ہوم / صحت / اعضاء کا عطیہ / جگر کا عطیہ
شیئر
Views
  • صوبہ Open for Edit

جگر کا عطیہ

جگر گردے کے بعد دوسرا سب سے عام قابل پیوندکاری عضو ہے جس سے یہ بات صاف ہوتی ہے کہ جگر کی بیماری ملک میں عام اور شدید قسم کا مسئلہ ہے روایاتی طورپر جگر کی پیوندکاری کیلئے عضو بیمار عطیہ دہندہ سے اسکی یا اسکے خاندان کی جانب سے عضو کا عطیہ دینے پر رضا مندی سے حاصل کیا جاتا ہے بدقسمتی سے آج جگر کی پیوندکاری کیلئے منتظر افراد کی فہرست میں تیزی سے اضافہ کے سبب کافی تعداد میں بیمار عضو کے عطیہ دہندگان دستیاب نہیں ہیں، جگر کی پیوند کاری کے انتظار میں کئی مریض پیوندکاری سرجری کے معاملہ میں کافی بیمار ہیں جبکہ کچھ کا انتقال ہوجاتا ہے اگر کوئی مریض کو کسی رشتہ دار یا دوست سے صحت مند جگر کا کچھ حصہ مل جائے تو بہت زیاد بیمار ہونے سے قبل ہی اسے ایک صحت مند جگر کا حصہ حاصل کرنے کا موقع ہوتا ہے کچھ مریضوں کیلئے عطیہ دہندہ سے زندہ جگر کی پیوند کاری ایک متبادل طریقہ ہے زندہ جگر کی پیوندکاری ممکن ہے کیونکہ دیگر جسم کے عضو کے برخلاف اسمیں دوبارہ پیدا ہونے یا بڑھنے کی صلاحیت ہوتی ہے جگر کے دونوں حصہ سرجری کے بعد 4تا8 ہفتوں کے حصہ میں دوبارہ پیدا ہوجاتے ہیں۔

جگر کا عطیہ دہندہ کون ہوسکتا ہے؟

  • عطیہ دہندہ کوئی رشتہ دار، بیوی، شوہر یا دوست ہوسکتا ہے۔
  • عضو حاصل کرنے والے کے خون کے گروپ سے عطیہ دہندہ کا خون کا گروپ مشابہ ہونا چاہیئے۔
  • عطیہ دہندہ کی طبی اور دماغی صحت اچھی ہونی چاہیئے۔
  • ڈونر کی عمر19تا60 سال کے درمیان ہونی چاہیئے۔
  • پورے عمل کی اچھی طرح سے سمجھ بوجھ اور اسمیں موجود خطرات اور مشکلات کو جان لینے کے بعد عطیہ دہند، عطیہ کا فیصلہ لے۔

کون فوراً عطیہ دہندہ کی حیثیت سے ناقابل قبول ہے؟

  • ہیپپاٹائٹس بی اور سی کی ہسٹری
  • ایچ آئی وہ انفیکشن
  • عادی شراب نوش یا بار بار شراب پینے والا
  • نفسیاتی بیمار جو زیر علاج ہو
  • کینسر کی تازہ ہسٹری رکھنے والا
  • غیر معیاری طبی حالت کا حامل

جانچ اور معائنہ

پیوند کاری سے قبل جگر کی بیماری کی شدت کو جانچنے کیلئے معائنہ کیلئے جاتے ہیں۔ حاصل کرنے والے کے پیوندکاری سے قبل درج ذیل معائنہ کیئے جاتے ہیں۔

  • پیٹ کا سی ٹی اسکین
  • جگر کی الٹرا ساونڈ
  • الیکٹرو کارڈیوگرام
  • دانتوں کی جانچ
  • گائنکولوجیکل معائنہ
  • پیوریفائیڈ پروٹین ڈیریوٹیو(PPD)اسکن ٹسٹ
  • عطیہ (ڈوفیشن) کے بعد پیچیدگیاں

زندہ عطیہ سرجری بڑے سینئر پر کی جاتی ہے۔ کچھ ہی افراد میں سرجری کے بعد فون چڑھانے کی ضرورت پڑتی ہے۔ تمام قابل عطیہ دہندگان کو جان لینا چاہیئے کہ اسمیں 0.5تا1.0فیصد موت واقع ہونے کا چانس ہوتا ہے لیور ڈوسیشن میں دیگر خطرات خون کا رساو، انفیکشن، تکلیف زدہ انسیشن، خون کے جمع ہونے کے امکانات اور طویل ریکوری شامل ہے۔ زیادہ ترڈونر 2-3 ماہ میں مکمل طور پر {ریکور} صحت یاب ہوجاتے ہیں۔

زندہ عطیہ دہندہ جگر پیوندکاری کے فوائد کیا ہیں؟

سب سے اہم فائدہ حاصل کنندہ کیلئے انتظار کے لمحات کم ہوجاتے ہیں۔ انکی حالت، تشخیص، کیفیت، خون کی قسم اور سائز کی بنیاد پر مریضوں کو مہینوں یہاں تک کہ سالوں انتظار کرنا پڑتا ہے۔ کچھ مریضوں میں بیمار ڈونر کے انتظار میں پیچیدگیاں پیدا ہوتی ہیں اور کچھ فوت بھی ہوجاتے ہیں۔

ذرائع:۔

مزید معلومات اور ذرائع یہاں فراہم ہیں:

میڈیسین ہیلتھ
کینڈین لیور فاونڈیشن

2.63636363636
اپنی تجاویز ارسال کریں (اگر مذکورہ بالا مواد پر آپ کو کوئی تبصرہ/تجویز دینی ہو تو براہ کرم یہاں درج کریں))
Enter the word
Related Languages
Back to top