاؤ اہم پیغام 6

زہر،دوائیاں،بلیچ،تیزاب اَور مائع ایندھن جیسے پےرافِن کو کبھی بھی پانی پینے کی بوتل میں نہی رکھا جانا چاہئے۔اس طرح کے تمام مائع مادوں کو خاص بوتلوں میں رکھا جانا چاہئے جو کہ بچّوں کی پہنچ سے دور ہو بچّوں کو زہر کا اثر ہونا بَڑا خطرناک ہو سکتا ہے۔بلیچ،جراثیم کش اَور چوہا مار دوا،پےرافِن اَور گھریلو ڈِٹرجینٹ سے بچّوں کو مستقل نقصان ہو سکتا ہے کئی زہر ایسے ہوتے ہیں جِن کا صرف نِگلا جانا ہی زہریلا نہیں ہوتا وَرنہ مندرجہ ذیل قسم سے جسم میں جانے پر بھی وہ دماغ اَور آنکھوں کو مستقل نقصان پہُنچا سکتے ہیں،اَگر اُن کو-

  • سونگھا جائے
  • بچّے کی آنکھ یا جلد پر لگ جائے
  • بچّوں کے کپڑا پر لگ جائے

اَگر زہر کو سَرد مشروب،بیئر کی بوتل،جار یا کپ میں رکھا جائے،تب بچّے غلطی سے اُن کو پی سکتے ہیں۔تمام زہر،کیمیا۔کیمیا اَور دوائییوں کو اُن کے صحیح بوتل اَور برتن میں صحیح طریقے سے بند کر رکھا جانا چاہئے۔ ڈِٹرجینٹ،بلیچ،کیمیا اَور دوائیوں کو بچّوں کی پہنچ سے دور رکھی جانی چاہئے۔اُن کو صحیح طریقے سے بند کر لیبل لگا دی جانی چاہئے۔اُن کو کِسی پیٹی میں بند کر یا کافی اونچائی پر رکھا جانا چاہئے جِس سے بچّے وہاں پہُنچ نہ سکیں۔

بالغوں کے لئے بنائی گئی دوائییاں چھوٹے بچّوں کے لئے خطرناک ہو سکتی ہیں۔بچّوں کو صرف اُن کے لِئے لِکھے گئے نسخے کے مُطابق ہی دوائی دی جانی چاہئے نہ کہ کِسی بالِغ یا دیگر بچّے کے لئے لِکھی گئی دوائی۔ اینٹیبایوٹِکس کا زیادہ یا غلط استعمال کرنے سے بچّوں میں بہرےپن کا مسئلہ آ سکتا ہے۔بچّوں کو دوائییاں صحیح نسخے کے مُطابق ہی دی جانی چاہئے۔ایسپرِن سے سب سے زیادہ نقصان ہوتا ہے۔اس لئے اِس کو بچّوں کی پہنچ سے دور رکھنا چاہئے۔

چوٹ سے بچاؤ اہم پیغام 7

بچّے مشکل سے دو منٹ کے وقت میں ہی پانی میں ڈُوب سکتے ہیں اَور کافی کم مقدار میں پانی ہونے پر بھی یہ ہونے کا خدشہ ہوتا ہے۔پانی کے نزدیک ہونے پر بچّوں کو کبھی بھی اَکیلے نہیں چھوڑنا چاہئے
کنواں،ٹیوب اَور پانی کی بالٹیوں کو ڈھک‌کر رکھنا چاہئے
بچّوں کو تھوڑا بَڑا ہونے پر تیراکی سِکھانی چاہئے جِس سے وہ ڈُوبنے سے بچ سکیں
بچّوں کو تُند مِزاجی سے سے بہتے ہوئے پانی میں یا اکیلے میں تَیرنے کی اجازت نہ دیں

