ہوم / صحت / بیماری کی علامات اور اقدامات / ہیپیٹائٹِس ( ورمِ جگر )
شیئر

ہیپیٹائٹِس ( ورمِ جگر )

اِس حصے میں اہم متعدی بیماری ہیپیٹائٹِس کی علامات ، وجہ ، تشخیص مرض ، انتظام اَور روک تھام کی معلومات دی گئی ہے ۔

تعارف


ہیپیٹائٹِس ( ورمِ جگر  ) لفظ کا استعمال جگر کی سوجن ( سوےلِنگ ) کو واضح کرنے کے لئے کیا جاتا ہے ۔ یہ بیماری وائرل نقل حرکت یا جگر کے الکوحل جیسے نقصان دہ مادوں کے رابطہ میں آنے میں کی وجہ سے ہوتا ہے ۔ اِس کی علامات بہت محدود یا نہ کے برابر ظاہر ہو سکتے ہے ، لیکِن اِس میں اکثر  پیلیا ، انتہائی تھکان ( بھوک کم لگنا ) اَور بیماری کا خطرہ بڑھ جاتا ہے ۔ ہیپیٹائٹِس کے دو ٹائپ ہوتے ہے ایکیوٹ ( شروعاتی ) اَور کرانِک ( طویل مدتی ) ہیپیٹائٹِس شروعاتی یعنی شدید سر درد ( ایکیوٹ ہیپیٹائٹِس ) کی حالت شروعات سے لےکر کم از کم چھے مہینے تَک رہتی ہے ۔
پُرانی یعنی دائمی یا بوسیدہ ( کرانِک ہ یپیٹائٹِس ) یہ لَمبے وقت تَک بنی رہتی ہے ۔ وائرس کا گروہ جیسے کہ ہیپیٹائٹِس وائرس بیماری کو پیدا کرنے کے لئے جانا جاتا ہے لیکِن یہ کچھ زہردار مادوں ( خصوصی طور پر خاص الکوہلس ، تجویز کردہ دواؤں ، کچھ صنعتی انضمام اَور پودوں ) اَور دوسری طرح کے انفیکشنس اَور آٹوئمیون کی وجہ سے بھی ہو سکتا ہے ۔

ہیپیٹائٹِس کے قسم


ہیپیٹائٹِس کے خاص درج ذیل قسم ہے :

ہیپیٹائٹِس اے

یہ بیماری ہیپیٹائٹِس اے وائرس کس وجہ سے ہوتا ہے ۔ یہ ہیپیٹائٹِس وائرل کا عام شکل ہے ۔ یہ بیماری اُن علاقوں میں پایا جاتا ہے ، جہاں صفائی اَور پاخانہ دخلی  کا مناسب انتظام نہیں ہوتا ہے ۔ عام طور پر یہ بیماری مُنہ کے ذریعے یا پاخانہ نجاست کے ذریعے پھَیلتا ہے ۔ یہ عام طور پر لمحاتی ( ایکیوٹ / شروعاتی یعنی شدید سر درد  ) انفیکشن ہے ۔ اِس کی علامت تین مہینے کے اندر سے ختم ہو جاتے ہیں ۔ ہیپیٹائٹِس اے کا دواؤں کا استعمال کرنے کے علاوہ کوئی خاص علاج نہیں ہے ۔ اِس کی علامات کو دور کرنے میں درد  میں کمی کرنے والی دوائیں جیسے کہ اِبُپروفین مدد کرتی ہے ۔

 

ہیپیٹائٹِس  بی

یہ بیماری ہیپیٹائٹِس  بی وائرس کی وجہ سے ہوتا ہے ۔ یہ خون اَور جسم سے نِکلنے والے جراثیم زدہ بہاؤ جیسے کہ منی اَور اندام نہانی کے مائع مادوں میں پایا جاتا ہے اس لئے عام طور پر یہ غیر محفوظ سیکس اَور پہلے سے استعمال کی گئی سوئیوں کے دوبارہ استعمال کرنے سے پھَیلتا ہے ۔ ہیپیٹائٹِس  بی ڈرَگس لینے والوں میں بالخصوص  سے پایا جاتا ہے ۔ یہ ہندوستان سَمیت دنیا کے مختلف حصوں جیسے کہ چین ، درمیانی اَور جنوب مشرقی ایشِیا اَور ذیلی سہارا کے افریقی ممالک میں خصوصاً پایا جاتا ہے ۔ ہیپیٹائٹِس  بی سے جراثیم زدہ زیادہ تر لوگوں کو وائرس سے لڑنے اَور  انفیکشن سے پوری طرح ٹھِیک ہونے میں دو مہینے لگتے ہیں ۔ اِس انفیکشن کے ساتھ جینا تکلیف دہ ہو سکتا ہے لیکِن عام طور پر یہ کِسی مستقل نقصان کا سبب نہیں بنتا ہے ۔ ہالانکہ ، لوگوں کے ایک چھوٹے سے اقلیتی طبقے میں لَمبی مہلت تَک انفیکشن کو  بڑھاوا مل  سکتا ہے تب اِس کو کرونِک ہیپیٹائٹِس  بی کے طور پر جانا جاتا ہے ۔ ہیپیٹائٹِس  بی کے لئے ٹیکا میسّر ہے جو کہ اعلیٰ خطرہ والے گروہ کے لوگوں جیسے کہ نشہ کرنے والوں کے لئے سفارش کی جاتی ہے ۔