چوٹ سے بچاؤ اہم پیغام 8

5 سال سے کم عمر کے بچّوں کو راستے پر زیادہ خطرہ ہوتا ہے۔اُن کے ساتھ ہمیشہ کوئی نہ کوئی ہونا چاہئے جو اُن کو سڑک پر محفوظ چلنے کے طریقے سمجھا سکیں جِس سے وہ آگے چل‌کر سڑک پر محفوظ رہیں چھوٹے بچّے سڑک پر دَوڑنے سے پہلے سوچتے نہی ہیں۔پریوار کے ممبروں کو اُن کا خاص دھیان رکھنا چاہئے بچّوں کو سڑک کے نزدیک نہیں کھیلنا چاہئے،خاص کر اَگر وہ گیند سے کھیل رہے ہوں بچّوں کو سڑک کے ایک طرف چلنا سِکھایا جانا چاہئے

سڑک پار کرتے وقت بچّوں کو سِکھائیں کہ وہ

  • سڑک کے ایک طرف کھَڑے رہیں
  • سڑک کو پار کرتے وقت دونوں طرف دیکھیں
  • کار یا دیگر گاڑیوں کے آمد ورفت پر دھیان دیں
  • کِسی بَڑے آدمی کا ہاتھ پکڑ سڑک پار کریں
  • پیدل چلیں،دَوڑے نہیں

بَڑے بچّوں کو چھوٹے بچّوں کا دھیان رکھنے کے لئے کہا جانا چاہئے بَڑے بچّوں میں سائیکل کی وجہ سے ہونے والے حادثہ عام ہے۔پریوار اپنے سائیکِل چلانے والے بچّوں کو بچا سکتے ہیں اَگر اُن کو صحیح سڑک اصولوں کا علم ہو۔سائیکِل چلاتے وقت بچّوں کے ذریعے ہیلمیٹ یا سر کی حفاظت کرنے والے اسباب پہننے چاہئے

بچّے اَگر کار کی پَہلی سیٹ پر یا غیر محفوظ طور پر ٹرک میں سفر کر رہے ہوں تو وہ سب سے زیادہ غیر محفوظ ہوتے ہیں معقول علاج سہولت میسّر ہونے تَک مندرجہ ذیل ابتدائی علاج کو استعمال میں لایا جانا چاہئے۔

ابتدائی طبی صلاح :

جلنے کے لئے ابتدائی طبی امداد

  • اَگر بچّے کے کپڑے میں آگ لگی ہو تو اُس کو جلدی سے ایک کمبل میں لپیٹیں یا زمین پر لوٹ پوٹ کر آگ سے بچائیں
  • جلے ہوئے حصے کو جلدی سے ٹھَنڈا کریں۔کافی سارا ٹھَنڈا اَور صاف پانی استعمال کریں۔اَگر حسد زیادہ ہے،تب بچّے کو کِسی ٹب یا پانی بھرے حوض میں رکھیں۔جَلے ہوئے حصے کو ٹھَنڈا ہونے میں آدھے گھنٹے کا وقت لگ سکتا ہے۔
  • متاثر حصے کو سُوکھا اَور صاف رکھیں اَور اُس کو ہَلکے بینڈیج سے باندھ دیں۔اَگر حسد ایک سکّے کے شکل سے زیادہ ہے یا حسد سے بہاؤ ہو رہا ہے،تب بچّے کو صحت امدادی مرکز لے جائیں۔اَگر پَھپھولے ہو رہے ہیں،تب اُن کو پھوڑے نہیں۔وہ متاثر حصے کی حفاظت کے لئے ہوتے ہے۔
  • اَگر جَلے حصے پر کچھ چِپک گیا ہو تو اُس کو کھینچے بھی نہی۔جلے ہوئے مقام پر ٹھَنڈے پانی کے علاوہ کچھ بھی نہ ڈالیں۔
  • بچّے کو کوئی مائع جیسے پانی یا پھلوں کا رس اَور اُس میں نمک اَور شکر ڈال‌کر دیں۔

بجلی کرنٹ لگ جانے پر ابتدائی طبی امداد

  • اَگر بچّے کو بجلی کرنٹ لگ گیا ہے یا آگ پکڑ لی ہے،تب بچّے کو چھُونے سے پہلے بجلی فراہمی کو بند کر دیں۔اَگر بچّا بےہوش ہو گیا ہے،تب اُس کے جسم کو گرم رکھیں اَور فوراً طبی مدد لیں
  • اَگر بچّے کو سانس لینے میں تکلیف ہو رہی ہے یا وہ سانس نہیں لے رہا ہے،تب اُس کو سِیدھا لِٹاکر اُس کے منھ کو تھوڑا ٹیڑھا کریں۔اُس کے نتھنے دَباکر منھ میں زور سے سانس بھریں۔کافی زور سے سانس بھریں جِس سے اُس کا سینہ پھُول سکے۔اِس کو تب تک کریں جب تک بچّا سانس نہیں لینے لگتا