ہیپیٹائٹِس سی

یہ بیماری ہیپیٹائٹِس سی وائرس کی وجہ سے ہوتا ہے ۔ بہت حد تک یہ وائرس جراثیم زدہ شخص کے خون ، لعاب دہن ، منی اَور اندام نہانی سے نِکلنے والے مائع مادوں میں پایا جاتا ہے ۔ یہ وائرس خصوصی طور پر خون میں مرکوز ہوتا ہے اس لئے یہ عام طور پر ' خون سے خون ' رابطہ کے ذریعے پھَیلتا ہے ۔ کبھی کبھی ہیپیٹائٹِس سی کی علامات صاف دِکھائی نہیں دیتا ہے یا اِس کی  علامت فلو کو غلطی سے سمجھ لیا جاتا ہے اس لئے کئی لوگ یہ جان نہیں پاتے ہے کہ وہ ہیپیٹائٹِس سی‌کے وائرس سے جراثیم زدہ ہے ۔ بہت سارے لوگانفیکشن  سے لڑ‌کر وائرس سے آزاد ہو جاتے ہے ۔ بچا ہوا وائرس کئی سالوں تَک جسم میں پڑا رہتا ہے ۔ اِس کو کرونِک ہیپیٹائٹِس سی‌کے طور پر جانا جاتا ہے ۔ کرونِک ہیپیٹائٹِس سی کا علاج اینٹی وائرل دواؤں کے ذریعے کیا جا سکتا ہے اَگرچہ اِن دواؤں کا صحت پر ضمنی اثرات بھی پڑتا ہے ۔ مَوجُودَہ وقت میں ہیپیٹائٹِس سی کے لئے کوئی ٹیکہ میسّر نہیں ہے ۔

الکہالِک ہیپیٹائٹِس

کئی سالوں تَک زیادہ مقدار میں الکوحل کا استعمال کرنے سے لیور کو نقصان پہُنچتا ہے جو کہ اِس ہیپیٹائٹِس کی رہنمائی کرتا ہے ۔ اس طرح کے ہیپیٹائٹِس کو الکہالِک ہیپیٹائٹِس کے نام سے جانا جاتا ہے ۔ یہ اندازہ ہے کہ زیادہ مقدار میں نشیلی مادہ لینے والوں میں کچھ حد تک الکہالِک ہیپیٹائٹِس ہوتا ہے ۔ عام طور پر اِس حالت میں اِس کی کوئی صاف علامت دِکھائی نہیں دیتی ہے اَور اِس کا پتہ خون ٹیسٹ کے ذریعے ہی لگایا جا سکتا ہے ۔ اَگر الکہالِک ہیپیٹائٹِس سے متاثر شخص مسلسل الکحل کا استعمال کرتا ہے ۔ یہ حالت اصل میں اُس کے لِئے خطرناک ہے کیونکہ اِس سے سِروسِس تیار کر اَور لیور فیل کی امکان رہتی ہے ۔

ہیپیٹائٹِس کے نایاب قسم

ہیپیٹائٹِس ڈی

ہیپیٹائٹِس ڈی وائرس کی وجہ سے ہوتا ہے ۔ یہ اُن لوگوں کو ہوتا ہے ، جو پہلے سے ہیپیٹائٹِس  بی سے جراثیم زدہ ہوتے ہے ۔ ( آپ کے جسم کو زندہ رکھنے کے لئے ہیپیٹائٹِس  بی وائرس کی حاضری ضروری ہے ) ۔

ہیپیٹائٹِس اِی

ہیپیٹائٹِس اِی ، ہیپیٹائٹِس اِی وائرس کی وجہ سے ہوتا ہے ۔ یہ بیماری بہت کم پایا جاتا ہے ۔ عام طور پر اِس بیماری میں ہَلکا اَور لمحاتی انفیکشن ہوتا ہے ۔ یہ مُنہ کے ذریعے یا پاخانہ سمدوشن کے ذریعے پھَیلتا ہے ۔ اِس کا پھیلاؤ فرد سے فرد میں مشکل سے ہوتا ہے ۔

آٹوئمیون ہیپیٹائٹِس یا خود دفاعی  ورمِ جگر

آٹوئمیون ہیپیٹائٹِس (خود دفاعی ورمِ جگر ) کا بہت ہی غیر معمولی وجہ سے کرانِک ہیپیٹائٹِس ( پُرانی یعنی بوسیدہ یا طويل المعياد ورمِ جگر ) ہے ۔ سفید خون خلیات کے لیور ( جگر ) پر حملہ کی وجہ سے لیور ( جگر ) کی کرانِک ( پوسیدہ ) سوجن اَور نقصان ہوتی ہے ۔ اِس سے بہت ہی سنگین مسائل کی رہنمائی ہوتی ہے جیسے کہ لیور ( جگر ) کا ناکام ہونا ۔ اِس رد عمل کی وجہ نامعلوم ہے ۔ اِس کی علامات میں تھکان ، پیٹ اَور جوڑوں میں درد ، جانڈِس یعنی پیلیا ( جلد کا رنگ پیلا اَور آنکھوں کا رنگ سفےد ہونا ) اَور سِروسِس شامل ہے ۔ آٹوئمیون ہیپیٹائٹِس یا خود دفاعیورمِ جگر کے علاج میں شامل دوائیں مدافعتی نظام کو دَباکر سوجن کم کرنے میں مدد کرتی ہے ۔ کئی ہفتوں تَک اسٹیرائیڈ دواؤں یا سٹیرائیڈ دوائیوں ( پرےڈنِسولون ) کا استعمال کرنے سے سوجن آہستہ آہستہ کم ہوتا ہے اَور اِن کا استعمال اِس کی علامات کو منضبط کرنے کے لئے کیا جاتا ہے ۔

علامت


ہیپیٹائٹِس یا ورمِ جگر کی شروعاتی علامت انفیکشن کی وجہ سے فلُو کے مانِند ہیں اَور اِس میں درج ذیل شامل ہیں :

  • پٹھوں اَور جوڑوں میں درد
  • اعلی درجہ حرارت ( بخار ) 38 ڈگری سیلسیس ( 100.4 فرینہائٹ ) یا اِس سے زیادہ
  • بیماری محسوس ہونا
  • سردرد
  • کبھی کبھی آنکھوں اَور جلد کا پیلاپن ( یعنی پیلیا ) کرونِک ہیپیٹائٹِس ( پُرانی یعنی پوسیدہ یا طویل المیعاد ورمِ جگر ) کی علامات میں شامل ہو سکتی ہیں ۔
  • ہر وقت تھکان محسوس کرنا ۔
  • ڈِپریشن ( کساد مندا  )
  • پیلیا
  • عام طور پر بیمار محسوس کرنا

وجہ

  • ہیپیٹائٹِس یا ورمِ جگر انفیکشن  وائرس کی وجہ سے ہوتا ہے جیسے کہ :
  • ہیپناوِریڈے : ہیپیٹائٹِس  بی
  • ہیپوِریڈے : ہیپیٹائٹِس اِی
  • پِکورنا وائرس : اِیکو وائرس


ہیپیٹائٹِس اے : ہیپیٹائٹِس بیکٹیریا کی وجہ سے ہی ہوتا ہے جیسےکی ایناپلازما ، نوکارڈِیا اَور دیگر ۔

  • دیگر عامِل جیسےکی الکوحل
  • آٹواِیمیون ہیپیٹائٹِس ( خود دفاعی ہیپیٹائٹِس ) : سِسٹےمِک لُوپس ( نظام جسمانی ) ایریتھیمٹوس
  • دوائی : پےراسِٹامول ، اموکِسلِن ، اینٹی ٹُبرکیلوسِس ( تپ دق مُخالِف ) دوائیاں ، مائنوسائکلِن اَور دیگر ۔
  • اِسکےمِک ہیپیٹائٹِس یا ورمِ جگر (نظام دوران خون سے متعلق کمی ) ۔
  • استحالی متعلقہ بیماری : ولسن کے بیماری
  • حمل کی حالت

تشخیص مرض


ہیپیٹائٹِس یا ورمِ جگر کی تشخیص لیور  ( جگر ) قسم کے  حَياتی کِيمِيائی ٹیسٹ سے ہوتا ہے ۔