گِرنے یا سڑک حادثوں کے وقت ابتدائی طبی امداد

  • اَگر چوٹ سر میں یا ریڑھ کی ہڈّی میں ہے،تب وہ خطرناک ہو سکتی ہے کیونکہ اِن سے مستقل لَقْوَہ ہو سکتا ہے یا یہ زندگی کو جوکھم میں ڈال سکتی ہے۔سر اَور پیٹھ کی ہلچل کو قابو میں لیں اَور پیٹھ کو کسی بھی قسم کی ہلچل سے بچائیں جِس سے آگے چوٹ نہ لگے۔
  • اَگر بچّا ہِل نہیں پا رہا یا بہت زیادہ درد میں ہے تو اِس کا مطلب ہے کہ اُس کی ہڈی ٹُوٹ گئی ہے۔متاثر حصے کو نہ ہِلائیں۔اُس کو سِیدھا اَور آسان رکھیں اَور جلدی سے طبی مدد لیں۔
  • اَگر بچّا بےہوش ہے،تب اُس کے جسم کو گرم رکھیں اَور جلدی سے طبی مدد لیں
  • گہری چوٹ اَور زخموں کے لئے متاثر حصے کو ٹھنڈے پانی سے دھوئیں یا اُس پر 15 منٹ کے لئے برف رکھیں۔برف کو سِیدھے جلد پر نہیں رکھنا چاہئے۔چوٹ لگے مقام اَور برف کے درمیان ایک کپڑا رکھیں۔15 منٹ کے بعد برف ہٹا دیں اَور 15 منٹ دیکھیں۔اِس عمل کو ضرورت پڑنے پر دوہرائیں۔ٹھنڈک سے درد،سوجن اَور زخم کو ٹھِیک ہونے میں مدد مِلے‌گی۔

کٹنے اَور چھِلنے پر ابتدائی طبی امداد

چھوٹے کٹاو اَور چھِلنا

  • زخم کو صاف پانی اَور صابن سے دھوئیں
  • زخم کے آس پاس کی جلد کو سُکھا لیں
  • زخم کو صاف کپڑے سے ڈھک‌کر اُس پر بینڈیج باندھ دیں
  • گَہرے زخموں کے لئے
  • اَگر زخم میں کانچ کا حصہ یا کوئی دیگر مادہ گھُسی ہوئی ہو تو اُس کو نہ نِکالیں۔مُمکِن ہے کہ اس کےسبب زخم دَبی ہوئی ہو اَور اُس کو نِکالے جانے پر زیادہ خون بہاو ہونے لگے
  • اَگر بچّے کو انتہائی خون بہاو ہو رہا تو متاثر حصے کو سینہ سے اوپر رکھ‌کر زخم کی الٹی سمت میں دَباؤ دیں۔اِس میں صاف کپڑے کا ایک بندھن بناکر اُس کو خون کے روکنے تَک باندھا جا سکت ہے۔
  • کِسی قسم کا پتّا یا دیگر لیپ وغیرہ زخم پر نہ لگائیں،اِس سے انفیکشن ہو سکتا ہے۔
  • زخم پر بینڈیج باندھے۔سوجن ہونے پر پَکّا نہ باندھیں
  • بچّے کو صحتی مرکز پر لے جائیں اَور جلدی سے طبی مدد میسّر کروائیں۔صحتی اہلکار سے پوچھیں کہ بچّے کو ٹِٹنس کا ٹیکہ لگ سکتا ہے

گَلے میں کچھ پھنسنے پر ابتدائی طبی امداد :