  • شروعاتی تجربہ گاہ تشخیص علاج میں بِلیرُبِن ، اے ایل ٹی ، اے ایس ٹی ، کْشاریۓ پھاسپھےٹ ( الکلوی فاسفیٹ ) ، پروتھرومبِن کے بڑھے ہوئے وقت ، مکمل پروٹین ، ایلبُمِن ، گلوبیولِن ، مُکَمَّل خون ٹیسٹ میں تھوڑا سا اضافہ اَور حرکت کی حاضری کا پتہ لگانے کو شامل کرنا چاہئے ۔
  • ہیپیٹائٹِس سی کی تشخیص مرض ایلِسا کے ذریعے پتہ لگائیں گئے ایچ سی وی مخالف کے ظاہر ہونے پر انحصار کرتا ہے ۔
  • لیور یا جگر بایوپسی ٹیسٹ کا جاری عمل لیور کا نقصان کے حد کو  پتہ لگانے کے لئے بھی کیا جاتا ہے ۔


اپنے معالج سے پوچھ تاچھ کے لئے مشورہ کریں ۔

انتظام

  • بستر پر آرام کرنا اَور الکحل سے دور رہنا ۔ اِس کی علامات کو دوائیاں کے استعمال سے دور کرنے میں مدد مِلتی ہے ۔ ہیپیٹائٹِس اے اَور اِئ سے متاثر مریض کچھ ہی ہفتوں کے بعد خود صحت مند ہو جاتے ہیں ۔
  • ہیپیٹائٹِس بی کا علاج لےمی وُڈین ، ڈِفووِر ڈِپِباکسِل جیسی دوائیوں کے ذریعے کیا جاتا ہے ۔
  • ہیپیٹائٹِس سی‌کے علاج میں مشترکہ طور پر پیگی انٹرفیران اَور رِباوایرِن کا استعمال کیا جاتا ہے ۔
  • ہیپیٹائٹِس  بی ، سی یا ڈی میں لیور ( جگر ) ٹرانسپلانٹ سے کوئی فائدہ نہیں ہوگا ۔ اُس کے بدلنے سے لیور ( جگر ) ناکام ہو جاتا ہے ۔
  • یہ صرف سیما فوری معلومات ہے ۔ زیادہ معلومات کے لئے اپنے معالج سے مشورہ کریں ۔

روک تھام

ہیپیٹائٹِس اے

بچّوں کے مامُونیت کے لئے ( ایک سے اٹھارہ سال تَک کی عمر کے لئے ) ٹیکہ کی دو یا تین خوراک ہوتی ہیں ۔ بالغوں کے لئے ٹیکے کی شروعاتی خوراک کے بعد چھے سے بارہ مہینے کی بوسٹر خوراک ضروری ہے ۔ یہ ٹیکہ پندرہ سے بیس سال یا اُس سے زیادہ کی مہلت تَک کے لئے موثر مانا جاتا ہے ۔

ہیپیٹائٹِس بی

ہیپیٹائٹِس  بی کے خلاف محفوظ اَور موثر ٹیکہ پندرہ سال اَور شایَد اُس سے زیادہ وقت تَک تحفظ فراہم کرتا ہیں ۔ فی الحال ، بیماری کو قابو اَور روک تھام مرکز نے سفارش کی ہے کہ نوزائیدوں اَور اٹھارہ سال تَک کی عمر کے بالغوں کو انفیکشن کے خطرہ سے حفاظت کے لئے ٹیکہ لگایا جانا چاہئے ۔ تین انجکشن ( حکم امتناعی ) چھے سے بارہ مہینے کی مہلت تَک مُکَمَّل حفاظت فراہم کرنے کے لئے ضروری ہیں ۔

عام طور پر

  • باتھروم ( بیت الخلا ) جانے کے بعد اَور کھانا پروسنے اَور کھانا کرنے سے پہلے اپنے ہاتھ ضرور دھوئیں ۔
  • پھیلاؤ کے خطرہ کو کم کرنے کے لئے لیٹیکس کنڈوم کا استعمال کریں ۔
  • پہلے سے استعمال کی گئی سوئیوں کا استعمال نہ کریں ۔
  • جراثیم زدہ شخص کے ٹوتھ برش ، ریزر ( استرہ ) اَور ناخن کترنی جیسی ذاتی مادوں کا استعمال نہ کریں ۔


ماخذ : قَومی صحت داخلہ باب ، حکومتِ حند

2.375
اپنی تجاویز ارسال کریں (اگر مذکورہ بالا مواد پر آپ کو کوئی تبصرہ/تجویز دینی ہو تو براہ کرم یہاں درج کریں))
Enter the word
Related Languages
Back to top