  • اَگر بچّا کھانس‌کر اُس مادہ کو گَلے سے باہر نِکالنا چاہتا ہے،تب اُس کو پریشان نہ کریں اَور ایسا کرنے دے۔اَگر مادہ آسانی سے نہیں نِکل رہی ہو،ایسے میں اُس کو جلدی سے بچّے کے منھ سے نِکالنے کی کوشش کریں
  • اَگر مادہ پھر بھی بچّے کے گَلے میں پھنسی رہتی ہے،تب

نوزائیدہ بچہ اَور چھوٹے بچّوں کے لئے

سر اَور گَلے کو سہارا دیں۔بچّے کے منھ کو نیچے رکھنے کی کوشش کریں۔کندھے کے بیچ پانچ بار گھونسا ماریں۔اب بچّے کو سِیدھا کر اُس کے سینہ پر دَباکر مادہ کو باہر نِکالنے کی کوشش کریں۔اِس عمل کو دو تین بار دوہرائیں جب تک کہ پھنسی ہوئی مادہ باہر نہیں نِکل جاتی۔اَگر آپ اِس طریقے سے مادہ کو نہیں نِکال پا رہے ہیں تب جلدی سے طبی مدد لیں۔

بَڑے بچّوں کے لئے

بچّے کے پیچھے کھَڑے رہ‌کر اُس کے سینہ پر اپنا ہاتھ رکھیں۔اب اُس کو پسلیوں کے پاس سے زور سے دَبائیں۔پیچھے سے بھی دَباتے ہوئے مادہ کے باہر نِکل جانے تَک اِس عمل کو دوہرائیں۔اَگر اِن کوششوں سے مادہ باہر نہیں نِکلتی ہے،تب طبی مدد لیں۔

سانس کی تکلیف یا ڈُوبنے پر ابتدائی طبی امداد

اَگر آپ کو ایسا لگتا ہے کہ بچّے کا سر یا گَلا نقصان پہنچا ہو،تب اُس کو نہ ہِلائیں اَور مندرجہ ذیل احتیاطی تدابیر پر عمل کریں-

  • اَگر بچّے کو سانس لینے میں تکلیف ہو رہی ہے یا وہ صحیح سے سانس نہیں لے پا رہا ہے،تب اُس کو سِیدھا لِٹاکر اُس کے منھ کو تھوڑا سا ٹیڑھا کریں۔اُس کے نتھنے دَباکر منھ میں زور سے سانس بھریں۔سانس اِتنی زور سے بھریں کہ اُس کا سینہ پھُول سکیں۔اِسے  تب تک کریں جب تک بچّہ سانس نہیں لینے لگتا
  • اَگر بچّہ سانس لے رہا،لیکِن بےہوش ہو تو اُس کو لوٹ پوٹ کریں جِس سے اُس کی زبان سے سانس لینے میں رکاوٹ نہ پیدا ہو

زہریلے اثر پر ابتدائی طبی امداد

  • اَگر بچّے نے زہر کھا لیا ہے تب اُس کو اُلٹی وغیرہ کروانے کی کوشش نہ کریں،اِس سے بچّہ اور زیادہ بیمار ہو سکتا ہے
  • اَگر زہر بچّے کے کپڑا یا جلد پر ہے،کپڑے کو جلدی سے ہٹائیں اَور کافی سارا پانی ڈالیں۔جلد کو کئی بار صابن سے صاف کریں
  • اَگر زہر بچّے کی آنکھوں میں چلا گیا ہے،تب آنکھوں کو تقریباً 10 منٹ تَک اچھے سے دھوئیں
  • بچّے کو جلدی سے صحتی مرکز یا ہسپتال میں لےکر جائیں۔اَگر مُمکِن ہو تو جِس زہر کا اثر ہوا ہے،اُس کا کچھ عضو یا اُس کی بوتل ساتھ لے جائیں۔بچّے کو جتنا ہو سکے اُتنا غیر متحرک اَور پرسکون رکھنے کی کوشش کریں۔
  • ماخذ : یونیسیف

2.81818181818
اپنی تجاویز ارسال کریں (اگر مذکورہ بالا مواد پر آپ کو کوئی تبصرہ/تجویز دینی ہو تو براہ کرم یہاں درج کریں))
Enter the word
Back to top